سینٹ کمیٹیوں کے سامنے پیشی سے کوئی نقصان نہیں پہنچا : مارک زکر برگ
13 اپریل 2018 (17:51) 2018-04-13


واشنگٹن: فیس بک کے بانی مارک زکر برگ سے سینیٹ کمیٹی کے سامنے پیشیوں سے انہیں کوئی نقصان نہیں پہنچا بلکہ ان کی دولت میں مزید اضافہ ہوتا جارہا ہے۔ گزشتہ روز ختم ہونے والی سماعتوں کے بعد امریکی قانون ساز کوئی نتیجہ اخذ نہیں کرسکے کہ کتنے عرصے میں فیس بک پر کس قسم کی پرائیویسی کے قوانین لاگو کیے جائیں۔


ایک روز قبل امریکی ایوان نمائندگان کی کمیٹی کے سامنے پیشی سے قبل مارک زکر برگ نے سوشل نیٹ ورک کے بزنس اور قوانین میں نئی تبدیلیوں کو سپورٹ کرنے سے انکار کردیا تھا۔ مارک زکر برگ نے کہا تھا کہ یہ ضروری ہے کہ ہم پرائیویسی کے حوالے سے انٹرنیٹ فرمز کے لیے کچھ اقدامات کریں لیکن انہوں نے اس کی وضاحت نہیں کہ کہ کیا اقدامات کیے جائیں۔اس سے قبل زکر برگ کبھی بھی کانگریس کی سماعت میں پیش نہیں ہوئے لیکن وہ سوالات کے جواب دینے میں کامیاب رہے۔ڈیموکریٹک نمائندہ ڈیبی ڈینگل نے زکر برگ کے مستقبل کے حوالے سے کیے جانے والے اقدامات پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کچھ بنیادی باتیں ایسی ہیں جن سے سی ای او واقف نہیں ۔


مارک زکر برگ نے بالآخر ڈیٹا کنٹرول کے حوالے سے متعدد مرتبہ اپنے جواب میں کہا کہ میں ان 87 ملین افراد مں شامل تھا جن کی معلومات کیمبرج اینالیٹیکا کے ساتھ شیئر کی گئیں، جس سے متعلق ان کے پاس مزید معلومات نہیں ۔ مارک زکر برگ نے اس بات کا اقرار کیا کہ ان کی کمپنی کا بانی بھی فیس بک پر اپنا ڈیٹا محفوظ نہیں کرسکا، اس بات نے قانون دانوں کو اس بات پر آمادہ کیا کہ صارفین خود ہی اپنے ڈیٹا کی حفاظت کرسکتے ہیں اس کے علاوہ فیس بک کے لیے علیحدہ قانون سازی کرنا غیر ضروری ہے


ای پیپر