چیئرمین سینیٹ کے انتخاب میں مسلم لیگ (ن) کو اتحادی جماعتوں اور اپنے سینیٹرز نے ووٹ نہ دیا
14 مارچ 2018 (19:15)

اسلام آباد: چیئرمین سینیٹ کے انتخاب میں مسلم لیگ ( ن ) کو اتحادی جماعتوں اور اپنے سینیٹرز نے ووٹ نہ دیا۔ اتحادی جماعت جمعیت علمائے اسلام(ف) کے 2،فاٹا سے مسلم لیگ ( ن )کی حمایت کا اعلان کرنے والے سینیٹرز شمیم آفردیدی ،مرزا محمد آفریدی،اے این پی اور مسلم لیگ ( ن )کی سینیٹر کلثوم پروین سمیت3سینیٹرز نے راجہ ظفرالحق کو ووٹ نہ دینے کا انکشاف ہوا ہے۔ چیئرمین سینیٹ کے انتخاب میں حکمراں جماعت مسلم لیگ ( ن ) کے امیدوار راجہ ظفرالحق نے 46 ووٹ حاصل کیے تھے جب کہ ان کے مدمقابل صادق سنجرانی 57 ووٹ لے کر چیئرمین سینیٹ منتخب ہوئے تھے۔ مسلم لیگ ( ن ) نے سینیٹ میں مطلوبہ ووٹ نہ ملنے کی تحقیقات کرنے کا اعلان کیا تھا اور اب تحقیقات میں حیران کن انکشاف ہوئے ہیں۔

ذرائع کے مطابق ( ن ) لیگ کو ممکنہ تعداد سے7ووٹ کم پڑے جب کہ پارٹی امیدوار کو ووٹ نہ دینے والوں میں ( ن ) لیگ کی سینیٹر کلثوم پروین اور فاٹا سے مرزا آفریدی اورشمیم آفریدیبھی شامل ہیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اتحادی جماعت جمعیت علمائے اسلام (ف)کے2ارکان نے بھی ( ن ) لیگ کو ووٹ نہ دینے کا انکشاف ہوا ہے۔ذرائع نے بتایا کہ( ن ) لیگ کی تحقیقات کے مطابق جے یو آئی(ف) کے 2سینیٹر ز نے بھی حکومتی امیدوار کو ووٹ نہیں دیا، راجہ ظفر الحق کو صرف جے یو آئی (ف)کے2سینیٹرزنے ووٹ دیا۔ذرائع کے مطابق تحقیقاتی رپورٹ کے بعد نواز شریف نے مولانا فضل الرحمان کو اپنے تحفظات سے آگاہ کر دیا جس پر مولا فضل الرحمان نے کہا کہ جے یو آئی ف کے ارکان ووٹ نہ دیں یہ ہو نہیں سکتا لیکن وہ اس معاملے کی خود پارٹی میں تحقیقات کر کے آگاہ کریں گے۔ذرائع نے بتایا کہ( ن ) لیگ کی تحقیقات میں ووٹ نہ ڈالنے والوں میں اے این پی کی سینیٹر ستارہ ایا ز بھی شامل ہیں۔


ای پیپر