مسلم لیگ ن کی مرکزی جنرل کونسل کا اجلاس ، نواز شریف کا دبنگ خطاب
13 مارچ 2018 (16:29)

اسلام آباد: نواز شریف نے مرکزی جنرل کونسل سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جھوٹ بولنے والے لیڈر نہیں قوم کیلئے شرمندگی ہیں ۔ ۔ہم پاکستانی قوم کو بیچنے والے نہیں ہیں ۔ان لوگوں نے اپنے مفاد کیلئے قوم کو بیچا ۔ہم پاکستان کیلئے لڑ جانے والے لوگ ہیں۔زرداری اور نیازی کو خطاب کر تے ہوئے کہا کہ تم جیت کر بھی ہار گئے اور ہم ہار کر بھی جیت گئے ۔مجھے کروڑوں ووٹ دے کر وزیر اعظم بنا یا گیا ،دن رات اپنی قوم کے بارے میں سوچتا ہوں ۔4سال نہ صرف ملک کے بارے میں سو چا بلکہ مسائل بھی حل کیے۔جس مشن کو چن لیا اُ س سے پیچھے نہیں ہٹیں گے ۔ہمارے منشور کے صرف 4الفاظ ہیں ۔


جوتا پڑنے کا ذکر کرتے ہوئے نواز شریف نے کہا کہ کیا آپ نے کل یہاں پر تما شا دیکھا ۔ووٹ کو عز ت دو ۔منتخب وزیر اعظم تھا اور اب عدالتوں کے چکر کاٹ رہا ہوں ۔عوام کے حق حکمرانی کو عزت دو ۔میں آج اپنے کسی کیے کی سزا نہیں بھگت رہا ہوں ۔مجھے اپنی جان کی بھی پرواہ نہیں ۔میں پاکستان کیلئے جدوجہد کرناچاہتا ہوں ۔بنی گالہ والے بھی اس جگہ جا کر جھک گئے اور بلاول ہا ﺅس والے بھی اُسی جگہ پر جا کر جھک گئے ۔پاکستان قوم کی ترقی کی بات کی اس لیے نشانہ بنا یا گیا ۔میرا کوئی ذاتی ایجنڈا نہیں ۔

مسلم لیگ ( ن ) کے قائد میاں نوازشریف نے سینیٹ الیکشن پر مخالفین کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ سب چابی والے کھلونے ہیں جو کل ایک ہی جگہ جاکر جھک گئے۔اسلام آباد میں پارٹی کے جنرل ورکرز اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے میاں نوازشریف نے کہا کہ ہم نے قلیل مدت میں لوڈشیڈنگ کا خاتمہ کیا، ہم نے قلیل مدت میں لوڈشیڈنگ کا خاتمہ کردیا، آج دل چاہتا ہے کہ کہیں منصوبوں کا افتتاح کرنے جائوں ہیں جس میں میرا خون پسینہ گرا ہوا ہے، یقین ہے شاہد خاقان عباسی اور شہبازشریف بھی مجھے اس وقت مجھے یاد کرتے ہوں گے۔

میاں نواز شریف نے اس موقع پر شعر پڑھا کہ


ہمارا خون بھی شامل ہے تزئین گلستان میں
ہمیں بھی یاد کرلینا چمن میں جب بہار آئے

سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ جو میرے ساتھ ہوا اس کے بعد کسی چیز کا افتتاح کرنے کا دل نہیں چاہتا، انسان کا دل ٹوٹ جاتا ہے لیکن میرا دل اتنا بھی نہیں ٹوٹا کہ پیچھے ہٹ جائوں، جو مشن چن لیا ہے اس کی تکمیل تک کبھی پیچھے نہیں ہٹوں گا، یہ ہمارے ایمان کا حصہ ہے۔انہوں نے کہا کہ جس طرح سے ہمارے ستر سال گزرے، اگلے ستر سال ویسے نہیں گزرنے چاہئیں، اگلے ستر سال بہتر بنانے کے لیے آپ کے قدم سے قدم ملا کر چلوں گا، آپ کو مجبور کروں گا کہ میرے ساتھ چلیں۔

میاں نوازشریف کا کہنا تھا کہ ( ن ) لیگ کا منشور اب صرف ان چار الفاظ پر ہوگا کہ ’ووٹ کو عزت دو‘، کوئی نعرہ لگائے نہ لگائے لاکھوں کے مجمہ یہی نعرہ لگارہا ہے، اس کا مطلب ہے عوام کے حق حکمرانی کو اور انہیں عزت دو، یہ نعرہ اپنی ذات کے لیے نہیں لگاتا، میری ذات کی کوئی حیثیت نہیں، اگر اب کسی کی حیثیت ہے تو قوم ملک اور آنے والی نسلوں کی ہے۔( ن ) کے قائد نے کہا کہ سب کو گواہ بناکر کہتا ہوں مجھے کوئی ذاتی مفاد یا لالچ نہیں، اپنے قوم ملک اور عوام کی بات کرتا ہوں، پاکستان کے لیے کوئی جدوجہد کرنا چاہتا ہوں وہ قوم اور آنے والی نسلوں کے لیے ہے، ووٹ کی عزت ہوگی تو آپ کی عزت ہوگی، ملک کی عزت ہوگی، غیر ملکیوں کی نظروں میں عزت ہوگی۔


ای پیپر