فائل فوٹو

بغیر شیڈول پانی چھوڑنے پر دریائے ستلج، دریائے سندھ میں بڑے سیلاب کا خدشہ
19 اگست 2019 (12:03) 2019-08-19

لاہور: بھارتی آبی دہشتگردی، بغیر شیڈول پانی چھوڑنے پر دریائے ستلج اور دریائے سندھ میں بڑے سیلاب کا خدشہ۔

این ڈی ایم اے نے متعلقہ اداروں کو مراسلہ جاری کر دیا۔ بھارتی پنجاب سے ڈیڑھ سے 2 لاکھ کیوسک پانی گنڈاسنگھ والا کے مقام پر پاکستانی حدود میں داخل ہوسکتا ہے۔ قصور میں ہیڈ گنڈا سنگھ سے پانی کا اخراج ساڑھے 11 ہزار کیوسک ریکارڈ کیا گیا۔

دریائے ستلج میں تلوار پوسٹ پر پانی کی سطح ساڑھے 14 فٹ تک جاپہنچی ہے۔ دریائے ستلج میں سیلاب سے ہزاروں ایکڑ زمین، سیکڑوں دیہات متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔ دریائے ستلج کے کنارے آباد لوگوں کو محفوظ مقام پر منتقل کیا جائے گا اور تمام حفاظتی اقدامات کیے جائیں گے اور اس حوالے سے وزیراعلیٰ پنجاب نے ہدایات جاری کر دیں۔

بھارت نے بغیر اطلاع الچی ڈیم سے بھی پانی چھوڑ دیا۔ خرمنگ کے مقام پر پانی دریائے سندھ میں شامل ہوگا۔ دریا کے اطراف تمام ضلعی انتظامیہ کو الرٹ جاری اور مقامی لوگوں کو محتاط رہنے کی ہدایت۔

واضح رہے کہ دریائے ستلج میں 1988ء کے بعد یہ ایک بڑا سیلاب ہوگا جس سے ہزاروں ایکڑ زمین اور سیکڑوں دیہات متاثر ہوں گے۔


ای پیپر