مریضوں سے امتیازی سلوک نہیں کرتے : چین کا امریکہ کا جواب
13 اپریل 2020 (22:04) 2020-04-13

بیجنگ : چین نے اس امریکی الزام کی تردید کی ہے کہ چین کے صوبے گوانگ ڈونگ نے وبا کی روک تھام اور کنٹرول کے عمل میں افریقی باشندوں کے ساتھ امتیازی سلوک رکھا اور کہا ہے کہ امریکہ محاذ آرائی کو ہوا دے رہا ہے، جو نہ صرف غیر اخلاقی ہے بلکہ غیر ذمہ دارانہ بھی ہے۔

چینی وزارت خارجہ کے ترجمان  ژا لی جیان نے چین امریکہ پر زور دیتا ہے کہ وہ اپنے ملک میں وبا کی روک تھام اور کنٹرول پر توجہ دے۔ چین افریقہ دوستانہ تعلقات کے درمیان محاذ آرائی کو بھڑکانے کی کوششیں کبھی کامیاب نہیں ہوں گی۔کورونا وائرس کے خلاف جنگ کے دوران، چینی حکومت نے غیر ملکی شہریوں کی زندگی اور صحت کو انتہائی اہمیت دی ہے۔ تمام غیر ملکیوں کے ساتھ یکساں سلوک کیا جاتا ہے اور ہم امتیازی سلوک کو مسترد کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ چین اور افریقہ ہمیشہ سے اچھے دوست، اچھے شراکت دار اور اچھے بھائی رہے ہیں اور یہ کہ افریقی ممالک نے سب سے مشکل وقت میں وبا سے جنگ کے دوران چین کا ساتھ دیا۔ ایسے وقت میں جب افریقہ میں صورتحال مزید سنگین ہوتی جارہی ہے، چینی حکومت اور عوام نے افریقہ کو تیزی سے امداد فراہم کی ہے، جسے افریقی ممالک اور ان کے عوام نے بہت سراہا ہے۔

ترجمان نے کہا کہ افریقہ کے بارے میں چین کی دوستانہ پالیسی کبھی تبدیل نہیں ہوگی، افریقی ممالک اور ان کے عوام کے ساتھ ہماری دوستی کبھی نہیں لڑکھڑایے گی اور ہم اپنے افریقی بھائیوں کے ساتھ کبھی بھی امتیازی سلوک نہیں کریں گے۔صوبہ ہوبے میں 3ہزار سے زیادہ افریقی طلبا میں سے کرونا وائرس کی وبا کے انتہائی عروج کے وقت صرف ایک طالب علم متاثر ہوا جس کا فوری طور پر علاج کیا گیا اور وہ جلد صحت یاب بھی ہوگیا۔ باقی سب کی حالت ٹھیک ہے۔


ای پیپر