PTI government will stand with Pakistanis abroad in any case: Fawad Chaudhry
کیپشن:   فائل فوٹو
12 May 2021 (11:27) 2021-05-12

اسلام آباد: وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے کہا ہے کہ وزیراعظم نے عام پاکستانی مزدوروں کا دکھ محسوس کیا، تحریک انصاف کی حکومت ہر حال میں اوورسیز پاکستانیوں خاص طور پر مزدوروں کے ساتھ کھڑی ہوگی۔ وزیراعظم کو چند بابوؤں کی جانب سے لکھے گئے خط کی وجہ سے میں حیران ہوں۔

فواد چودھری کا کہنا ہے کہ عوام کیساتھ بیوروکریسی کا رویہ کسی بھی طور پر قابل رشک نہیں ہے۔ ہمیں بیوروکریسی میں موجود لوگوں کے رویے کو بدلنے کی ضرورت ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستانی عوام کو بیوروکریسی سے جس قسم کی شکایات ہیں، بیرون ملک قائم پاکستانی سفارتخانے بھی اس سے ہٹ کر نہیں ہیں، تاہم یہ بات درست ہے کہ ہمارے سفارتخانوں میں بھی بہت اچھے افسران موجود ہیں۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ اس بات کیلئے وزیراعظم عمران خان کا اقدام قابل تحسین ہے کہ انہوں نے عام پاکستانیوں کو دکھ اور درد محسوس کیا لیکن سابق حکومتوں کے دور میں اوورسیز پاکستانیوں کیساتھ جس قسم کا سلوک ہوتا تھا، اس پر کہانیاں لکھی جا سکتی ہیں۔

خیال رہے کہ وزیراعظم عمران خان نے دنیا بھر میں پاکستانی سفارتخانوں کی کارکردگی اور کام کی مانیٹرنگ کیلئے وزارت خارجہ میں سیل قائم کرنے کا حکم دے دیا ہے۔

بیرون ملک تعینات پاکستانی سفیروں سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا تھا کہ سفارتخانوں کاکام اپنےشہریوں کوسروس دیناہے، پاکستانیوں سےسفارتکاروں کی لاتعلقی کارویہ ناقابل قبول ہے۔ پاکستانی سفارتخانے جس طرح چل رہے ہيں، اس طرح نہيں چل سکتے، سفارتخانوں کو نو آبادیاتی دور والا رویہ بدلنا ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ جو سفیر اچھا کام کریں گے ان کی تعریف کریں گے، غلط کام پر کارروائی ہوگی۔ سفارتخانوں میں بیرون ممالک کے جیلوں میں پاکستانی قیدیوں کی مدد کیلئےاسپیشل سیل قائم کیا جائے گا اور وکیل بھی ہائیر کریں گے۔

وزیراعظم نے کہا کہ سعودی عرب میں پاکستانی سفارتخانے میں پچھلے کئی سالوں میں کچھ پریشان کن صورتحال پیدا ہوئی ہے۔ سعودی عرب میں پاکستانی سفارتخانےکےبارےمیں شکایات موصول ہوئی ہیں۔

عمران خان نے کہا کہ سعودی عرب اورمتحدہ عرب امارات کے سفارتخانوں سے متعلق زیادہ شکایات آئی ہیں۔ یواے ای اورسعودی عرب میں پاکستانی سفارتخانے کا رویہ پاکستانیوں سے نامناسب ہے۔ سعودی سفارتخانےسےمتعلق شکایات پرہائی لیول انکوائری ہورہی ہے۔

وزاعظم عمران خان نے کہا کہ سمندرپارپاکستانی ہمارا قیمتی سرمایہ ہیں۔ سمندرپارپاکستانیوں کی ترسیلات کی وجہ سے پاکستان دیوالیہ پن سے محفوظ رہا۔

وزیراعظم نے کہا کہ مجھے بیرون ملک پاکستانی سفارتخانوں کا پرانا تجربہ ہے۔ خواہش ہے کہ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں سے سفیروں کا رویہ بہتررہے۔ بدقسمتی سے سفارتخانوں کا اپنے شہریوں کے ساتھ  رویہ ناروا ہوتا ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستانی سفارتخانے جس طرح چل رہے ہیں اس طرح مزید نہیں چل سکتے۔ اگروسائل کی کمی ہے تو ہمیں بتائیں اور فراہم کریں گے۔ بھارت کے سفارتخانے اپنے ملک میں سرمایہ لانے کے لیے فعال کردار ادا کر رہے ہیں جبکہ پاکستانی سفارتخانے اس حوالے سے غیر فعال ہیں۔

انہوں نے واضع کر دیا کہ سفارت کار اور سفارتخانے لیبر طبقے کے ساتھ اپنا رویہ بہتر بنائیں، اپنی سوچ اور رویہ بدل لیں ورنہ ان کے خلاف کارروائی ہوئی۔


ای پیپر