گاہے گاہے بازخواں ایں قصہ پارینہ را۔۔۔ !
14 اگست 2020 (23:48) 2020-08-14

اگست کا مہینہ آئے تو یہ کیسے ہو سکتا ہے کہ ہم اُن بے مثال قربانیوں کو بھول جائیں، ہم ہزاروں افراد کے تہہ تیغ ہونے کو بھول جائیں، ہم لاکھوں افراد کے اپنے گھروں سے بے دخل کیے جانے اور بے سرو سامانی کے عالم میں مہاجر بننے کو بھول جائیں، ہم بیاس اور ستلج دریائوں کے کناروں پر بہنے والے خونِ ناحق کی ندیوں کو بھول جائیں، ہم بیل گاڑیوں اور چھکڑوں میں سوار اورپیدل چلنے والے لُٹے پُٹے قافلوں کو بھول جائیں ہم ریل گاڑیوں کے ڈبوں کے اندر اور چھتوں اور دروازوں کے ساتھ لٹکے ہوئے کٹے پھٹے اور زخموں سے چُور بے حال مسافروں کو بھول جائیں، ہم 73 سال قبل کے اِن دل دوز مناظر کو کیسے بھول جائیں جن کی جھلکیاں کبھی کبھار ہمیں اخبارات کے صفحات اور ٹی وی کی سکرینوں پر نظر آجاتی ہیں۔یقینا ہم ان مناظر کو نہیں بھول سکتے کہ ان کا تعلق اُس بے مثال جدوجہد سے ہے جو برصغیر جنوبی ایشیاء کے مسلمانوں نے اپنے عظیم قائد محمد علی جناح کی قیادت میں اپنے لیے ایک الگ خطِ ارض حاصل کرنے کے لیے کی ۔ یہ جدوجہد بلا شبہ عدیم المثال تھی۔ اس میں بڑے، بوڑھے، بچے، جوان اور مرد وزن سبھی شامل تھے۔ یہ اسی عدیم المثال جدوجہد کا نتیجہ تھا کہ برصغیر جنوبی ایشیاء کے مسلمانوں کے لیے ایک آزاد مملکت دُنیا کے نقشے پر اُبھری۔۔۔  14گست 1947 کو برصغیر جنوبی ایشیاء میں مسلمانوں کے لیے الگ آزاد مملکت کا قیام ایک ایسا واقعہ تھا جس کی مثال قوموں کی تاریخ میں نہیں ملتی ۔ یقینا یہ منشاء الہٰی تھا ، یہ امر ربی تھا، یہ ربِ کریم کا احسانِ عظیم تھا اور اُس کے پیارے حبیب ﷺ کی نظرِ کرم تھی کہ برصغیر جنوبی ایشیاء میں جہاں مسلمان کم و بیش ایک ہزار سال تک حکمران رہے تھے اور جہاں انہوں نے اسلامی تہذیب و تمدن اعلیٰ اخلاقی اقدار، مذہبی آزادی، وسعت نظری اور عدل و انصاف کی شاندار روایات قائم کی تھیں اور تعمیرو ترقی اور خوشحالی کے انمٹ نقوش چھوڑے تھے وہاں اُن کا اقتدار ختم ہوا تو انہیں انتہائی بے چارگی، بے بسی اور بے کسی کے ساتھ غلامی کے شب و روز اس انداز سے بسر کرنے پڑے کہ اُن کے لیے اپنے قومی وجود کے تحفظ اور ملی تشخص کو برقرار رکھنا ہی مشکل نہیں ہو گیا تھا بلکہ اُن کا دین ، اُن کا مذہب اور اُن کی تہذیب و ثقافت بھی ستم کا نشانہ بننے لگے تھے۔ اور اُن کے لیے اس کے سوا کوئی چارہ کار نہیں رہا تھا کہ وہ برصغیر جنوبی ایشیاء کے جن خطوں میں اکثریت میں تھے ان خطوں کو ملا کر اپنے 

لیے ایک آزاد مملکت کا مطالبہ کریں۔

یہ ربِ کریم کا احسانِ عظیم تھا کہ اُس نے برصغیر جنوبی ایشیاء کے مسلمانوں کو انتہائی زوال اور انحطاط کے دور میں علامہ ڈاکٹر سر اقبال مرحوم اور قائد اعظم محمد علی جناحؒ جیسے صاحبِ بصیرت اور صاحبِ درد رہنما عطا کیے جو قوم کی ڈگمگاتی کشتی کو کنارے پر لانے کے لیے ناخُدا بن کر سامنے آئے ۔ اقبال جو کہ مفکر تھے ، جو ایک شاعر تھے جو دیدہِ بینا کے مالک تھے اور اپنی شاعری کے ذریعے مسلمانوں کو اپنا کھویا ہوا مقام حاصل کرنے کا پیغام مسلسل دے رہے تھے اور برصغیر جنوبی ایشیاء کے مسلمانوں کے قومی وجود کے تحفظ کے بارے میں سخت فکر مند رہتے تھے انہوں نے دسمبر 1930 میں اپنے خطبہ الہ آباد میں برصغیر جنوبی ایشیاء کے مسلمانوں کے جُداگانہ قومی وجود کو بنیاد بناتے ہوئے اُن کے لیے الگ ملک کا مطالبہ پیش کر دیا۔ علامہ اقبال ؒ کے خطبہ الہ آباد کو سامنے آئے دس سال ہی 

گزرے تھے کہ 23 مارچ 1940 کو برصغیر جنوبی ایشیاء کے مسلمانوں نے اپنے میرِ کارواں محمد علی جناحؒ کی قیادت میں منٹو پارک لاہور (موجودہ اقبال پارک) میں منعقدہ آل انڈیا مسلم لیگ کے سالانہ اجلاس میں قراردادِ پاکستان منظور کر کے ایک الگ آزاد مملکت کے حصول کو باضابطہ طور پر اپنا قومی نصب العین قرار دے دیا ۔ یہ میرِ کارواں کی پکار تھی ، یہ منزل کے تعین کا یقین تھا، یہ منزلِ مقصود کو پانے کی تڑپ تھی، یہ ایثار ، قربانی اور عزمِ راسخ کا اظہار تھا، یہ عزم و یقین اور قوتِ ایمانی کا اعجاز تھا کہ انگریز حکمرانوں کی شاطرانہ اور منافقانہ چالیں اور ہندو اکثریت کی مخالفانہ سازشیں دھری کی دھری رہ گئیں اور برصغیر جنوبی ایشیاء کے مسلمانوں کے لیے آزادی کا سورج 14 اگست 1947 کو ایک نئی آزاد مملکت کے قیام کی صورت میں طلوع ہوا۔ 

برصغیر جنوبی ایشیاء کے مسلمانوں کے الگ ملک حاصل کرنے کے مطالبے یعنی قیامِ پاکستان کے محرکات کے بارے میں جتنا بھی غور کیا جائے ، جتنی بھی چھان پھٹک کی جائے ، جس حوالے اور جس پہلو سے جانچا جائے،سیاسی محرکات کو سامنے رکھا جائے، معاشی اور اقتصادی اسباب کو بنیاد بنایا جائے، مسلمانوں اور ہندوئوں کے درمیان فکری اور تہذیبی تصادم کو اہمیت دی جائے، مسلمانوں کی مذہبی رواداری اور وسعت نظری پیشِ نظر رکھی جائے اور ہندوئوں کی تنگ نظری پر نگاہ ڈالی جائے ، مسلمانوں اور ہندوئوں کی باہمی آویزشوں کا جائزہ لیا جائے، مسلمانوں کے ایک ہزار سالہ طویل دورِ حکمرانی کے اہم واقعات اور فتوحات پر نظریں دوڑائی جائیں اور اُن کی حکومت کے ختم ہونے کے اسباب کا جائزہ لیا جائے غرضیکہ کوئی بھی رُخ ہو ، کوئی بھی پہلو ہو اور کوئی بھی گوشہ ہو یہ حقیقت واضح طور رپر سامنے آتی ہے کہ مسلمانوں کی الگ قومیت، اُن کا الگ تمدن اور اُن کا جُداگانہ ملی او ر مذہبی تشخص جسے عرفِ عام میں دو قومی نظریہ یا نظریہ پاکستان کہا جاتا ہے وہ بنیاد ہے جس کے تحت انہوں نے ایک الگ مملکت کے حصول کو اپنی منزل قرار دیا۔ یہ کوئی معمولی اتفاق نہیں تھا کہ3 جون 1947 کو تقسیمِ ہند کے منصوبے کا اعلان ہوا تو وائسرائے لارڈ مائونٹ بیٹن نے صرف اتنا ہی کہا کہ ہندوستان میں انتقالِ اقتدار 15 اگست تک کر دیا جائے گا۔ اُس  وقت 14 اگست کی تاریخ کا تعین نہیں کیا گیا اور نہ ہی کسی کے وہم و گمان میں یہ بات تھی کہ 14اور 15  اگست 1947 کی درمیانی رات لیلۃ القدر ہو گی جو برصغیر جنوبی ایشیاء کے مسلمانوں کی آرزئوں اور تمنائوں کی تکمیل کی مبارک ساعت بنے گی ۔یقینا یہ منشائے ربانی تھا کہ یہ خطہِ ارض جو اُس کے نام پر حاصل کیا جا رہا تھا اُس کا قیام لیلۃ القدر کی مبارک ساعتوںمیں عمل میں آیا۔  

پاکستان کے قیام کوتقریباً 7 عشرے ہو چکے ہیں یہ خطہِ ارض جو ہمارے خوابوں ، ہماری اُمنگوں اور ہمارے جذبوں اور ہمارے ولولوں کی سرزمین ہے اسے جسے ہم نے بے پناہ قربانیاں دے کر حاصل کیاہے افسوس سے کہنا پڑتا ہے کہ قربانیوں کا یہ سلسلہ آج بھی ختم نہیں ہوا آج بھی ہمیں کئی طرح کی آزمائشوں کا سامنا ہے پاکستان کے دُشمن اس کو ہڑپ کرنے کے درپے ہیں۔سیاسی قوتیں اور سیاسی پارٹیاں عدمِ برداشت کا شکار ہیں اور منفی پراپیگنڈے کے بل بوتے پر ایک دوسرے کو نیچا دیکھانے کے درپے ہیں۔ اس کے ساتھ کشمیر میں جو صورتِ حال بن چکی ہے اس نے پاکستان کی سلامتی اور بقاء کے لیے حقیقی خطرات پیدا کر رکھے ہیں۔ بھارت کی طرف سے لائن آف کنٹرول کی آئے روز کی خلاف ورزیاں ہی نہیں بڑھ چکی ہیں مودی سرکار نے بھارتی آئین کی دفعہ 370اور ذیلی دفعہ135 جن میں کشمیر (مقبوضہ کشمیر) کی خصوصی حیثیت کو تسلیم کیا گیا تھا ان کو ختم کرکے لداخ کو وادی جموں کشمیر سے الگ  بھارتی وفاق کا علاقہ قرار دے کر  وادی جموں و کشمیر کی بطور ریاست حیثیت کو سرے سے ہی ختم کرکے رکھ دیا ہے۔ اس طرح بھارت کشمیر کے تنازع کو بالواسطہ ماننے سے انکاری ہی نہیں ہو چکا ہے بلکہ اس نے ہمیں دیوار سے لگانے کی کوشش بھی کی ہے۔ابھی چند دن قبل ہم نے دیر سے ہی سہی 5اگست کو "یوم استحصال کشمیر" منا کر اور مقبوضہ کشمیر کو پاکستان کے نقشے کا حصہ بنا کر اس کا جواب دینے کی کوشش کی ہے۔وقت بتا ئے گا کہ اس کا کیا نتیجہ سامنے آتا ہے۔ پاکستان پائندہ باد۔


ای پیپر