بھارت میں مسلمانوں کو انتہا پسندوں کی جانب سے حملوں اور تنقید کا سامنا
15 اپریل 2020 (11:12) 2020-04-15

نیو دہلی: بھارت میں کرونا وائرس کی آڑ میں مسلمانوں کو انتہا پسندوں کی جانب سے حملوں اور تنقید کا سامنا ہے۔ ہندو انتہا پسندوں کی متعصبانہ سوچ میں کمی نہ آئی، مسلمانوں پر کرونا وائرس پھیلانے کے الزامات لگانا شروع کر دیے۔

تشدد کا نشانہ بنائے جانے کے واقعات بھی سامنے آنے لگے۔ ہندو انتہا پسند تنظیمیں اور میڈیا کرونا وائرس کے نام پر مسلمانوں کو بدنام کرنے میں لگا ہے۔ جس کے سبب مسلمانوں کے خلاف حملوں میں اضافہ ہو رہا ہے۔

دہلی میں مشتعل ہجوم نے تبلیغی جماعت سے وابستہ مسلم نوجوان کو اتنا مارا کہ بعد میں وہ ہسپتال میں دم توڑ گیا۔ نفرت انگیز بیانات کا اثر یہ ہوا ہے کہ بہت سے علاقوں میں مسلم دکانداروں کا اب بائیکاٹ کیا جا رہا ہے۔

دوسری جانب لاک ڈاؤن میں مسلمان گھرانے نے ایک ہندو کی سوچ ہی بدل دی ہے۔ کہتا ہے مسلمانوں کے ساتھ بیٹھ کر تو دیکھو، ان کے ساتھ بات چیت کر کے تو دیکھو وہ ہندووں سے پیار کرتے ہیں۔ اقوام متحدہ نے بھی بھارت میں مسلمانوں پر بڑھتے ہوئے حملوں پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔


ای پیپر