عوام کی حکمرانی ،آئین کی بالادستی اور جمہوریت کے قیام کی جنگ لڑ رہے ہیں:بلاول بھٹو 
18 اکتوبر 2020 (23:41) 2020-10-18

کراچی :پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ کے دوسرے جلسے سے خطاب کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا یہ جنگ ملک کی تمام جمہوری طاقتوں نے لڑنی ہے ،ہم نے اس ملک میں عوام کی حکمرانی ،آئین کی بالادستی اور جمہوریت کے قیام کی جنگ لڑنی ہے ،پاکستان کی تمام جمہوری طاقتوں نے یہ سفر جاری رکھنا ہے ، بلاول کا کہنا تھا کہ بڑے بڑے آمر نہیں رہے تو یہ کٹھ پتلی  کیا چیز ہے ۔

کراچی کے باغ جناح میں اپوزیشن جماعتوں کے حکومت مخالف اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم ) کے جلسے سے خطاب میں بلاول بھٹو نے سانحہ کارساز کے شہدا کو سلام پیش کیا،انہوں نے کہا کہ آج پاکستان کی تاریخ میں ان شہدا کا نام زندہ ہے، شہید بی بی نے کبھی عوام کا ساتھ نہیں چھوڑا،جس صبح کیلئے جمہوری طاقتوں نے قربانیاں دیں وہ صبح جلد آئے گی۔

بلاول کا کہنا تھا ہمیں آج جمہوریت کے فلسفے پر بات کرنی ہے ،وہ ادارے کھوکھلے کیے جا رہے ہیں جو عوام کا تحفظ کرتے ہیں ،آج غریب مہنگائی کی چکی میں پس رہے ہیں ،اس دور میں عوام نے تاریخی مہنگائی ،غربت اور بے روزگاری دیکھی ہے ،یہ اقتدار کی لڑائی نہیں ہے ،تمام آزادیوں کا ضامن جمہوری نظام ہے ،حکمران اپنے فرض اداکرنے سے منگر ہیں ۔

پی پی چیئرمین نے مزید کہاکہ پاکستان کی تمام جمہوری طاقتوں نے سفر جاری رکھنا ہے،تمام آزادیوں کاضامن جمہوری نظام ہے،حکمرانوں کو عوام کے آنسو نظر نہیں آتے اور یہ شخص جمہوریت کا دعویٰ کرتا ہے ،ان کا کہنا تھاکہ عمران خان نے کراچی کو صرف دھوکا دیا ،11سو ارب کے کراچی پیکیج کےلیے ایک روپیہ بھی وفاق نے نہیں دیا ،سندھ کو این ایف سی سے 300 ارب ملنا تھے جو تاحال نہیں ملے ،ہم اس پیسے سے نوجوانوں کو روزگار دیتے۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ کےالیکٹرک عوام کا خون چوس رہی ہے اور وزیراعظم اپنے دوست کو بچا رہا ہے، انہوں سیلاب متاثرین کی داد رسی تک نہیں کی۔ اس شخص کے غرور کو عوام مٹی میں ملا دے گی،انہوں نے مزید کہا کہ یہ جزائر یہاں کے مچھیروں کے ہیں، ہم آپ کو ان جزائر پر قبضہ نہیں کرنے دیں گے، وفاق کو آرڈیننس واپس لینا پڑے گا، سندھ میں ایک طوفان اٹھ رہا ہے، آرڈیننس واپس نہیں لیتے تو ارکان اسمبلی کو کہتا ہوں سینیٹ میں اس آرڈیننس کو لات مار کر باہر کردیں۔


ای پیپر