سٹیٹ بینک سکیم،16لاکھ 13 ہزار 164ملازمین کے روزگار کو تحفظ فراہم
11 اکتوبر 2020 (16:24) 2020-10-11

اسلام آباد: کورونا وائرس کی وبا کے دوران روزگار کے تحفظ کیلئے اسٹیٹ بینک کی سکیم کے تحت اب تک 16 لاکھ، 13 ہزار، 164 ملازمین کے روزگار کو تحفظ فراہم کیا گیا ہے۔

 اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے کورونا وائرس کی وبا سے پیدا ہونے والی معاشی مشکلات اور بے روزگاری روکنے کے لیے یہ سکیم متعارف کرائی۔ سکیم کے تحت کاروباری اداروں کو مستقل، کنٹریکٹ اور دیہاڑی دار سمیت ہر قسم کے ملازمین کو تنخواہوں کی ادائیگی کے لیے سستے قرضے حاصل کرنے کی سہولت فراہم کی گئی۔

سکیم کے تحت اپریل 2020ء سے ستمبر 2020ء کے دوران اپنے ملازمین کو برطرف نہ کرنے والے ادارے ملازمین کی تین ماہ کی تنخواہوں کے لیے 5 فیصد شرح سود پر قرض حاصل کر سکتے ہیں۔

فعال ٹیکس گزاروں کی فہرست میں شامل اداروں کو 4 فیصد کی شرح پر قرضہ لینے کی سہولت فراہم کی گئی ہے اسٹیٹ بینک کی جانب سے جاری کردہ اعدادوشمار کے مطابق دو اکتوبر 2020ء تک اس سکیم کے تحت 3457 کاروباری اداروں اور کمپنیوں نے 18 لاکھ، 88 ہزار، 808 ملازمین کے روزگار کے تحفظ کیلئے 2 کھرب، 68 ارب، 10 کروڑ روپے سے زائد کے قرضہ کیلئے درخواستیں دائر کیں۔

اسٹیٹ بینک نے ان میں سے 2760 اداروں اور کمپنیوں کی جانب سے دو کھرب، 21 ارب 55 کروڑ، 700 لاکھ روپے تک کے قرضہ درخواستوں کی منظوری دی اور یوں 16 لاکھ، 13 ہزار، 164 ملازمین کے روزگار کو تحفظ فراہم کیا گیا ہے۔

ادھر وزیراعظم عمران خان نے مہنگائی کے خلاف ایکشن پلان تیار کرتے ہوئے ٹائیگر فورس کا کنونشن بلانے کی ہدایت کر دی۔ انہوں نے کہا ہے کہ چاہتا ہوں ٹائیگر فورس روزانہ کی بنیاد پر اشیائے خورونوش کی قیمتیں چیک کرے۔

سماجی رابطے کی و یب سائٹ ٹویٹر پر جاری بیان میں انہوں نے کہا ہے کہ ہفتے کو کنونشن سینٹر میں ٹائیگر فورس سے ملاقات کروں گا۔ چاہتا ہوں کہ ٹائیگر فورس روزانہ کی بنیاد پر آٹا، چینی، گھی اور دالوں کی قیمتیں چیک کرکے اسے پورٹل پر پوسٹ کرے۔


ای پیپر