نماز تراویح کے اعلامیہ سے پہلے علما کو انتظار کرنا چاہیے تھا
15 اپریل 2020 (18:35) 2020-04-15

اسلام آباد :اسلامی نظریاتی کونسل کے چیئرمین ڈاکٹر قبلہ ایاز نے کہا ہے کہ میرے خیال میں ہمارے علماء کرام کو گذشتہ روزمساجد میں پانچ وقت باجماعت نماز، نماز جمعہ اور رمضان المبارک میں تراویح کو جاری رکھنے کے حوالہ سے اعلامیہ جاری کرنے کے بجائے کچھ انتظار کرناچاہئے تھا۔

ایک انٹرویو میں قبلہ ایاز نے کہا کہ دونوں طرف سنجیدہ لوگ ہیں، مفتی تقی عثمانی ، مفتی منیب الرحمان اور دیگر جید علماء کرام سنجیدہ لوگ ہیں اور مجھے امید ہے کہ حکومت کہ طرف سے صدر مملکت اور وزیر مذہبی امور پیر نورالحق قادری اور وزیر داخلہ بریگیڈیئر (ر)اعجاز احمد شاہ جب ان کے سامنے پوری صورتحال پیش کر لیں گے تو بات ایک بہتر منطقی انجام تک پہنچ جائے گی ۔گذشتہ روز مساجد میں پانچ وقت باجماعت نماز، نماز جمعہ اور رمضان المبارک میں تراویح کو جاری رکھنے کے حوالہ سے مفتی تقی عثمانی اور مفتی منیب الرحمان نے اعلامیہ پڑھ کر سنایا ۔

ڈاکٹر قبلہ ایاز نے کہا کہ25مارچ کو علماء کا اعلامیہ آیا تھا اور وہ اعلامیہ یہ تھا کہ اگر حکومت نمازیوں کی تعداد ماہرین صحت کی آراء کی روشنی میں کم کرنا چاہے تو علماء کی طر ف سے مزاحمت نہیں ہو گی ۔ انہوں نے کہا کہ انسانی جان کا تحفظ سب سے اعلیٰ مقصد ہے اور انسانی جان بہت محترم ہے تو انسانی جان کے تحفظ کے لئے جو بھی کوششیں ممکن ہیں وہ کی جانی چاہئیں ، ماہرین صحت کی رائے اب بھی یہی ہے کہ سماجی میل جو ل کے دوران فاصلہ برقرار رکھنا چاہئیے۔


ای پیپر