ممی ڈیڈی… ’’کٹاّ‘‘ اورخوبصورت ’’ شاعرہ‘‘
16 اکتوبر 2019 2019-10-16

یہ ہمارا’’کٹاّ‘‘ ہے دیکھو ناں کتنا’’کیوٹ ‘‘ہے؟!!

یہ آخری تصویر تھی جو ہمارے ’’عمر‘‘میںسینئر دوست نے فیس بک پر لگائی۔ ہمیں عادت پڑ چکی ہے کہ فیس بک پر صبح کا آغاز کسی ’’اچھی ‘‘سی شاعرہ کا کلام پڑھنے اور دیکھنے یا کہ لیں ملاحظہ کرنے کی ہے ہم یہ’’ کٹا ّ‘‘ (بھینس کا نوزائیدہ بیٹا) کیونکر فیس بک پرانجوائے کریں اور پھر دوست کی خواہش کیسے پوری کریں جو چاہتا تھا کہ’’ کیوٹ کٹاّ‘‘ ہم لائیک بھی کریں اور اس پر’’ صوتی اثرات والا comment ‘‘ بھی دیں۔؟!!

ویسے میں نے ’’کٹاّ‘‘ صاحب پر نظر ڈالی مجھے یہ’’ کٹا ّ‘‘ ممی ڈیڈی ٹائپ لگا۔یہ ’’ ممی ڈیڈی‘‘ والی اصطلاح بھی نہ جانے کس ظالم نے ایجاد کی تھی۔جیسے کسی کو ’’چوّل ‘‘ کہ کر بلائیں تو وہ سمجھ جاتا ہے کہ مجھے کس نظر سے دیکھا گیا ہے یا بلانے والے کے میرے بارے میں کیا خیالات و احساسات ہیں لیکن بقول خالد مسعود’’چوّل ‘‘ کی نہ تو کوئی ((proper تعریف یا ((definition تاریخ کی کتابوں میں ملتی ہے اور نہ ہی اس کے لفظی معنے۔یہ لفظ صرف محسوس کیا اور کروایا جا سکتا ہے۔ایسے ہی ’’ ممی ڈیڈی‘‘ کہنے پر کچھ ’’لڑکے ‘‘بدتمیزی پر اتر آتے ہیں اور کچھ لوگ’’ اترانے‘‘ لگتے ہیں جب انہیں ’’ ممی ڈیڈی ‘‘ کہا جائے ویسے’’ ممی ڈیڈی صفات ‘‘ اب نئی نسل میں عام ہیں اور میں ممی ڈیڈی نسل کو دیکھ کر پریشان بھی ہوں اور خوفزدہ بھی!!

لیکن اِک یہاں اور بھی Positive پہلو ہے... یہ ممی ڈیڈی ٹائپ بچے ہم جیسے سے آنکھ نہیں ملاتے ہاں البتہ دو چار ملے... اور شاعری پر گفتگو کرنے لگے.. تو میں نے کہا کسی بڑی عمر کے شاعر سے اصلاح کروا لیں...’’ ہمیں اب اصلاح کی بھلا ابھی ضرورت ہے ؟‘‘ اُس نے اپنے سراپا پر رعونت کے ساتھ نظر ڈالتے ہوئے ... تن کر کہا. .؟!!’’ ارے بھائی ... میں نے یہ نہیں کہا کہ آپ اپنی اصلاح کروائیں... آپ تو ’’ ٹھیک ٹھاک‘‘ ہیں ذرا اپنی شاعری کسی بڑی عمر کے شاعر کو دکھا لیں؟!!‘‘

’’ آپ دیکھ لیں... اُس نے محبت سے کہا .. آپ بھی تو کبھی ینگ... کبھی تنگ لگتے ہیں؟!!‘‘(معنی خیز گفتگو.. ؟)

مجھے اُس کا اِس طرح ’’ فری‘‘ سٹائل اچھا نا لگا... میں نے جان چھڑانے کے لیئے صاف کہہ دیا ... ’’ بھئی میری تو اپنی شاعری بے وزن ہے ... تم کسی وزن والے شاعر کو پکڑو.... ؟!

’’ ہائے ا للہ...وزن والا شاعر ‘‘؟!!وہ بڑ بڑانے لگا ... میں نے جان چھڑانے کے لیئے ... صاف کہہ دیا .. بھیاء تم شاعری چھوڑو تم... بہتر ہے غزل گانا شروع کر دو... ؟!!

’’ جھا نجھر دی پاواں چھنکار ‘‘ ... اُس نے باقاعدہ ناچنا گانا شروع کر دیا ... غزل میں اِس طرح کی اچھل کود میں نے پہلی دفعہ دیکھی .. اور پریشان ہو گیا.. ؟!! یا اللہ میں کہاں پھنس گیا ... اوپر سے اُس نے جب دیکھا کہ میں اس کی غزل توجہ سے نہیں دیکھ رہا اُس نے غزل نما ڈانس بند کیا اور مُنہ سے مُنہ جوڑ کے سیلفی بنانے لگا ...اصل میں آج اِک سالگرہ کی تفصیل آپ کو سنانا چاہتا تھا مگر بات چل نکلی ممی ڈیڈی جیسے ’’ اہم‘‘ موضوع کی طرف ؟!!

میں ہما کی سالگرہ میں جانا تو چاہتا تھا مگر اس ڈر سے کہ کہیں وہاں ’’ وہ ‘‘ بھی نہ آئی ہو اور گلے شکوے شروع ہو جائیں .... ویسے میں نے ’’اُس‘‘ کے گلے شکوے کا توڑ پہلے ہی کر رکھا ہے کیونکہ میں نے سُن رکھا ہے کہ وہ سال میں دو بار سالگرہ مناتی ہے مگر غضب خدا کا اِس بار ’’ اُس ‘‘ نے چار بار سالگرہ منا ڈالی....یعنی 2019میں اُس نے اپنا ہی ریکارڈ توڑ ڈالا اور ہر پارٹی میں مختلف ’’ لوگ‘‘؟.... ہونہار ’’ بے بی ‘‘ کے اتنے لمبے ہاتھ؟۔ ( اب پلیز پرانے محاورے بھول جائیں تبدیلی کا سال مکمل ہوا چاہتا ہے)

ہے ناں... بُری بات؟!!

ویسے ہما کی سالگرہ بھی تو ایک سال میں دوسری بار ’’اٹینڈ‘‘ کر رہا ہوں ۔پچھلی بار وہ میرے گفٹ سے خوش نہ تھی۔مگر شکر گزار تھی کہ چلو... تم نے حسن عباسی کی کتب تحفے میں دے کر اِک نئے دوست کا اضافہ کر ڈالا۔سنا ہے جلد ہما کی شاعری کی کتاب بھی منظر عام پر آئے گی... ’’ بڑی تصویر کے ساتھ؟‘‘۔اکثر فنکار اب ڈانس کے ساتھ ساتھ گانا بھی تو سیکھ رہے ہیں؟

آپ نے کیا کہا... ’’ بڑی شاعری‘‘ ....وہ تو غالب، فیض اور فراز کر گئے۔ اب شاعری بڑی ہو نہ ہو تصویر تو بڑی دکھائی دیتی ہے اور لوگ تصویر دیکھ کر ’’ عشق‘‘ فرمانے لگتے ہیں ۔وہ تو بہت بعد میں پتا چلتا ہے کہ تصویر پچاس سال پرانی تھی۔ اِسی لیے یہ ’’ بزرگ‘‘ شاعر ایسی پر ستاروں سے ملتے ہوئے ڈر محسوس کرتے ہیں ۔(معاملہ فیس بک یا وٹس اب تک ہی رہے۔؟)

میرا موڈ اچھا تھا ....میں نے بر جستہ کہہ دیا.... ’’ ہما‘‘ تم آئندہ اپنی سالگرہ پر ٹکٹ لگائو اتنے وی۔ آئی۔ پیز؟.... میری اِس فرمائش پر ہنس دی... ابھی تو آدھے دوست اِس ڈر سے اپنی اپنی گاڑیوں میں بیٹھے میری سالگرہ انجوائے کر رہے ہیں کہ کہیں کسی چینل والے سالگرہ کا آنکھوں دیکھا حال ڈائریکٹ ٹیلی کاسٹ نہ کر ڈالیں !۔(اور لینے کے دینے پڑ جائیں ۔؟!!نجم ولی خان نے لاہور کے ’’ ڈان ‘‘ کے حوالے سے اِک رپورٹ چلائی ہے ذرا ملاحظہ کر لیں؟) ہما نے میرے کمزور سے ہاتھ پر اپنا وزنی سا ہاتھ زور سے مارتے ہوئے کہا... اور میں سوچنے لگا کہ سالگرہ کی تقریب ہال میں ہو رہی ہے اور بہت سے لوگ اپنی اپنی گا ڑیوں میں بیٹھے یہ سالگرہ کی تقریب انجوائے کر رہے ہیں... بھلا وہ کیسے؟۔میں دیر تک سوچتا رہا... جب کچھ سمجھ نہ آیا تو میںنے گاڑی سٹارٹ کی اور یہ غزل سنتا ہوا گھر کی طرف چل بڑا...

وہ خاک اُڑی یا روہم درد کے ماروں کی

ہنسی بے نصیبوں پہ بارات ستاروں کی


ای پیپر