چھوٹے تاجر کو ریلیف پیکج میں نظر انداز کیا گیا : رانا ثنا اللہ
15 اپریل 2020 (19:21) 2020-04-15

لاہور :مسلم لیگ (ن) کے رہنما رانا ثنا اللہ نے کہا ہے کہ چھوٹے تاجر کو پائوں پر کھڑا رکھنا ریاست کی ذمہ داری ہے، چھوٹے تاجر کو وزیرِ اعظم عمران خان کے ریلیف پیکیج میں نظر انداز کیا گیا۔

ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ چھوٹا تاجر سفید پوش ہے اور حکومت کی امداد کا حقیقی حق دار بھی ہے، دنیا بھر میں چھوٹے تاجر کی معاشی بقا کے لیے خصوصی بیل آئوٹ پیکیج دیئے گئے۔ دیہاڑی دار کی طرح چھوٹا تاجر بھی لاک ڈائون سے شدید متاثر ہے، وفاق کے ریلیف پیکیج میں ایس ایم ای سیکٹر کیلئے 100 ارب روپے رکھے گئے۔ حکومت فوری طور پر ان 100 ارب روپے کی تقسیم کی حکمتِ عملی بنائے، تقسیم پر عمل درآمد نہیں ہوتا تو اس پیکیج کا عملا تاجروں کو کوئی فائدہ نہیں۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ ریلیف پیکیج میں مختص 100 ارب روپے این ایف سی فارمولے کے تحت صوبوں کو دے دیئے جائیں، صوبے دستیاب رقم سے چھوٹے تاجروں کی مالی امداد اور بلاسود قرضے کی اسکیم جاری کریں۔ 200 یونٹس تک کمرشل بجلی استعمال کرنے والے چھوٹے تاجروں کے بل معاف کیے جائیں۔ بجلی کے دیگر کمرشل بل 3 ماہ کے لیے موخر کیے جائیں، موخر شدہ بجلی کے کمرشل بلوں پر سرچارج وصول نہ کیا جائے۔


ای پیپر