اورنج ٹرین پر اربو ں لگا دئیے ،لاہور میں آلودہ پانی کا مسئلہ حل نہیں کیا ،چیف جسٹس ثاقب نثار
10 مارچ 2018 (16:02)

لاہور :کراچی کے بعد چیف جسٹس ثاقب نثار پنجاب میں بھی ان ایکشن ،لاہور رجسٹری میں آلودہ پانی کے خلاف از خود نوٹس لیتے ہوئے سماعت کے دوران شہباز شریف کی سرزنش کی ۔انہوں نے کہا اربوں اورنج ٹرین پر لگا دئیے گئے لیکن لاہور میں آلودہ پانی کا مسئلہ حل نہیں کیا گیا ۔10سال سے حکومت میں ہیں لیکن ایک پانی کا مسئلہ ہے کو آج تک حل نہیں ہو سکا ۔


چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ یہ لوگوں کی زندگی اور موت کا معاملہ ہے، اورنج ٹرین پر اربوں روپے لگا دیئے، ادھر دھیان نہیں کہ کیا ہورہا ہے، اورنج ٹرین بنائیں، موٹروے بنائیں، عوام کی صحت کی طرف بھی توجہ دی جائے، لگتا ہے عوامی صحت حکومت کی ترجیح ہی نہیں، وزیراعلیٰ، چیف سیکریٹری اور واسا کے لوگ بتائیں کہ اس طرف توجہ کیوں نہیں دی جارہی۔ جسٹس ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ میں اسپتالوں میں کیوں نا جاو¿ ں ، کسی نے تو ان لوگوں کا حال دیکھنا ہے، لوگ کس طرح کراہ رہے ہیں، کتنی بار وزیراعلیٰ یا افسر اسپتالوں میں گئے ہیں، جن کا یہ کام ہے وہ نہیں کریں گے کوئی تو کرے گا، پاکستان میں گڈ گورننس کا یہ حال ہے۔

چیف جسٹس نے چیف سیکریٹری سے استفسار کیا کہ اورنج ٹرین پر کتنے لگیں گے، اس پر چیف سیکریٹری نے بتایا کہ منصوبے پر 180 بلین روپے لاگت آئے گی۔ چیف سیکریٹری کے بتانے پر اعتزاز احسن نے لقمہ دیا 235 بلین روپے خرچ آئے گا۔ جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ یہ حالت ہے کہ ڈیٹ شیٹ پر بھی وزیراعلیٰ کی تصویریں چھپتی ہیں، کارکردگی دکھانی ہے تو کام کرکے دکھائیں، تصویریں چھپوا کر نہیں، شہباز شریف کو تصویریں چھپوانے کا زیادہ شوق ہے تو ہمیں پیش ہو کر وضاحت کریں۔چیف جسٹس نے کہا کہ یاد رکھیں ہم نیب کو پنجاب حکومت کے اشتہارات کی تحقیقات کا حکم دے سکتے ہیں۔

چیف جسٹس کے کیس کی سماعت پر وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال نے اپنے ٹوئٹ میں ردعمل بھی دیا اور چیف جسٹس سے کہا کارکردگی کا جائزہ لینا عوام کا کام ہے عدلیہ کا نہیں۔


ای پیپر