پاکستانی لڑکیوں پر مظالم کی خبریں جھوٹ ہیں : چین
15 May 2019 (18:09) 2019-05-15

چین نے کہا ہے کہ گزشتہ سال ہمارے پاس 142 ایسے کیسز آئے تھے جبکہ ان میں سے صرف چند کیسز میں ہی مسائل سامنے آئے۔ہم کوشش کر رہے ہیں کہ ان تمام کیسز کی ازسر نو چھان بین بھی کی جائے۔اس بات کی کھوج لگائیں کہ کوئی مسئلہ تو نہیں ہےاگر اس بارے میں ہمیں کوئی بھی شکایت ملی تو ہم مدد کریں گے۔

چین کے ڈپٹی چیف آف مشن لی جیان زاو نے ایک انٹرویو میں کہا کہ اس حوالے سے ایک جھوٹ پھیلایا جا رہا ہے۔ انٹرنیٹ اور میڈیا پر کہا جا رہا ہے کہ پاکستانی لڑکیوں کو چین میں زبردستی جسم فروشی کیلئے بھیجا جا رہا ہے یا پھر اعضا کی فروخت کیلئے مگر یہ مکمل طور پر غلط خبریں ہیں۔ اس سلسلے میں کوئی ثبوت سامنے نہیں آئے اور یہ خبریں صرف سنسنی پھیلانے کیلئے ہیں۔ اگر آپ کے پاس ایسے کوئی ثبوت ہیں تو مجھے دکھائیں۔

لی جیان زاو نے مزید کہا کہ اس سال چائنہ میں شادی کیلئے ویزوں کے کیسز میں خاصا اضافہ ہوا ہےاس سلسلہ میں ہم نے پاکستانی حکام کو الرٹ کیا ہے اور پاکستانی ادارے ایکشن لے رہے ہیں۔میرے خیال میں ہمیں ویزہ پالیسی کا ازسرنو جائزہ لینا چاہیے۔ خاص طور پر ان لوگوں کیلئے جو پاکستان میں کاروبار کرنے کیلئے آئے ہیں یہ دیکھنے کی ضرورت ہے کہ کیا وہ واقعی بزنس کرنے کیلئے آئے ہیں۔کون سے ادارے اور چیمبر آف کامرس ان کو مدعو کرتے ہیں۔اگر وہ یہاں پر پاکستانی لڑکی سے شادی کرنے آتے ہیں تو یہ کوئی کاروبار نہیں ہے


ای پیپر