Image Source : Twitter

بھارتی خفیہ ایجنسی ’’را‘‘کا بڑا سکینڈل بے نقاب
13 اپریل 2019 (18:40) 2019-04-13

نئی دہلی:بھارت میں ایک لاکھ کروڑ روہے کی جعلی کرنسی بیرون ملک سے چھاپ کر بھارت لانے کا انکشاف ہوا ہے، جس میں را کے اہلکار بھی ملوث پائے گئے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق یہ انکشاف بھارت میں حزب اختلاف کی جماعت کانگریس کے رہنما کپل سبل نے کیا ہے، کانگریس رہنما نے بھارتی وزیراعظم نریندرمودی پر الزام عائد کیا ہے کہ مودی سرکار کی حکومت میں 10 کھرب کی جعلی کرنسی بیرون ملک چھاپ کر بھارت منتقل کی گئی ہے ،جس میں بھارتی خفیہ ایجنسی را بھی شامل ہے۔انہوں نے کہا کہ مودی حکومت میں دس کھرب روپے کے جعلی کرنسی نوٹ بیرون ملک چھاپے گئے جسے بھارتی فضائیہ کے ٹرانسپورٹ طیاروں کے ذریعے بھارت منتقل کیا گیا ہے۔

رہنما کانگریس نے مزید کہا کہ بھارتی خفیہ ایجنسی را نے بھی حکمران جماعت بھارتی جنتا پارٹی کی مودی حکومت کا کرپشن میں ہاتھ بٹایا ہے،ان کا کہنا تھا کہ ایکسچینج ٹرانزیکشن ریٹ پہلے 15 فیصد بعد میں 40 فیصد کردیا گیا ہے۔کانگریس کے سینئر رہنما کپل سبل نے اپنی پریس کانفرنس میں بتایا کہ بی جے پی کے صدر امیت شاہ نے سب کام کے لیے لاجسٹکس سپورٹ فراہم کی جبکہ گھنانے کام میں 26 افراد مختلف دفتروں میں شامل کیے گئے جو انہیں رپورٹ دیتے تھے۔

کپل سبل نے بتایا کہ ٹرانزیکشن کے دوران کوئی محکمہ دخل اندازی نہیں کرسکتا تھا بلکہ دخل اندازی کرنے والوں کو دلی سے باس کا فون آجاتا تھا اور انہیں جگہ چھوڑنی پڑتی تھی۔کانگریس رہنما نے نریندر مودی پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا کہ فراڈکا جو پول کھولنا چاہتا ہے اسے انتہائی سفاکی سے ختم کردیا جاتا ہے،کپل سبل نے انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ مودی نے ایجنسیوں کو اپنے مخالفین کیخلاف استعمال کیا کیونکہ را کے ایجنٹ نے بتایا کہ کیسے بھارت میں کوئی بھی وفادار نہیں رہ سکتا ہے چور اور چوکیدار ملے ہوئے ہیں۔


ای پیپر