خلیجی ممالک سے جعلی کورونا رپورٹس پر مسافروں کے پاکستان آنے کا انکشاف
سورس:   فوٹو: بشکریہ ٹوئٹر
10 May 2021 (23:45) 2021-05-10

لاہور: خلیجی ممالک سے پاکستان آنے والے بعض مسافروں کی کورونا ٹیسٹ رپورٹس جعلی ہونے کا انکشاف ہوا ہے جبکہ پشاور قرنطینہ سے متعدد مسافر فرار بھی ہوئے۔ 

سول ایوی ایشن (سی اے اے) ذرائع کے مطابق خلیجی ممالک سے جعلی رپورٹس پر 31 مسافر پشاور اور 11 کراچی پہنچے جبکہ پشاور قرنطینہ سینٹر سے 28 اور کراچی سے 6 مسافر فرار ہو گئے۔

سول ایو ی ایشن کا کہنا ہے کہ ٹریک ایپ میں رجسٹرڈ نہ ہونے والے مسافر پاکستان سفرکرنے کے اہل نہیں، تمام ائیرلائنز ہدایات پر سختی سے عملدرآمد کرائیں جبکہ خلاف ورزی کی صورت میں ائیرلائنز پر مالی جرمانے سمیت دیگر سزائیں دینے کا حق محفوظ رکھتے ہیں، سول ایوی ایشن اتھارٹی نے پاکستان میں کام کرنے والی تمام ائیر لائنز کے لیے نئی ہدایات بھی جاری کی ہیں۔

سول ایوی ایشن کا کہنا ہے کہ جعلی ٹیسٹ رپورٹ والوں نے اپنے ساتھ سفرکرنے والے دیگر مسافروں کو بھی خطرے میں ڈالا، ان واقعات سے کورونا وباءپر قابو پانے کی کوششوں کو بھی نقصان پہنچا، پاکستان آنے والے مسافرتصدیق شدہ لیبارٹریز سے ہی کورونا ٹیسٹ کرائیں،درست کیو آر کوڈ کے بغیر منفی رپورٹ قبول نہیں کی جائے گی۔ 

دوسری جانب متحدہ عرب امارات (یو اے ای) سمیت کویت اور تھائی لینڈ نے پاکستان سمیت چار ممالک سے آنے والے مسافروں پر پابندی عائد کر دی ہے۔ کویت اور تھائی لینڈ نے کورونا وائرس کے پیش نظر پاکستان، بنگلہ دیش، نیپال اور سری لنکا سے آنے والے مسافروں پر پابندی عائد کی ہے اور ان ممالک سے کوئی بھی شخص کویت اور تھائی لینڈ نہیں جا سکے گا۔ 

قبل ازیں متحدہ عرب امارات نے آج کورونا وبا کے باعث پاکستان، نیپال اور سری لنکا سے آنے والے مسافروں پرپابندی لگانے کا اعلان کیا جس کا اطلاق بدھ 12 مئی کو رات 12 بجے سے ہو گا۔ یو اے ای حکام کی جانب سے جاری ہدایت نامے میں کہا گیا کہ کارگو فلائٹس، اماراتی شہریوں، سفارتی مشنز، سرکاری وفود، گولڈن ویزا ہولڈرز اور تاجروں کے طیاروں کو پابندی سے استثنیٰ حاصل ہو گا۔ 


ای پیپر