انڈیا باز نہ آیا تو خاموش رہنا مشکل ہو گا: وزیر اعظم
19 جنوری 2020 (15:18) 2020-01-19

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ بھارت نے ایل او سی کے دوسری جانب آباد بے گناہ شہریوں پر حملے جاری رکھے تو پاکستان کے لیے خاموش رہنا مشکل ہوجائے گا،لائن آف کنٹرول پر نہتے شہریوں پر بھارتی حملے معمول بن گئے ہیں،سلامتی کونسل مقبوضہ کشمیر کی جانب ایل او سی پر عسکری مبصر مشن کی واپسی کے لیے اصرار کرے،بھارت کی جانب سے ایک خودساختہ اور جعلی حملے کا اندیشہ ہے۔

ٹوئٹر پر اپنے بیان میں وزیراعظم عمران خان نے کہا میں ہندوستان کیساتھ عالمی برادری پر بھی واضح کردینا چاہتا ہوں کہ اگر بھارت جنگ بندی لکیر کے اس پار عسکری حملوں میں نہتے شہریوں کے بہیمانہ قتل عام کا سلسلہ دراز کرتا ہے تو پاکستان کیلئے سرحد پر خاموش تماشائی بنے بیٹھے رہنا مشکل ہو جائے گا۔

انہوں نے کہا جنگ بندی لکیرکے اس پار نہتے شہریوں پر مقبوضہ بھارتی افواج کے شدت پکڑتے اور معمول بنتے حملوں کے پیش نظر لازم ہے کہ سلامتی کونسل عسکری مبصر مشن (UNMOGIP) کی مقبوضہ کشمیر میں فی الفور واپسی کیلئے بھارت سے اصرار کرے۔ہمیں ہندوستان کی جانب سے ایک خودساختہ/جعلی حملے کا سخت اندیشہ ہے۔

مزید برآں اپنی ایک دوسری ٹویٹ میں وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ اسلامی دنیاکے سب سے تجربہ کار اور کامیاب سیاستدان کا بھی بالکل اسی قسم کے مسائل سے سابقہ رہا جن کاسامنا آج میری حکومت کو ہے۔انکی راہ میں بھی وہی سیاسی مافیا حائل ہوا جس نے اداروں کی تباہی کے ذریعے ملائشیا کوقرض کی دلدل میں دھنسایا اور اسکا دیوالیہ نکال دیا۔


ای پیپر