سابق چیف جسٹس کی اہلیہ کو حبس بیجا میں رکھے جانے کا انکشاف
17 نومبر 2018 (21:37) 2018-11-17

اسلام آباد : سابق چیف جسٹس جسٹس ریٹائرڈ سعید الزمان کی اہلیہ کو مسلح افراد کی جانب سے حبس بیجا میں رکھنے اور جوڈیشل ٹاﺅن میں ا ن کے پلاٹ پر قبضے کا انکشاف ہوا ہے، مسلح افراد نے سابق چیف جسٹس کی بیوہ کو دھمکیاں دیں اور ہوائی فائرنگ بھی کی ، مری کے تھانہ تریٹ نے سعید الزماں صدیقی کے صاحبزادے کی درخواست پر مقدمہ درج کرکے کارروائی شروع کردی ۔

تفصیلات کے مطابق سابق چیف جسٹس آف پاکستان مرحوم سعید الزماں صدیقی کی اہلیہ کے جوڈیشل ٹاون میں پلاٹ پرقبضہ مافیا نے قبضہ کرلیا ۔ ذرائع کے مطابق مرحوم چیف جسٹس کی بیوہ ڈاکٹر اشرف سعید الزماں اپنے بیٹے کے ہمراہ پلاٹ پر گئیں جوچھ سو گز کا اور مرحوم چیف جسٹس آف پاکستان نے 1992 میں خریدا تھا۔ذرائع کے مطابق اس دوران سابق چیف جسٹس کی بیوہ کو مبینہ قبضہ مافیا کے مسلح افراد نے کلاشنکوف تان کر بھگا دیا، مرحوم چیف جسٹس کی بیوہ اور بیٹے نے مری چوکی تھانہ تریٹ میں درخواست دیدی۔

سابق چیف جسٹس سعید الزمان صدیقی کے بیٹے کی جانب سے مری کے تھانہ تریٹ میں جمع کرائی گئی درخواست میں کہا گیا کہ ان کی والدہ کوقبضہ مافیا نے حبس بیجا میں رکھا۔درخواست میں کہا گیا کہ میری والدہ اپنے پلاٹ پر چار دیواری بنوانے آئیں جس پر 4 مسلح افراد نے انہیں دھمکیاں دیں، مسلح افراد نے چار دیواری پر کام رکوایا اور والدہ کو حبس بیجا میں رکھنے کے بعد انہیں پلاٹ سے بھی نکال دیا۔

جسٹس ریٹائرڈ سعید الزمان صدیقی کے بیٹے افنان صدیقی نے مزید کہا کہ مسلح افراد نے ہوائی فائرنگ بھی کی۔دوسری جانب پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ جسٹس ریٹائرڈ سعید الزمان کے بیٹے کی درخواست موصول ہو چکی ہے جس پر کارروائی کی جا رہی ہے۔


ای پیپر