کرنٹ اکاﺅنٹ خسارہ پر قابو پالیں گے :وزیر خزانہ اسد عمر
13 اکتوبر 2018 (17:20) 2018-10-13

اسلام آباد:وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر نے کہا آئی ایم ایف کے پاس اس وقت جانا نا گزیر ہے ،آئی ایم ایف کے پاس جانے کی اصل وجہ کرنٹ اکاﺅنٹ ڈیفیسٹ ہے ،امید ہے کہ رواں ماہ کرنٹ اکاﺅنٹ کا خسارہ کچھ کم ہو گا ۔

وفاقی وزیرخزانہ اسد عمر نے توقع ظاہر کی ہے کہ ماہ رواں کرنٹ خسارہ کچھ کم ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ اب ہمارے زرمبادلہ کے ذخائر آٹھ ارب ڈالرز تک پہنچ گئے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ الیکشن سے پہلے مئی،جون اور جولائی تین ماہ مسلسل کرنٹ اکاو¿نٹ کا خسارہ رہا ہے،وہ وطن واپسی پر ذرائع ابلاغ سے بات چیت کررہے تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ کل رات ہی واپس آیا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ اس سے قبل کہ صحافی سوال کریں میں ایک وڈیو دکھاتا ہوں۔

وفاقی وزیرخزانہ کا کہنا تھا کہ ہم نے 18 دفعہ آئی ایم ایف سے معاہدے کیے ہیں لیکن جو باتیں ہوئیں اس سے ایسا لگ رہا ہے کہ شاید ہم نے آئی ایم ایف کے پاس جاکر کوئی انوکھا کام کیا ہے،ایک سوال پر وفاقی وزیرخزانہ اسد عمر نے کہا کہ الحمد اللہ پاکستان پیپلز پارٹی، پاکستان مسلم لیگ (ن) اورفوجی حکومتوں نے آئی ایم ایف سے رابطے کیے،وفاقی وزیرخزانہ کا کہنا تھا کہ میرے بارے میں سینیٹر میاں رضا ربانی اور قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے کہا تھا کہ ہم آئی ایم ایف کے پاس نہیں جائیں گے۔

اسد عمر کا کہنا تھا کہ میں وہ تقریر ڈھونڈ رہا ہوں جس میں، میں نے کہا ہو کہ آئی ایم ایف نہیں جاوں گا،وفاقی وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ بیل آوٹ پیکیج لینا ضروری ہو گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ممکن ہے کہ پہلے کوئی بات کی ہو لیکن اس الیکشن میں، میں نے کبھی ایسی کوئی بات نہیں کی،آئی ایم ایف سے مذاکرات کے بعد گزشتہ شب ہی وطن واپس پہنچنے والے وفاقی وزیرخزانہ کا کہنا تھا کہ آئی ایم ایف کے پاس جانا کرنٹ اکاو¿نٹ ڈیفیسٹ ہے۔


ای پیپر