پاکپتن مزار اراضی کیس، سپریم کورٹ نے جے آئی ٹی تشکیل دیدی
کیپشن:   فوٹو بشکریہ فیس بک
13 دسمبر 2018 (13:16) 2018-12-13

اسلام آباد: سابق وزیراعظم نواز شریف ایک اور جے آئی ٹی کا سامنا کریں گے۔ سپریم کورٹ نے پاکپتن مزار اراضی کیس میں جے آئی ٹی تشکیل دے دی۔

تفصیلات کے مطابق ڈائریکٹر جنرل نیکٹا خالد داد لک جے آئی ٹی کے سربراہ ہونگے جبکہ حساس اداروں کے نمائندے بھی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کا حصہ ہونگے۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے دستاویزات سے ثابت ہوا کہ نواز شریف نے بطور وزیراعلیٰ اوقاف جائیداد نجی ملکیت میں دی، لیکن میاں صاحب کہتے ہیں ان کی یادداشت ہی چلی گئی ہے۔ عدالت نے 27 دسمبر تک قواعد وضوابط بنا کر تحقیقاتی ٹیم کو پیش ہونے کا حکم دیا ہے۔ نواز شریف کیجانب سے وکیل بیرسٹر ظفراللہ خان نے جواب جمع کروا دیا۔

یاد رہے کہ گزشتہ سماعت پر عدالت نے بردباری کا مظاہرہ کرتے ہوئے تحقیقات کا فورم پوچھا تھا۔ نواز شریف نے جواب دیتے ہوئے کہا تھا کہ عدالت اپنی منشاء کے مطابق کسی بھی موزوں فورم یا ایجینسی سے تحقیقات کروا لے۔

واضح رہے کہ پاکپتن مزار اراضی کیس میں نواز شریف کو 1985 میں بطور وزیراعلیٰ ذاتی حیثیت میں طلب کیا تھا، ان پر محکمہ اوقاف کی زمین واپسی کا نوٹیفیکیشن واپس لینے کا الزام ہے۔


ای پیپر