نیب ایک آزاد اور خود مختار ادارہ ہے: اعجاز شاہ
18 جولائی 2019 (22:31) 2019-07-18

کراچی : وفاقی وزیر داخلہ اعجاز شاہ نے کہا ہے کہ نیب ایک آزاد اور خود مختار ادارہ ہے، ملک میں احتساب کا عمل شروع ہوگیا ہے۔ جس نے قصور کیا ہوگا اس سے پوچھا جائے گا، جس نے جو کچھ کیا ہے وہ بھگتے گا، ملک کسی ایک کا نہیں ہے ملک سب کا ہے، کسی نے کچھ کیا ہوگا جب ہی تو گرفتاری کی گئی، پاکستان کے لیے عمران خان نے جو مناسب سمجھا وہ کیا۔ وزیر اعظم ہمیشہ ملکی مفادات میں ہی بات کرتے ہیں۔ اسمگلنگ روکنے کے لیے وزیر اعظم اور آرمی چیف کی ملاقات ہوئی ہے، ملک کو دیمک کی طرح جیسے کرپشن نے چاٹا ایسے اسمگلنگ بھی چاٹ رہی ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں ہمارا مستقبل پہلے سے بہتر ہوگا۔

کراچی میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر داخلہ اعجاز شاہ نے کہا کہ کسی نے کچھ کیا ہو گا تب ہی گرفتار ہوا ہے ۔آصف زرداری نے خود کہا تھا کہ ایسا تو ہوتا ہے اس طرح کے کاموں میں ۔ ملک اس وقت چیلنجز سے گزر رہا ہے ۔ ہمارے ارکان بھی نیب کی پیشیاں بھگت رہے ہیں ، نیب ایک خود مختار ادارہ ہے کسی کی گرفتاری سے حکومت کا کوئی تعلق نہیں۔ چیئر مین نیب کو(ن) لیک اور پیپلز پارٹی نے منتخب کیا تھا ۔ کوئی کردار عمران خان کا نہیں تھا ۔ نیب نے علیم خان اور سبطین خان کو گرفتار کیا ہے وہ ہمارے ہیں ملک میں احتساب کا عمل شروع ہو چکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ عالمی عدالت نے کلبھوش کیس میں پاکستان کے حق میں فیصلہ دیااور قانون کے مطابق کیا ۔ احتجاج کا حق سب کو ہے حکومت کا کام ہے لوگوں کی زندگی کو تحفظ دیں ۔ کسی کو شیشے توڑنے کی اجازت نہیں ۔ کراچی کی امن و امان کی صورتحال پر50فیصد بہتری آئی ہے ۔اگر میں بے نظیر کے قتل میں ملوث تھا تو مجھے پھانسی لگوا دیتے پیپلز پارٹی کی حکومت تھی ۔ بلاول کے والد 5سال تک حکومت میں تھے قتل میں ملوث تھا تو پھانسی کیوں نہیں دی۔

اعجاز شاہ نے مزید کہا کہ ملک ہمارا ہے کسی ایک پارٹی کا نہیں ۔ عمران خان جتنا فرنٹ پر کھیلتے ہیں س سے زیادہ کوئی نہیں کھیلتا۔ عمران خان نے ہمیشہ ملکی مفاد کی بات کی ہے ۔جس نے قصور کیا ہے اس سے پوچھا جائے گا۔ جہادی لوگوںکو جو پوری دنیا نے بنائی تھی اور پاکستان میں پھل پھول رہے تھے لیکن عمران خان نے کہا ہے کہ اب کوئی ایسا نہیں ہو گا اور کوئی گروپ پاکستان میں کام نہیں کر سکتا۔ عمران خان نے کہا ہے کہ کسی کی جنگ نہیں لڑوں گا ۔ ملک کو قائم رکھنے کیلئے قانون کی عمل داری ناگزیر ہو گا۔ ملکی پالیسی میں تبدیلی کا کریڈٹ حکومت اور وزیر اعظم عمران خان کو جاتاہے ۔عمران خان کسی دوسرے ملک کے لئے استعمال نہیں ہو گا۔ میں سیاستدانوں کی پکڑ دھکڑ پر نیب سے منت کرتا ہوں جتنے پکڑنے ہیں جلدی پکڑیں ، نیب کے پاس تفتیشی افسر کم ہیں اور پکڑنے والوں کی تعداد زیادہ ہے ۔


ای پیپر