Photo Credit Yahoo

امریکی سفارتخانے کی بیت المقدس منتقلی مسترد، سعودی عرب بھی میدان میں آگیا
16 مئی 2018 (22:03) 2018-05-16

ریاض: سعودی کابینہ نے امریکی سفارتخانے کی بیت المقدس منتقلی کو مسترد کر دیا، منتقلی کا اقدام فلسطینیوں کے جائز حقوق کی کھلی حق تلفی ہے، کابینہ نے اسرائیلی فوج کی بربریت اورفلسطینیوں کے قتل عام کی شدید الفاظ میں مذمت کی۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق سعودی کابینہ نے اسرائیل میں امریکی سفارت خانے کی مقبوضہ بیت المقدس منتقلی کو مسترد کردیا ہے۔

دارالحکومت ریاض میں ہونے والے کابینہ اجلاس کی صدارت سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے کی۔ اجلاس میں مشرق وسطیٰ اور بالخصوص فلسطین کی صورت حال پر غور کیا گیا۔کابینہ نے امریکی سفارت خانے کی مقبوضہ بیت المقدس منتقلی کو ناقابل قبول قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ اقدام فلسطینیوں کے جائز حقوق کی کھلی حق تلفی ہے اور اس سے مسلمانوں کے جذبات مجروح ہوئے ہیں۔

اجلاس میں سعودی فرماں رواں کا کہنا تھا کہ سعودیہ عرب نے اسرائیل اور امریکا کے اس اقدام کے خطرناک نتائج سے پہلے ہی خبردار کر دیا تھا۔کابینہ اجلاس میں اسرائیلی فوج کے ہاتھوں نہتے فلسطینیوں کے قتل عام کی شدید الفاظ میں مذمت کی اور عالمی برادری سے اپیل کی ہے۔


ای پیپر