پاکستان میں 2384 فحش ویب سائٹس پر پابندی
17 جولائی 2019 (14:43) 2019-07-17

اسلام آباد:سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی کو چیئرمین پی ٹی اے نے بتایا ہے کہ پی ٹی اے نے چائلڈ پورنو گرافی کی 2384 ویب سائیٹس بلاک کی ہیں جبکہ اس وقت پورنوگرافی کی 8 لاکھ ویب سائٹ بلاک ہیں ،وی پی این کو بلاک کرنا مشکل ہے ،جبکہ11 ہزار پراکسی بھی بلاک کی گئی ہیں۔کمیٹی نے بیرون ملک سے ایک موبائل فون لانے پر ڈیوٹی ختم کرنے کی سفارش کر دی جبکہ سوشل میڈیا پر سینیٹر روبینہ خالد کے گھر سے سونا برآمد ہونے کی جعلی خبر کا نوٹس لیتے ہوئے معاملے پر ذیلی کمیٹی بنا دی۔

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی کا اجلاس سینیٹر روبینہ خالد کی صدارت میں ہوا،اجلاس کے دوران چیئرپرسن کمیٹی سینیٹر روبینہ خالد نے کہا کہ میری بھی ایک شکایت ہے،سوشل میڈیا پر ایک جعلی خبر چلائی جا رہی ہے کہ میرے گھر سے 14 من سونا بر آمد ہوا ہے ،یہ جعلی خبر سوشل میڈیا پر پھیلائی جارہی ہے، چیئرمین پی ٹی اے نے کہا کہ ہمارے پاس جعلی خبروں کی شکایات آتی ہیں ،ہم فیس بک اور ٹویٹر کو تو بلاک کر سکتے ہیں لیکن کسی کا انفرادی اکائونٹ بلاک نہیں کر سکتے ،رکن کمیٹی رحمان ملک نے کہا کہ یہ آج چیئرپرسن کمیٹی کے ساتھ ہوا ہے یہ عمران خان کے ساتھ بھی ہو سکتا ہے اور دیگر لوگوں کے ساتھ بھی ہو سکتا ہے،یہ سیاسی مہم لگتی ہے۔

سینیٹر کلثوم پروین نے کہا کہ یہ صرف ایک خاندان کی بے عزتی نہیں سارے پارلیمنٹیرینز کی بے عزتی ہے،اس کی رپورٹ ایک ہفتے میں دی جائے،وفاقی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ یہ تو پورے معاشرے کا معاملہ ہے ،ہم سب کو مل کر کام کرنا ہے ،چیئرپرسن کمیٹی نے معاملے پر ذیلی کمیٹی بنا دی کمیٹی میں سینیٹر کلثوم پروین ،سینیٹر میاں عتیق شیخ اور سینیٹر فدا محمد شامل ہیں،اجلاس میں وزارت آئی ٹی اور اس کے ذیلی اداروں میں کام کرنے والے ملازمین کی تعداد کا معاملہ بھی زیر غور آیا ،کمیٹی کو بتایا گیا ہے اس وقت 5319 ملازمین وزارت اور اس کے ذیلی اداروں میں کام کر رہے ہیں۔

چیئرمین پی ٹی اے نے کمیٹی کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ ہمارا مینڈیٹ ہے کہ ہم چائلڈ پورنو گرافی کے مواد کو بلاک کر سکتے ہیں ،ہمارا ایک میل ایڈریس ہے جس پر کوئی بھی شکایت درج کرا سکتا ہے، ہم انٹرپول سے ڈیٹا شیئر بھی کرتے ہیں اور ڈیٹالیتے بھی ہیں ،ہم نے 2384 ویب سائٹس چائلڈ پورنو گرافی کی بلاک کی ہیں جبکہ اس وقت پورنوگرافی کی 8 لاکھ ویب سائٹ بلاک ہیں ،وی پی این کو بلاک کرنا مشکل ہے ،ہم نے11 ہزار پراکسی بھی بلاک کی ہیں ،چیئرپرسن کمیٹی نے کہا کہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ ہمارے بچے اس چیز میں استعمال نہ ہوں ۔

سینیٹر کلثوم پروین نے کہا کہ ایسے مقدمات میں صلح نہیں ہو سکتی ، سخت قانون سازی ہونی چاہیئے،اجلاس میں نان ٹیکس پیڈ موبائل فون کو بلاک کرنے کا معاملہ بھی زیر غور آیا،ایف بی آر حکام نے کمیٹی کو بتایا کہ 15جولائی تک بیرون ملک سے لائے جانے والے موبائل فونز سے 231 ملین روپے کا ریونیو حاصل ہوا ہے،کمیٹی نے بیرون ملک سے ایک موبائل فون لانے پر ڈیوٹی ختم کرنے کی سفارش کر دی۔


ای پیپر