انسداددہشتگردی کی خصوصی عدالت وکلاءکیخلاف اہم فیصلہ سنا دیا
12 دسمبر 2019 (18:39) 2019-12-12

لاہور: انسداددہشتگردی کی خصوصی عدالت نے پنجاب انسٹیٹیوٹ آف کارڈیالوجی پر حملے، توڑ پھوڑ اور جلاﺅ گھیرا ﺅ کے الزام میں گرفتار 46وکلاءکے جسمانی ریمانڈ کی استدعا مسترد کرتے ہوئے 14روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا ، لاہور ہائیکورٹ بار کے صدر سمیت دیگر نے گرفتار وکلاءکی ضمانت پر رہائی کے لئے درخواست دائر کر دی ۔

تفصیلات کے مطابق پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی پر حملے، توڑ پھوڑ اور جلاﺅ گھیرا ﺅ کے الزام میں گرفتار 52 ملزمان وکلاءمیں سے 46 کو تھانہ شادمان میں درج 2 ایف آئی آر میں انسداد دہشتگردی کی خصوصی عدالت کے ایڈمن جج عبدالقیوم خان کے روبرو پیش کیا گیا۔

اس موقع پر پولیس کی جانب سے سکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کئے گئے تھے۔ پولیس نے ملزمان کو چہرے ڈھانپ کر عدالت میں پیش کیا ۔ ملزمان کی طرف سے سینئر نائب صدر سپریم کورٹ بار غلام مرتضی چوہدری سمیت دیگر پیش ہوئے ۔

پولیس کی جانب سے ملزمان کے جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی گئی تاہم عدالت نے ملزمان کو جوڈیشل کرتے ہوئے میڈیکل کرانے کی ہدایت کر دی ۔دوسری جانب لاہور ہائیکورٹ بار کے صدرحفیظ الرحمان چوہدری اور دیگر کی جانب سے گرفتار وکلاءکی رہائی کےلئے لاہورہائیکورٹ میں درخواست دائر کر دی گئی ۔


ای پیپر