سعودی عرب میں غیر ملکیوں کو یورپی ممالک والی سہولیات حاصل
16 مئی 2019 (15:25) 2019-05-16

ریاض : سعودی عرب میں رہنے والے غیر ملکی ایک عرصہ سے قوانین کے سخت ہونے کی شکایات کر رہے تھے مگر اب سعودی حکومت کی طرف سے ایک نئے طرز کا اقامہ جاری کیا جا رہا ہے جس کے بعد سعودی عرب میں رہنے والے غیر ملکیوں کو بے حد خصوصیات حاصل ہونے والی ہیں۔

سعودی حکومت نے اعلان کیا ہے کہ نئے اقامہ کے مطابق سعودی عرب میں رہنے والے غیر ملکیوں کو بے شمار حقوق اور مراعات حاصل ہونے والی ہیں لیکن اس کے ساتھ ساتھ ان پر کچھ ذمہ داریاں بھی عائد کی جا رہی ہیں۔ سعودی حکام نے اس اقامہ کا نام ’’اقامہ ممیز‘‘ رکھا ہے اور اسے بالکل امریکی گرین کارڈ کی طرز پر قرار دیا ہے ۔ یہ اقامہ دو قسم کا ہو گا ایک کی مدت ایک برس ہو گی جو کہ قابل تجدید ہو گا جبکہ دوسرا اقامہ غیر معینہ مدت کیلئے جاری کیا جائے ۔یہ اقامہ حاصل کرنے والوں کو کچھ شرائط پوری کرنا ہوں گی ۔ ان کا ریکارڈ جرائم پیشہ نہیں ہونا چاہیے اور وہ کسی مہلک بیماری کا شکار نہ ہو۔

اس اقامہ کے مطابق اب غیر ملکی سعودی عرب میں اپنے اہل خانہ کو ساتھ رکھ سکیں گے ٗ اپنے رشتہ داروں کو بھی وزٹ ویزے پر بلا سکیں گے ٗ رہائشی ٗ تجارتی اور صنعتی جائیداد خرید سکیں گے ٗ اپنی ٹرانسپورٹ کے مالک بن سکیں گے ٗ نجی اداروں میں ملازمت کر سکیں گے اور اپنی مرضی سے کسی بھی نجی ادارے سے دوسرے نجی ادارے میں نوکری تبدیل کر سکیں گے۔ 


ای پیپر