جے آئی ٹی نے مکاری سے حقائق چھپائے : نواز شریف
11 اپریل 2018 (14:17) 2018-04-11


اسلام آباد:پاکستان مسلم لیگ (ن) کے قائد سابق وزیراعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ جس الزام پر منتخب وزیراعظم کو نکال دیا اس کا کوئی ثبوت نہیں ملا‘ واجد ضیاء کو بھی کہنا پڑا کہ نواز شریف کی تنخواہ کے بارے میں کوئی ثبوت نہیں ملے‘ یہ فراڈ ہے اور مجھ سے انتقام لینے کا مقدمہ ہے‘ جے آئی ٹی نے مکاری سے وہ حقائق چھپائے جو ہمارے حق میں جاتے تھے‘ جے آئی ٹی کے تین ہیرے ہماری سیاسی مخالفین ہیں‘ جے آئی ٹی کے ہیرے چن چن کر لانے کا مقصد اپنی من پسند رپورٹ بنوانا تھا


احتساب عدالت میں پیشی کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیر اعظم نواز شریف نے کہا کہ ایک ایک کرکے جے آئی ٹی رپورٹ کے پول کھل رہے ہیں۔ جے آئی ٹی نے ان حقائق کو چھپایا جو ہمارے حق میں جاتے تھے۔ جے آئی ٹی والے بھی پکڑے گئے ہیں۔ واجد ضیاء کے بیان سے چیزیں واضح ہوگئی ہیں۔ انہوں نے ایک طرح سے ہمیں سرٹیفکیٹ دیا ہے۔ واجد ضیاء کو کہنا پڑا کہ نواز شریف کی تنخواہ کے بارے میں ہمارے پاس کوئی ثبوت نہیں ہے۔ جس الزام پر منتخب وزیراعظم کو نکال دیا اس کا بھی ثبوت نہیں ملا۔ اگر کوئی ثبوت ہی نہیں تو پھر یہ نواز شریف سے انتقام لینے کا مقدمہ ہے۔ نواز شریف کو ناجھکنے کی سزا دی گئی ہے۔ جے آئی ٹی کے چھ ہیرے جو تلاش کئے گئے ان میں سے منگی کو چھوڑ کر تین ہیرے ہمارے بدترین مخالف ہیں۔ ایک آئی ایس آئی اور ایم آئی کا نمائندہ تھا۔ میرا کوئی دہشت گردی کا مقدمہ تو نہیں تھا اور نہ میں نے پاکستان کے مفاد کے خلاف کوئی کام کیا تو آئی ایس آئی اور ایم آئی کو بیچ میں ڈالنے کی ضرورت کیا تھی۔ واجد ضیاء صاحب نے اپنے کزن کو قومی پیسہ دیا جس کا انہیں جواب دینا ہوگا۔ قوم جواب آپ سے لے گی اور آپ کا احتساب کرے گی۔ جے آئی ٹی کے ہیرے چن چن کر لانے کا مقصد اپنی من پسند رپورٹ بنوانا تھا۔ قبل ازیں نواز شریف نے احتساب عدالت میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ چھ ماہ میں فیصلے کا نہیں سزا کا کہا گیا تھا اڈیالہ جیل کی صفائیاں ہورہی ہ یں کیا جیل والوں کو پہلے سے علم ہوگیا ہے کہ کوئی شخص آرہا ہے۔ 2014 کے دھرنے کے بعد اسلام آباد کو لاک ڈائون کیا گیا لاک ڈائون کے علاوہ دھرنے بھی دیئے گئے ہم چاہتے ہیں کہ نیب الیکشن سے پہلے امیدواروں پر دبائو نہ ڈالے۔ انہوں نے کہا کہ کیا سمجھتے ہیں ج نوبی پنجاب میں جنہوں نے پارٹی چھوڑی وہ ایسے ہی چلے گئے نسلوں سے ہمارے ساتھ رہنے والے وفاداریاں تبدیل نہیں کریں گے۔ الیکشن میں وفاداریاں تبدیل کرنے والوں کو عوام ووٹ نہیں دیں گے۔ جنوبی پنجاب میں شہباز شریف نے مثالی کام کئے ہیں ہسپتالوں‘ ٹرانسپورٹ اور دیگر شعبوں میں ریکارڈ کام کئے گئے ہیں۔ چوہدری نثار کے بارے میں قوم سب جانتی ہے۔ نیب قوانین غیر موثر کرنے کے حوالے سے وزیراعظم سے بات ہوئی ہے۔


انہوں نے کہا کہ میرے خلاف دہشت گردی کا مقدمہ نہیں تھا تو جے آئی ٹی میں آئی ایس آئی اور ایم آئی کے نمائندے کیوں شامل کئے گئے؟ ، نیب قوانین غیر موثر کرنے کے حوالے سے وزیراعظم سے بات ہوئی ہے‘ چاہتے ہیں نیب الیکشن سے پہلے امیدواروں پر دبائو نہ ڈالے‘ نسلوں سے ہمارے ساتھ رہنے والے وفاداریاں تبدیل نہیں کرینگے‘ جنوبی پنجاب میں شہباز شریف نے ریکارڈ کام کئے ہیں‘ چوہدری نثار کے بارے میں قوم سب جانتی ہیں‘ وفاداریاں تبدیل کرنے والوں کو عوام الیکشن میں مسترد کردینگے ۔


ای پیپر