Introducing ،Instagram Lite ، slow internet،mobile
11 مارچ 2021 (11:11) 2021-03-11

نیویارک : اب سست رفتار انٹرنیٹ اور موبائل  کے لیے ' انسٹاگرام   لائٹ 'متعارف کروا دیا گیا ہے ۔

تفصیلات کے مطابق اس سے قبل کم سٹورئج رکھنے والے   موبائل فونز میں   انسٹاگرام استعمال کرنا  ممکن نہیں تھا ۔جس کے  لیے انسٹاگرام  کی جانب سے  سے اب   ' انسٹاگرام   لائٹ '  ایپلی کیشن کو متعارف کیا گیا ہے ۔

اس ایپ کو موبائل میں  ڈونلڈ کرنے کے لیے صرف' 2 ایم بی 'کی سٹوریج  چاہیے ہو گی ۔' انسٹاگرام   لائٹ ' کو 170 ممالک میں  متعارف کرویا گیا ہے ۔

فیس بک نے بدھ کے روز کہا تھا کہ وہ 170 ممالک میں انسٹاگرام کا " لائٹ" ورژن لانچ کررہا ہے جس کی وجہ سے ناقص انٹرنیٹ والے لوگوں کو فوٹو اور ویڈیو شیئرنگ سوشل نیٹ ورکنگ سروس تک رسائی حاصل ہوگی۔

انسٹاگرام لائٹ اینڈروئیڈ پر مبنی فونز کے لئے دستیاب ہوگا اور روایتی ورژن سے کم بینڈوتھ کی ضرورت ہوگی۔

ایپ میں خود صرف 2MB کی ضرورت ہے - انسٹاگرام کے لئے 30MB کے مقابلے میں - اور 2G نیٹ ورک پر بھی چلتا ہے ، جس سے ہندوستان ، افریقہ ، ایشیا اور لاطینی امریکہ کے کچھ حصوں میں صارفین کو انٹرنیٹ تک رسائی حاصل کرنے کی سہولت ملتی ہے۔

یہ وہ بازار ہیں جہاں سب سے زیادہ ضرورت ہے۔ "تل ابیب میں فیس بک کے پروڈکٹ مینیجمنٹ کے ڈائریکٹر ٹیج ہدر نے کہا ، جہاں ایپ بڑی حد تک تیار کی گئی تھی۔

اس میں بہت کم اعداد و شمار کا استعمال ہوتا ہے لہذا اگر آپ کے پاس ایک چھوٹا ڈیٹا پیکیج ہے تو جب آپ خدمت استعمال کرتے ہیں تو آپ ختم نہیں ہوتے ہیں۔ "لیکن اس کا مقصد یہ ہے کہ ہم انسٹاگرام پر اپنے تجربے کی وسعت دیں۔" 

اسرائیل میں فیس بک کے آر اینڈ ڈی کے سربراہ ، ہدار نے کہا کہ 170 ممالک مکمل عالمی لانچ کی نمائندگی نہیں کرتے تھے ، لیکن یہ راستے  میں ایک قدم ہے۔

انہوں نے نوٹ کیا کہ مختصر ویڈیو کلپس بنانے اور بانٹنے کے لئے ٹی وی اور ریلوں کے علاوہ - انسٹاگرام لائٹ نے انسٹاگرام کی اہم خصوصیات کو برقرار رکھا ہے۔

خود فیس بک کا ایک لائٹ ورژن عالمی سطح پر پانچ سالوں سے دستیاب ہے۔ لائٹ ورژن کے علاوہ ، تل ابیب میں فیس بک نے افریقی ، ایشیا ، اور جنوبی امریکہ کے 20 ممالک تک انٹرنیٹ تک رسائی لانے کے لئے ایکسپریس وائی فائی سروس بھی تیار کی۔

ان کی ٹیم اب فیس بک کے ڈیجیٹل پرس پر کام کر رہی ہے۔ "آپ کے پاس قریب 2 بلین افراد ہیں جن کی بینکوں اور مالی خدمات تک رسائی یا کوئی محدود رسائی نہیں ہے اور ان دسیوں اربوں ڈالر صرف فیسوں کے لئے خرچ کیے جارہے ہیں جو تارکین وطن کو اپنے گھر والوں کو واپس بھیجنا چاہتے ہیں۔


ای پیپر