مدبرِ اعظم
11 نومبر 2019 2019-11-11

ربیع الاول وہ مہینہ ہے کہ جس میں کائنات کی اہم ترین ہستی کا ظہور ہوا جسے کائنات کے خالق نے رحمة للعٰلمین قرار دیا اور قیامت تک کے لیئے یہ بات طے کردی کہ اس کی آخری ہدایت اور احکام کے لیے اس ہستی کی لائی گئی کتاب کے سوا کوئی دوسرا ذریعہ نہیں ہے ۔ اسی ہستی کو جو خاتم النبیین ہے، میزان اور لوہا بھی عطا ہوا کہ جس کے ذریعے وہ لوگوں پر خدا کی حجت پوری کردے۔ آپ نے اپنی تعلیم کے ذریعے انسانیت کو مظلومیت سے عزت کا درجہ عطا فرمایا۔ یہاں ہم سیرت طیبہ کے چند پہلو ﺅں کوبیان کرنے کی سعادت حاصل کریں گے:

دنیا کی موجود تاریخ اس بات کی شاہد ہے کہ ایک مثالی مملکت کی تشکیل و قیام کے لیے فلسفیوں اور مذہبی مثالیت پسندوںنے ہر دور میں بحث کی ہے اور بعض عملی تخیل پرستوں نے ان مباحث کی روشنی میں ان خیالات کو عملی طور پر وجود میں لانے کی بھی کوششیں کی ہیں ۔ سقراط و افلاطون سے لے کر ایچ جی ویلز نے تخیلیاتی مثالی ریاست کا نقشہ پیش کیا ہے ۔ سقراط نے جہاں ریاست کا نقشہ پیش کیا وہاں ساتھ ہی اقرار بھی کیا کہ اس کا عملی نمونہ آسمانوں پر ہی بن سکتا ہے۔ لیکن یہ بات تاریخی حقیقت کا درجہ حاصل کرچکی ہے کہ رسول کریم کے علاوہ دنیا کے روحانی و سیاسی رہنماﺅں میں سے کسی نے بھی اپنے خیالات و الہامات کی روشنی میں کسی مثالی مملکت کے قیام کے لیے کامیاب کوشش نہیں کی۔ آپ کی ذات ہی وہ مدبرِ اعظم ہے جس نے قیامت تک کے لیے ایک مثالی مملکت کے سیاسی، معاشی، سماجی سمیت ہر شعبے کے لیے قابل عمل خاکے اور عملی نمونے اپنے اسوہ حسنہ کی شکل میں پیروی کے لیے چھوڑے ہیں ۔ حضور اکرم نے ایسے نصب العینوں کو انسانیت کے سامنے پیش کیا جس میں انسانی فطرت اور کوتاہیوں کو سامنے رکھا گیا ۔ آپ نے مملکت کے قیام کے لیے انسانی زندگی کے ہر پہلو اور انسانی استعداد کو سامنے رکھا ، جیسے کہ قرآن پاک میں ارشاد ہے کہ اللہ تعالیٰ انسان پر اسکی طاقت سے زیادہ بوجھ نہیں ڈالتا۔

پیغمبر اسلام حضرت محمد نے محنت کرنے والوں کی حوصلہ افزائی کی اور محنت کا استحصال کرنے والوں کی بیخ کنی کی۔ آنحضرت کا ارشاد مبارکہ ہے کہ یعنی محنت کرنے والا اللہ کا دوست ہے ، محنت کی عظمت کی اس سے بڑی دلیل کیا ہوگی کہ آنحضرت نے خود مزدوروں کی طرح کام کرکے تاقیامت محنت کی عظمت پر مہر ثبت کردی۔ یہ آپ ہی کے ارشاد ات ہیں کہ پسینہ سوکھنے سے قبل مزدور کی اجرت اس کے حوالے کردو ، اور وہ شخص جو زمین کاشت کرتا ہے وہی زمین پر بہتر حق رکھتا ہے۔ آپ نے جس فلاحی مملکت کی داغ بیل ڈالی اس میں مزدور ، کسان ، گلہ بان اور طالبان ِعلم اور متدین تاجروں کو بھی شامل فرمایا۔ آپ ایک عادل مملکت کو معاشرتی عدل اور فرد کی معاشی خوشحالی سے مربوط فرماتے تھے۔ آپ تاریخ کے پہلے معاشی منصف ہیں جنھوں نے سرمائے پر محصول عائد کیا اور کلانیت کے قانون کو ختم کیا ،جس کی رو سے بڑا بچہ ہی جائیداد کا بلا شریک وارث ہوتا تھا اور اس کے چھوٹے بہن بھائی اور دیگر رشتہ دار محروم رہتے تھے۔

آپ نے طفیلیت اور بغیر کمائی ہوئی آمدنی پر گذر بسر کرنے کی حوصلہ شکنی فرمائی۔ آپ پہلے عظیم الشان مذہبی معلم ہیں جنھوں نے واضح الفاظ میں یہ اعلان فرمایا کہ افلاس آدمی کے لیے سب سے بڑا عیب ہے اور غربت انسان کو کفر کے کنارے لاکھڑا کرتی ہے اور مشہور حدیث مبارکہ ہے کہ افلاس سے انسان کا منہ دونوں جہانوں میں سیا ہ ہوتا ہے اس لیے اس سے بچنے کی ہر ممکن کوشش کرنی چاہیے۔ آنحضرت نے فرمایا کہ جو انسان اپنے خاندان کے لیے روزی تلاش کرتا ہے، اس کا یہ عمل بھی خدا کی عبادت ہوتا ہے۔ آپ نے ہر ایماندارانہ کام کو عبادت میں تبدیل فرمادیا ۔

جہاں آپ نے محنت کا حکم فرمایا اور غربت و افلاس کی حوصلہ شکنی فرمائی وہاں آپ دولت کی کثرت سے بھی اندیشہ مند تھے۔آپ نے ارشاد فرمایا کہ ”میں تمھاری غربت سے اتنا مترود نہیں ہوں، جتنا کہ تمھارے تمول سے“۔ کیونکہ دولت کی کثرت انسان کو عیش پسند، بے حس اور ظالم بنادیتی ہے اور انسان ناجائز طریقہ پر جمع شدہ دولت کا اتنا ہی غلام ہوتا ہے جتنا کہ غربت سے ذلیل و خوار ہوتا ہے۔ معاشی فراغت وحفاظت کا معتدل راستہ ہی معاشرتی عدل اور حقیقی تہذیب کی راہ ہے۔ آپ نے ایسے نظام کی بنیاد رکھی جو معاشرہ کو مالدار اور نادار طبقات میں منقسم ہونے سے روکتا ہے۔

آپ کی پوری حیات مبارکہ اس عظیم کام کی سرگزشت ہے جس نے مردہ و افسردہ قوم میں زندگی کی روح پھونک دی۔ آپ ان تمام قبیلوں کو وحدت بخشی جو آپس میں بر سر پیکار تھے۔ آپ نے علم و دانش کی قدرو منزلت کا اعلان کیا۔ عقلیت کی حوصلہ افزائی فرمائی۔سود کی تمام شکلوں میں ممانعت فرمائی، سرمایہ اور محنت میں اشتراک کی بنیاد رکھی، ذخیرہ اندوزی کی ممانعت فرمائی، انفردی خیرات کے ساتھ ریاستی سطح پر بھی غرباءو مساکین کی مدد کا انتظام مقرر کیا۔ منصفانہ قانون وراثت کا انتظام کیا۔بغیر محنت کی کمائی کو ممنوع فرمایا۔ مملکت کا ڈھانچہ ایسے خطوط پر استوار کیا کہ خیرات لینے والے شاذ و نادر ہوئے، امن و امان کا نظم ایسا تھا کہ ایک عورت سونے کے زیوارت کے ساتھ بلا خوف و خطر سفر کرتی ۔ عورتوں کو عزت و تکریم عطا فرمائی۔غلاموں کے ساتھ حسن سلوک کا حکم دیا اور غلامی کو ایک عارضی رواج کا تصوردیا۔

یہ سیرت مبارکہ کے فقط چند پہلو ہیں۔ جاوید غامدی صاحب فرماتے ہیں کہ یہ ہستی مبارکہ ایک دن اور مہینے کی نہیں ، وہ تو ہر دن ہر مہینے اور ہر سال کی شخصیت ہے، بلکہ صبح دم دن ڈھلے ایک ہی صدا اور ایک ہی نغمہ اشھد ان لا الہٰ الّا اللہ ، اشھد ان محمداََ رسول اللہ۔ تاقیامت انسانیت پیغمبر اسلام کی ممنون و مشکور ہے ۔ لاکھوں درو د و سلام آپ پر۔

پورے قد سے میں کھڑا ہوں تو یہ تیرا ہے کرم

مجھ کو جھکنے نہیں دیتا ہے سہارا تیرا

اب بھی ظلمات فروشوں کو گلا ہے تجھ سے

رات باقی تھی کہ سورج نکل آیا تیرا

تجھ سے پہلے کا جو ماضی تھا، ہزاروں کا سہی

اَب جو تا حشر تک فردا ہے تنہا تیرا


ای پیپر