نواز شریف 7ارب دیں جہاں مرضی علاج کروائیں:حکومتی ٹیم
13 نومبر 2019 (18:02) 2019-11-13

اسلام آباد :وفاقی کابینہ کی ذیلی کمیٹی نے جہاں نواز شریف کے بیرون ملک جانے کیلئے شیورٹی بانڈز کو لازمی قرار دیا وہیں شریف فیملی نے کسی بھی قسم کی کوئی حکومتی شرط ماننے سے انکار کرد یا ۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آبادمیں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وفاقی وزیرقانون فروغ نسیم نے کہا کہ حکومت نے نواز شریف کو 4 ہفتوں کے لیے علاج کے غرض سے بیرون ملک جانے کی اجازت دی ہے،سابق وزیراعظم کو باہر جانے کی اجازت ایک بار کے لیے ہے۔

وفاقی وزیرقانون نے کہا کہ شہبازشریف سے کہا ہے کہ 7 ارب روپے کے شیورٹی بانڈز جمع کرانا ہوں گے، کابینہ کو بتایا کہ نوازشریف کو صحت کی سنگین صورتحال لاحق ہے، ہمیں بھی یہ نہیں پتہ تھا کہ اتنی سنگین صورتحال ہے،سب نے متفقہ طور پر فیصلہ کیا کہ نوازشریف کو باہر جانے کی اجازت دیں،فروغ نسیم نے مزید کہا کہ نواز شریف کو ایک شیورٹی بانڈ دینا ہوگا، اب وفاقی کابینہ کی مرضی ہے کہ معاملہ آگے کس طرح لے جاتی ہے، مجرموں کو ایک بار کی اجازت دینے کی کئی مثالیں ہیں، ہر کیس کو اپنی میرٹ پر دیکھنے کی ضرورت ہوتی ہے۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے احتساب شہزاد اکبرنے کہا کہ مجرم کو قانون کے مطابق ای سی ایل سے نہیں نکالا جاتا، وفاقی حکومت کی ذمہ داری بنتی ہے کہ واپسی کی یقین دہانی کرائے، کل عوام اور عدالتیں بھی ہم سے سوال کرسکتی ہیں،شہزاد اکبر نے کہا کہ جتنے بھی ای سی ایل کے کیسز ہیں ان میں ہمیشہ یقین دہانی کرائی گئی،نوازشریف کی حالت سنگین ہے، وہ جہاں چاہیں علاج کرائیں،اس معاملے میں کوئی سیاسی اینگل نہیں ہے، ایک انڈیمنٹی بانڈ دیں اور وزارت داخلہ ان کو باہر جانے کی ایک بار اجازت دے دے گی۔

شہزاد اکبر کا مزید کہنا تھا کہ یہ کوئی عام کیس نہیں ہے، نوازشریف کو بڑے کرپشن کے کیسز میں سزا ہوچکی ہے، ماضی میں کچھ لوگ گئے لیکن واپس نہیں آئے۔


ای پیپر