file photo

توشہ خانہ ریفرنس، نواز شریف نے مفرور قرار دینے کیخلاف درخواست واپس لے لی
20 اگست 2020 (12:59) 2020-08-20

اسلام آباد: سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ ن کے تاحیات قائد نواز شریف نے توشہ خانہ ریفرنس میں مفرور قرار دینے کیخلاف اپنی درخواست واپس لے لی ہے۔

آج کی سماعت کے دوران چیف جسٹس اطہرمن اللہ نے نوازشریف کے وکیل سے استفسار کیا کہ ان کے موکل کی ضمانت کا کیا اسٹیٹس ہے۔وکیل جہانگیر خان جدون نے عدالت کو بتایا ’مجھے ہدایات ملی ہیں کہ درخواست واپس لے لوں‘۔ عدالت نے نواز شریف کے وکیل جہانگیر خان جدون کی استدعا منظور کرلی اور نواز شریف کی درخواست واپس لینے پر درخواست خارج کردی ہے۔

نواز شریف نے اپنی درخواست میں مؤقف اپنایا تھا کہ وہ مفرور نہیں بلکہ ضمانت منظوری پر بیرون ملک گئے، بیرون ملک علاج جاری ہے لہٰذا نمائندے کے ذریعے ٹرائل کا سامنا کرنے کی اجازت دی جائے۔ درخواست کے متن میں تھا کہ احتساب عدالت نے 29 مئی کو قابل ضمانت اور 11جون کو ناقابل ضمانت وارنت گرفتاری جاری کیے جب کہ احتساب عدالت نے 30 جون کو اشتہاری قرار دینے کی کارروائی شروع کی  لہٰذا احتساب عدالت کےاحکامات کالعدم قرار دیےجائیں۔نوازشریف پر الزام ہے کہ انہوں نے پاکستان پیپلزپارٹی کے سابقہ دور حکومت میں توشہ خانے سے گاڑی حاصل کی اور اسکی ادائیگی انورمجید نے جعلی بینک اکاؤنٹ سے کی۔ نواز شریف 2008 میں کسی بھی عہدے پر نہیں تھے اور انہوں نے توشہ خانے سے گاڑی حاصل کرنے کیلئے کوئی درخواست بھی نہیں دی تھی۔

مذکورہ ریفرنس میں سابق صدر آصف علی زرداری بھی نامزد ہیں۔ نیب کی جانب سے عدالت میں جمع کروائے گئے ریکارڈ کے مطابق آصف زرداری نے گاڑیوں کی15 فیصد ادائیگی جعلی اکاونٹس کے ذریعے  کی۔ آصف زرداری کو بطور صدر لیبیا اور یو اے ای سے بھی گاڑیاں تحفے میں ملی تھیں۔آصف زرداری نے یہ گاڑیاں توشہ خانہ میں جمع کرانے کے بجائے خود استعمال کیں۔ نیب کے مطابق ملزمان نیب آرڈیننس کی سیکشن نائن اے کی ذیلی دفعہ دو، چار، سات اور بارہ کے تحت کرپشن کے مرتکب ہوئے ہیں۔


ای پیپر