قومی زبان عدم توجہی کا شکاراورمیرٹ کی تلوار
15 مارچ 2019 2019-03-15

ہر سال ہمارے ہزاروں طالب علموں پر میرٹ کی تلوار چل جاتی ہے اوروالدین جو دس سا ل تک بچوں کو سکول اور اکیڈمیاں بھیجنے کے لیے اپنے تمام تروسائل استعمال کرتے ہیں لیکن جونہی میٹرک یا انٹر کا نتیجہ آتا ہے تو ان کے خواب چکناچور ہو جاتے ہیں کیونکہ باقی تمام مضامین میں بہت اچھے نمبر حاصل کرنے باوجود وہ بچے اردو میں بہت کم نمبر لیتے ہیں جس کی وجہ سے ان کا مجموعی نتیجہ متاثر ہوتا ہے اور پھر وہ مطلوبہ شعبے کے لیے میرٹ پرپورے نہیں اترتے۔

حال ہی میں حکومت کی جانب سے انٹرمیڈیٹ کے سلیبس سے مسٹرچپس کا ناول نکالے جانے کا ایک نہایت احسن اقدام سامنے آیا ہے تو میں نے سوچا اگر پچاس سال بعد مسٹر چپس سے جان چھڑائی جا سکتی ہے تو پھر قومی زبان کو وہ اہمیت کیوں نہیں دی جا سکتی جو دی جانی چاہیے ۔اب مسئلے کی طرف بڑھتے ہیں چونکہ میں ایم اے ایجوکیشن میں گولڈ میڈلسٹ ہونے کے ساتھ ساتھ ایم اے اردو میں بھی پوزیشن ہولڈر ہوں اس وجہ سے تعلیم تدریس اور انتظامی شعبے میں تقریباً بیس سال سے کسی نہ کسی طرح منسلک ہوں اور اس حوالے سے تعلیمی حکام،سکول انتظامیہ،اساتذہ والدین اورطلبہ کے ساتھ بہت زیادہ وقت گزارنے کے باعث آئے روز اس مسئلے کا ذکر ہوتا رہتا ہے اس کے حل کے لیے ہم انفرادی طور پر تو کوشش کر لیتے ہیں مگر مجموعی صورت حال انتہائی ناگفتہ بہ ہے۔

اب صورت حال یہ ہے کہ ہمارے یہاں ایک تو یکساں نظام تعلیم اور نصاب نہیں ہے اس پر انگریزی کا نشہ سر چڑھ کر بولتا رہتا ہے۔ہر سکول کی کوشش ہے کہ زیادہ سے زیادہ انگریزی کتب شامل کی جائیں تاکہ ان کا معیار دوسروں سے بلند لگے اس طرح تقریباً سات سے آٹھ مضامین انگریزی میں ہوتے ہیں جبکہ ہماری قومی زبان اردو کے لیے صرف ایک پیریڈ مختص کیا جاتا ہے۔اب ہوتا کیا ہے کہ بچے کسی نہ کسی طرح انگریزی میں تو مہارت حاصل کر لیتے ہیں مگر اردو کو صرف ایک ثانوی مضمون کی حیثیت سے پڑھایا جاتا ہے۔ایک زبان ہونے کے ناتے اس کی جو اہمیت ہے اور وہ مہارتیں جن کو اجاگر کرنا لازمی ہے لکھنا پڑھنا بولنا اور سننا ان پر توجہ دئیے بغیر بس ایک رٹے رٹائے طوطے کی طرح اس مضمون کو پڑھایا جاتا ہے۔بچے نہ تو ٹھیک سے پڑھ سکتے ہیں نہ بول سکتے ہیں۔ یہاں تک کہ میٹرک میں پہنچ جاتے ہیں یہاں بھی تشریح سلیس اور مضامین کے رٹے لگوائے جاتے ہیں اب ہوتا کیا ہے کہ چونکہ وہ اس کی بنیادی چیزوں سے واقف نہیں ہوتے لہٰذا جب نمبروں کی باری آتی ہے تو مار کھا جاتے ہیں۔یاد رہے کہ میٹرک اور انٹر میں اردو کے نمبر انگریزی کے برابر ہوتے ہیں اب اگر بچے انگریزی میں 90 فیصد نمبر لیتے ہیں تو اردو میں بمشکل ان کے ساٹھ فیصد نمبر آتے ہیں اس طرح وہ میرٹ کی تلوار کی زد میں آجاتے ہیں۔ ایک اور اہم بات کہ اردو پڑھانے کے لیے اردو زبان کے ماہراساتذہ بھی نہیں رکھے جاتے بس جس کی انگریزی کمزور لگی اسے اردو کا مضمون دے دیا جاتا ہے یہ اس مسئلے کا ایک اور انوکھا پہلو ہے۔ بات صرف نمبروں کی حد تک ہی محدود نہیں قومی زبان ہونے کے ناطے انہیں اس سے جو لگاؤ ہونا چاہیے وہ بھی نہیں ہوتا ہے۔رہی سہی کسر ہماری رومن اردو نے پوری کر دی ہے اب کوئی مانے نہ مانے لیکن یقین مانیں اس وقت یہ ہمارے والدین اور طلبہ کے لیے یہ ایک انتہائی خطرناک مسئلہ بن چکا ہے اور ہر سال کئی ہزاروں طالبعلم مستقبل کے معمار بننے کے بجائے مستقبل کے بیمار بن جاتے ہیں۔ اب اس مسئلے پر بات کریں توسکول انتظامیہ کہتی ہے ہم کیا کریں ہمارا شیڈول بہت سخت ہے ہم اردو کو ایک پیریڈ سے زیادہ نہیں دے سکتے۔ اساتذہ کہتے ہیں ہم ایک پیریڈ میں کیا کریں پڑھائی کرائیں لکھنے کی مشق کرائیں یا بولنا سکھائیں ہمارے سروں پر تو سلیبس ختم کرنے کی تلوار لٹک رہی ہوتی ہے۔والدین سے پوچھیں تو کہتے ہیں بچہ سارے مضمون پڑھ لیتا ہے مگر اردو اس کو مشکل لگتی ہے اور ہمیں بھی پڑھانی نہیں آتی۔اور بچوں کی کیا ہی بات ہے ان سے پوچھیں تو کہتے ہیں کہ سب سے برا مضمون ہمیں اردو لگتا ہے؟ یہ تھی صورت حال! اردو زبان کی تاریخ اورادب کی اہمیت سے بے بہرہ قوم تیار کر دی گئی ہے لیکن ہمارے وقتوں میں ایسا نہیں تھا ہم تو بہت چھوٹی عمر سے ہی بچوں کے رسالے کتابیں آرام سے پڑھ لیتے تھے مگر یہ بچے میٹرک میں پہنچنے کے بعد بھی اپنی سلیبس کی کتب بھی نہیں پڑھ سکتے۔ مسئلے پر بات تو ہوگئی اب آخر یہ ذمہ داری کس کی ہے آخر اتنی حکومتیں آئی گئیں کیا کسی نے اس بات پر غور نہیں کیا؟ اگر اردو کو قومی زبان کا درجہ سے ہی دیا ہے تو پھر اس کے ساتھ تیسرے درجے والے شہری کا سلوک کیوں کیا جا رہا ہے؟ میراایک سوال ہے کہ آخر انگریزی کو اتنی اہمیت دے کر بھی آپ نے کون سی ترقی کر لی ہے رہے تو پھر بھی آپ غلام کے غلام۔قسم سے جب میں اپنے ملک کے بچوں کی حالت دیکھتی ہوں تو مجھے کسی اور دنیا کی مخلوق لگتے ہیں سارا دن سکول اکیڈمی میں وقت لگا کر بھی ان کے نمبر نہیں آتے اور وہ زندگی میں اپنا مقصد کبھی حاصل نہیں کر پاتے۔مجال ہے کہ نئی نسل کو علامہ اقبال یا غالب کا کوئی ایک شعر بھی درست یاد ہو یا کسی محاروے کا صحیح استعمال کرلیں۔ اور ہاں اگر کسی کو ہماری تعلیمی پالیسی کے بار ے میں پتہ ہو تو ضرور آگاہ کرے۔مجھے تو لگتا ہے بلکہ یقین ہے کہ پاکستان دنیا کا وہ واحد ملک ہے جہاں کوئی تعلیمی نظام ہی نہیں ہر گلی محلے میں نت نئے سکول کھل رہے ہیں اپنی مرضی کا سلیبس اپنی مرضی کے چوزے تیار کر رہے ہیں۔ہمارے یہاں تعلیم مشن تھوڑی ہے یہ تو ایک کاروبار ہے بس!

اب ذرا ان ممالک پر نظر ڈالیں جو ترقی یافتہ ہیں تو جناب ان سب نے اپنی اپنی قومی زبان میں تعلیم دے کر ہی ترقی کی منازل طے کی ہیں وہاں ایسا کوئی احساس کمتری نہیں ہے۔ یاد رکھیں ملک پاکستان کی ترقی اور خوشحالی کے لیے اردو زبان کا عملی نفاذ ناگزیر ہو چکا ہے۔ انگریزی کوبطور مضمون پڑھایا جانا اور بات ہے لیکن ذریعہ تعلیم اُردو ہونا چاہیے انگریزی کو ذریعہ تعلیم بنا بچوں کی تخلیقی صلاحیتں ختم ہوتی جارہی ہیں۔

موجودہ حکومت کو اس بارے سنجیدہ اقادامت کرنا ہوں گے نہیں تو یہ نسل کسی کام کی نہیں رہے گی۔ میری نظر میں کچھ تجاویز ہیں! کہ آہستہ آہستہ اردو کو ذریعہ تعلیم بنایا جائے انگریزی کتب کو اردو میں ترجمہ کیا جائے سکولوں کو پابند بنائیں کہ وہ اردو زبان کو کم از کم دو گھنٹے روزانہ دیں۔ا ردو پڑھانے کے لیے ماہر اساتذہ رکھے جائیں۔ اردو زبان کے لیے ہر سکول ہفتہ وار سرگرمیاں کروانے کا پابند ہو۔ اساتذہ کی تربیتی ورکشاپ کرائی جائے ۔ پورے ملک میں اردو زبان کی اہمیت کے لیے والدین اساتذہ سمیت مل کر عملی اقدامات کیے جائیں۔اردو زبان میں اچھے نمبر لینے والے طلبہ کی حوصلہ افزائی کی جائے۔ ہر سکول میں اردو کتب کی ایک لائبریری بنائی جائے اور ہفتے میں اس کا ایک دن مختص ہو۔

یہ مسئلہ اس وقت ایک گھر کا نہیں پوری قوم کا ہے میری وزیر اعظم سے درخواست ہے کہ اس معاملے کا نوٹس لیں اورقومی زبان کو اس کی جائز اہمیت دلائیں تاکہ ہم بھی دنیا میں سر اٹھا کر جی سکیں۔


ای پیپر