لاہور ہائیکورٹ کا حنیف عباسی کو رہا کرنے کا حکم 
11 اپریل 2019 (18:18) 2019-04-11

لاہور : ایفی ڈرین کیس میں لاہور ہائیکورٹ نے (ن) لیگ کے سابق ایم این اے حنیف عباسی کی سزا معطل کر دی‘ عدالت نے لیگی رہنما کی ضمانت منظور کرتے ہوئے رہا کرنے کا حکم دے دیا ۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائیکورٹ نے جسٹس عالیہ نیلم کی سربراہی میں 2 رکنی بنچ نے فیصلہ سنایادرخواست میں موقف اپنایا گیا کہ انسداد منشیات عدالت نے فیصلے میں اہم قانونی نکات نظر انداز کیے، کیس میں نامزد دیگر 7 ملزمان کو رہا کر دیا گیا ہے، درخواست گزار کیخلاف کیس سیاسی بنیادوں پر بنایا گیالاہور ہائیکورٹ کے 2 رکنی بنچ نے ایفی ڈرین کیس میں سزا یافتہ (ن)لیگی رہنما حنیف عباسی کی درخواست ضمانت پر سماعت کی عدالت نے حنیف عباسی کے وکلا کے دلائل سننے کے بعد ایفی ڈرین کوٹا کیس میں حنیف عباسی کی سزا معطل کرتے ہوئے درخواست منظور کرلی۔ عدالت کی جانب سے روبکار جاری ہونے کے بعد حنیف عباسی کو کوٹ لکھپت جیل سے رہا کردیا جائے گا۔

ادویات بنانے والی کمپنیوں کو ایفیڈرین کی الاٹمنٹ میں ہوشربا بے ضابطگی کی باز گشت پہلی مرتبہ مارچ 2011 میں سنی گئی جب اس وقت کے وفاقی وزیر مخدوم شہاب الدین نے اسمبلی کو بتایا کہ مکمل تحقیقات کے بات یہ سامنے آئی ہے کہ ایفیڈرین کی مقرر کردہ مقدار سے کئی گنا زیادہ مقدار کی غیر قانونی طور الاٹمنٹ کی گئی ہے۔

صرف دو کمپنیوں کو 9 ہزار کلو گرام ایفیڈرین الاٹ کی گئی جب کہ زیادہ سے زیادہ مقدار 5 سو کلو گرام ہے وفاقی وزیر نے اس بات کا انکشاف رکن اسمبلی کے سوال کے جواب میں کیا تھا جس پر اس وقت کے چیف جسٹس چوہدری محمد افتخار نے از خود نوٹس لیا۔واضح رہے کہ گزشتہ سال راولپنڈی کی انسداد منشیات عدالت کے جج سردار محمد اکرم خان نے ایفی ڈرین کوٹا کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے (ن)لیگ کے رہنما حنیف عباسی کو عمر قید کی سزا سنائی تھی جب کہ دیگر 7 ملزمان کو شک کی بنا پر بری کردیا گیا تھا۔


ای پیپر