فوٹوبشکریہ فیس بک

صدر مملکت عارف علوی کی کراچی آمد پر وہی پروٹوکول کے ششکے
15 ستمبر 2018 (12:16) 2018-09-15

کراچی : کچھ نہ بدلا، نئے پاکستان میں پرانی روش برقرار، صدر مملکت کا دورہ کراچی شہریوں کیلئے زحمت بن گیا، لمبے قافلے کے ساتھ صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے مزار قائد پر حاضری دی۔

اطراف کی سڑکوں کو عام ٹریفک کیلئے بند کردیا گیا۔ شہری متبادل راستوں پر ٹریفک جام میں خوار ہوتے رہے۔ کراچی پہنچنے پر 30 سے زائد گاڑیوں کے قافلے میں روانگی تنقید کی ذد میں آگئی۔

صدر مملکت عارف علوی کی کراچی آمد پر وہی پروٹوکول کے ششکے، وہی سائرن بجاتی گاڑیوں نے عام ٹریفک کو روکے رکھا۔ پروٹوکول نہ لینے کے دعووں پر سوال اٹھنے لگے۔ صدر عارف علوی 12 سے زائد گاڑیوں کا قافلہ لے کر مزار قائد پہنچے۔ مزار قائد پر حاضری دی اور فاتحہ خوانی کی۔ گورنر سندھ عمران اسماعیل صوبائی وزیر بلدیات سعید غنی بھی ساتھ تھے۔

اس سے پہلے صدر نے نجی ایئر لائن سے کراچی کا سفر کیا مگر تبدیلی کے دعوے دار صدر مملکت 30 سے زائد چمچماتی گاڑیوں کے جھرمٹ میں روانہ ہوئے۔

پروٹوکول نشانے پر آیا تو کھلاڑی حلیم عادل شیخ وضاحتیں دینے میدان میں آگئے، بولے صدر کا پہلے 16 گاڑیوں کا پروٹوکول ہوا کرتا تھا جو اب 3 رہ گیا ہے۔ صدر کا استقبال کرنے کیلئے گورنر اور وزیر اعلیٰ سندھ سمیت صوبے کی دیگر اہم شخصیات بھی اولڈ ٹرمینل پہنچی تھیں۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 


ای پیپر