’’زبان اس کی ناشکری سے باز نہیں آتی‘‘
19 جولائی 2019 2019-07-19

ہماری زندگی میں ایسی انگنت نعمتیں ہیں جن کا ہمیں اس وقت تک اندازہ نہیں ہوتا جب تک وہ اپنے ہونے کااحساس نہ دلائیں اور یہ وہ نعمتیں ہیں جو انسان کو زندگی کے ساتھ بالکل مفت ایک بونس کی طرح ملتی ہیں شائد اسی لیے ہم انہیں نعمت نہیں سمجھتے اور ان کی نا قدری کرتے ہیں۔ یقین مانیں ایک انگلی کی حرکت سے لے کر ہماری ہررگ وپے میں ہمارے لیے اللہ نے لا تعداد خزانے دئیے ہیں۔صحت اللہ کی عطا کردہ نعمتوں میں سے وہ نعمت ہے جس کی قدرعموماً اس وقت آتی ہے جب ہم اس سے محروم ہوتے ہیں۔ ہم جتنے مرضی فلاسفر بن جائیں ایک دانت کی تکلیف ہی ہمیں ہماری اوقات یاد دلادیتی ہے یہی کچھ جب میرے ساتھ ہوا۔ تین دن لگاتار دانت کی تکلیف سے چودہ طبق روشن ہو گئے، وقت اور پیسے بھی خوب لگے تو اندازہ ہوا کہ کتنی بڑی نعمت منہ میں چھپائے پھرتے ہیں اور کبھی اس بات پر اللہ کاشکر بھی ادا نہیں کیا۔

ایک دن یونہی نماز عصر کے بعد پارک میں چہل قدمی کرتے کرتے استاد جی سے ملاقات ہوگئی وہ پوچھنے لگے بچہ جی کیا بات ہے آج کل مصروف نظرآتی ہو میں نے اپنی تکلیف بیان کی تو صحت کی دعا دیتے ہوئے کہنے لگے۔

بچہ جی! شیخ سعدی رحمۃ اللہ سے کسی نے ان کی صحت کے بارے میں پوچھا تو فرمایا ؟

اللہ کی نعمتیں کھا کھا کر دانت ٹوٹ گئے مگرزبان اس کی ناشکری سے باز نہیں آتی ؟

پھر کہنے لگے کہ ہم میں سے کبھی کوئی منہ میں پورے دانت ہونے پراتنی خوشی محسوس نہیں کرتا جتنا وہ ایک دانت کے ٹوٹ جانے پر ملامت کرتا ہے اس کا مطلب یہی ہے کہ انسان بڑا نا شکرا ہے۔اللہ نے سورہ رحمان میں انسان کو بڑا جھنجھوڑا ہے کہ تم اپنے رب کی کون کون سی نعمتوں کو جھٹلائو گے؟ لیکن انسان پھر بھی نا شکری سے باز نہیں آتا۔ بچہ جی جب بھی فجر کی اذان ہو اور تم اپنا بستر چھوڑ کر رب کے سامنے عاجزی سے ہاتھ باندھ کر کھڑے ہو اور اس کے بعد اس کا شکر ادا کرو کہ اس نے تمہیں ایک نئی زندگی دی۔ ہمارا خود اٹھنا،اپنے قدموں پر چلنا پھرنا، سانس کا آناجانا، اپنے ہاتھ سے کام کرنا،کھانے کا ہمارے حلق سے اترکرمعدے تک پہنچنا اور پھر ہضم ہوجانا بھی کسی نعمت سے کم نہیں مگر ہم تو اس کا بھی شکر ادانہیں کرتے۔ بچہ صبح اٹھنے سے رات سونے سے پہلے لینے والی کروٹ تک جتنا ہو سکے اپنے رب کا شکر ادا کر،یاد رکھنا دنیا میں کتنے ہی لوگ ہیں جو ایک کروٹ لینے کے لیے بھی دوسروں کے محتاج ہیں۔ شکر کرو کہ روز صبح اٹھ کر منہ دھونے جاتے ہو ورنہ لاکھوں لوگ ہیں جو اٹھ کر گردے دھلوانے جاتے ہیں۔

بس بچہ اللہ کا شکر گزار بن جا تو اللہ مزید دے گا یہ میرے سوہنے رب کا وعدہ ہے بس شکر ادا کر!

یہ کہہ کر وہ اپنی راہ چل دئیے اور میں اپنے گھر کی طرف چل دی۔

راستے میں بار بار حضرت علی کرم اللہ وجہہ کا ایک قول یاد آرہا تھا کہ جس انسان کو پانچ چیزیں مل جائیں وہ اپنے آپ کو دنیا کا خوش قسمت انسان سمجھے۔

ذکر کرنے والا دل، مشقت اٹھانے والا بدن، وطن کی روزی، نیک بیوی شکر کرنے والی زبان ۔

جس شخص کو یہ پانچ نعمتیں نصیب ہوں وہ یوں سمجھے مجھے اللہ تعالیٰ نے دنیا کی تمام نعمتیں عطا کر دی ہیں۔

واقعی سر تا پائوں ہم لاتعداد نعمتوں سے مالا مال ہیں اپنی مرضی سے سوتے ہیں اپنی مرضی سے جاگتے ہیں جو دل چاہے پہن لیتے ہیں جو دل چاہے کھا لیتے ہیں مگر پھر بھی نا شکری سے باز نہیں آتے میں نے اپنے ارد گرد بڑے بڑے نا شکرے دیکھے ہیں جنہیں اللہ نے دولت، صحت اولاد اچھا روزگار گاڑی بنگلہ سب دیا ہے مگر جب دیکھو وہ نا شکری کی باتیں ہی کرتے ہیں۔

ذرا سا نقصان ہوجائے تو واویلا مچا دیتے ہیں مگر وہ جو کروڑہا نعمتیں دبائے بیٹھے ہیں کبھی اس پر شکر ادا نہیں کرتے کبھی ان کی زبان سے یہ لفظ نہ سنا کہ اللہ کا بڑا شکر ہے جس نے اتنی نعمتیں دیںکبھی ان کو یا ان کی اولاد کو نماز پڑھتے یا سجدہ شکربجا لاتے نہیں دیکھا ۔۔ سوچو اس رب کو کتنا برا لگتا ہوگا!

آئیے اب ذرا دانتوں کی نعمت پر غور کریں جو اللہ کا ہم پر بہت بڑا احسان ہے۔ اس میں اللہ کی قدرت کی بے پناہ نشانیاں ہیں ان کی رنگت ساخت،جبڑوں سے نکلنا اورپھر ایک خاص لمبائی پرآکر رک جانا بے شک رب کی تخلیق کا عظیم شاہکار ہے۔ اللہ تعالیٰ نے سامنے والے دانت تیز اور نوکیلے بنائے تاکہ ہم خوراک کو آسانی سے کاٹ سکیں اور پچھلے دانت چوڑے بنائے تاکہ خوراک کو پیسا جا سکے۔ دانتوں کا مادہ نرم ہوتا توہم اس سے چبانہ سکتے اور لوہے کی طرح سخت ہوتا تو ہماری زبان کو کاٹ دیتا۔ اگر غور کریں تو عقل والوں کے لئے دانتوں میں ہی قدرت کی واضح نشانیاں ہیں۔

اللہ تعالیٰ کی شان دیکھیں کس طرح انسان کے منہ میں دانتوں کو موتیوں کی لڑی کی طرح پرو دیا ہے ان کا سفید رنگ انسان کی شخصیت کو مزید پر کشش بنا دیتا ہے اور دانتوں کے بغیر ہم صحیح طرح سے کلام بھی نہیں کر سکتے۔ کلام کے بعد آتے ہیں طعام کی طرف دانت خوراک کو نہ چبائیں تو معدہ اسے ہضم نہیں کر سکتا۔ اگر معدہ خوراک کو ہضم نہ کرے تو صحت خراب ہو جاتی ہے۔ کتنی غذائیں ایسی بھی ہیں کہ جب تک انہیں اچھی طرح چبایا نہ جائے، انسان ان کی لذت سے محروم رہتا ہے۔

اب ہم آتے ہیں دانتوں کی صفائی کی طرف، جدید سائنس نے ثابت کیا ہے کہ اگر ہم ان کی صحیح صفائی نہ کریں تو بہت سی بیماریاں انسان کو گھیر لیتی ہیں اور دانتوں میں پیدا ہونے والے جراثیم انسان کوبے پناہ نقصان پہنچاتے ہیں۔

تحقیق کے مطابق انسان جو چیزیں کھاتا ہے وہ صرف کلی کرنے سے صاف نہیں ہوتا اس کے لیے مسواک یا برش کرنا ضروری ہے۔ اگر ہم دانت صاف کیے بغیرسو جائیں تو دانت زیادہ خراب ہوتے ہیں۔دینِ اسلام نے دانتوں کی صفائی کا 14 سو سال پہلے حکم دیا ۔ہمارے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کثرت سے مسواک کیا کرتے تھے اور انہوں نے ہمیں بھی تلقین کی ہے، لہٰذا مسواک کریں تو اس مقصد سے کریں کہ یہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت ہے اس طرح نعمت پر شکر گزاری بھی ہوجائے گی اور دانتوں کی حفاظت بھی۔یاد رکھیں دانت اللہ کی وہ نعمت ہے جو دو بار مفت ملتی ہے مگر تیسری بار آپ کو خریدنی پڑتی ہے لیکن وہ پہلے کے مقابلے میں دس فیصد بھی نہیں ہوتی۔اسلیے اس کی قدر کریں۔


ای پیپر