ففتھ جنریشن وار اور افغانستان
10 جون 2021 (12:06) 2021-06-10

ہمارے ارد گرد بہت کچھ ہو رہاہے مگر ہمیں اس سے کوئی غرض نہیں۔ہم کہتے ہیں کہ ہماری زمینیں سونااگل رہی ہیں مگرہمارے ذہن بنجر ہیں۔ بمپر کراپ ہونے کے باوجود شہری اناج اور کسان پیسے کو ترس رہے ہیں۔ عجیب قسم کی خود غرضی ہے یا ہماری حالت ان نشئی جیسی ہے جسے نشہ مل جائے تو اس کے لیے سب کچھ ٹھیک ہے ۔اسے لیٹے لیٹے آسمان سے آگے بھی نظر آ جاتا ہے مگر دیوار کے پار کیا ہو رہا ہے اس کی خبر نہیں ہوتی۔ ملک ترقی کر رہا ہے اور ہم دنیا کی سب سے ذہین قوم ہیں کے نعرے مستانہ بلند ہو رہے ہیں۔ یہ حال کسی ایک طبقے کا نہیں ہے بلکہ سب ہی اس کا شکار ہیں۔ عقل کے بجائے ہم دل سے سوچنے کے عادی ہیں۔اچھل اچھل کر ہم ہر اس مسئلہ پر بحث و تمحیص شروع کر دیتے ہیں جس کی الف ب کا ہمیں علم نہیں۔ اپنے تئیں ہم پاکستان کی خدمت کر رہے ہیں ، پاکستان کا مقدمہ دنیا میں لڑ رہے ہیں اور دنیا کو دکھا رہے ہیں کہ ہماری ذہنی سطح کیا ہے، ہمارے خیالات کی گہرائی کا کیاعالم ہے۔ سوشل میڈیائی صحافت کی کرامات سامنے آ رہی ہیں۔اس سوشل میڈیا پر وہی کامیاب ہے جس کے منہ پر کتا بندھا ہوا ہے۔

ففتھ جنریشن وار دماغو ں سے لڑی جاتی ہے مگر سوشل میڈیا پر جو لوگ اودھم مچا رہے ہیںان میں یہ اہلیت کہاں ہے کہ وہ اس کو سمجھ سکیں۔انفارمیشن کی جنگ ہم ڈس انفارمیشن یامس انفارمیشن سے لڑ رہے ہیں۔یہ اخلاقی اور ثقافتی جنگ بھی ہے جس کے تحت دنیا کے خیالات کو بدلا جاتا ہے۔ دنیا کو وہ چہرہ دکھایا جاتا ہے جو ہم اسے دکھاناچاہتے ہیں مگر اس کے لیے جو ترکیبیں استعمال ہوتی ہیں اس سے ہم نا بلد ہیں۔پانچویں جنریشن کی جنگ اصل میں ٹیکنالوجی سے لیس افرادی قوت کی جنگ ہے ۔ ٹیکنالوجی سے ہمارا کوئی واسطہ نہیں اور افرادی قوت کے پاس یہ اہلیت نہیں کہ وہ سچ اور جھوٹ کو چھان سکے۔کبھی ہم نے یہ سوچنے کی کوشش ہی نہیں کی کہ بنگالی ہمارے ساتھ کیو ں نہیں رہے اسے ہم بھارت کی سازش ہی قرار دیتے رہے۔ کس سے کہا ںغلطی ہوئی اس کا جائزہ نہیں لیا گیا۔ کون ذمہ دار تھا تعین نہیں کیا گیا تو سزا کسے ملتی؟ حیرت اس پر ہے کہ پوری کی پوری قوم کو ہم نے غدار قرار دے دیا حالانکہ وہ ہم سے زیادہ تعلیم یافتہ تھے، تحریک پاکستان میں ہم سے زیادہ جوش و جذبے سے حصہ لیا ۔ پاکستان کو آزاد کرایا مگر اس گھٹن زدہ ماحول میں وہ زیادہ دیر نہیں رہ سکے۔آج وہ اس خطے میں سب سے تیزی کے ساتھ ابھرنے والی قوم ہے۔ ترقی کی رفتا ر میں اس نے بھارت کو بھی پیچھے چھوڑ دیا ہے۔کئی دہائیوں تک ہم نے افغانوں کی میزبانی کی ، اپنے منہ کا نوالا انہیں کھلایامگر آج وہ ہمیں گالیاں دے رہے ہیں۔                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                    

افغانو ں کی جنگ ہم نے لڑی، ہمارے لوگ شہید ہوئے ، دہشت گردی کا شکار ہم ہوئے، ہماری معیشت تباہ ہو گئی اور جن کے لیے یہ سب کچھ کیا وہ اسے تسلیم کرنے کے لیے تیار نہیں ہیں۔ ہمیں اپنے اندر وہ خامیاں تلاش کرنا ہیں جو اس کی بڑی وجہ ہے۔ افغان ایک بار پھر سے امریکہ سے آزاد ہو رہے ہیں، امریکی فوجی دستے وہاں سے نکل رہے ہیں ۔ ان حالات ہمیں پھونک پھونک کر قدم رکھنا ہے۔امریکی افغانستان سے نکل کر پاکستان میں قدم جمانے کے لیے اڈے مانگ رہے ہیں۔ حکومت مسلسل انکار کرنے کے بیانات دے رہی ہیں اور امریکی حکام یہ تواترسے کہہ رہے ہیں کہ پاکستان سے  فوجی اڈوں کی بابت بات چیت ہو رہی ہے۔حکومت نے پالیسی بیان جاری کر دیا ہے مگر یو ٹرن کی عادت کی وجہ سے دل میں کئی وسوسے پیدا ہو رہے ہیں۔ امریکہ کے افغانستان سے نکلنے کی صورت میں افغان ایک بار پھر سے گتھم گتھا ہو ں گے۔۔ ہم نے کس کا ساتھ دینا ہے ، اس نظام کا جو امریکی باقیات کہلاتا ہے یا وہ طالبان جن سے امریکی معاہدہ کر کے نکل رہے ہیں۔ کیا افغان فوج میں یہ اہلیت موجودہے کہ وہ طالبان کا مقابلہ کر سکے۔ گزشتہ ایک مہینے کے دوران افغانستان میں بد امنی ، بم دھماکہ اور لاقانونیت میں اضافہ ہو چکا ہے۔ ففتھ جنریشن وار فیئر دلوں اور دماغوں کو جیتنے کی جنگ ہے۔ دلوں کو جیتنے کا کام ہم سے ہو نہیں سکا، بنگال میں بھی ہم ناکام ہوئے اور افغانستان میں بھی۔ دلو ں کو جیتے بغیر ہم دماغوں کو کیسے جیت سکیں گے؟ ہونا تو یہ چاہیے تھا کہ کئی دہائیوں تک افغانوں کی میزبانی کرنے والی قوم کو ہم اپنا دوست بنا چکے ہوتے۔ یہاں سے افغانستان جانے والے ہمارے سفیر ہوتے، جو بچے ہماری تعلیمی ادارو ں اور یونیورسٹیو ں میں تعلیم حاصل کر چکے ہیں وہ دل اور دماغ مسخر کرنے میںہماری مدد کرتے ۔ کیا وجہ ہے کہ کابل میں پاکستان سے زیادہ بھارت کی آواز کو سنا جاتا ہے،ایران کے ساتھ ان کے معاملات خراب نہیں ہوئے، روس وہاں اپنے قدم جما رہاہے اور چین کی سرمایہ کاری بھی ہو رہی ہے۔  ایک ہم ہی کیوں ہیں جنہیں برائی کی جڑ سمجھا جا رہا ہے۔ہمارے بیانیہ میں کوئی غلطی ہے یا ہم نے جو کیا یا جو کر رہے ہیں اسے صحیح طور پر انہیں بتا نہیں سکے۔یہ کمیونیکشن کا error ہے تو اس کو درست کرنا چاہیے۔ انفارمیشن کو ہم ایک ہتھیار کے طور پر لے رہے ہیں اور یہ بات درست بھی ہے کہ انفارمیشن سب سے بڑی طاقت ہے لیکن کمیونیکیشن میں ہم مار کھا رہے ہیں۔ غلطی ان کی نہیں ہے کہ ہماری بات کو نہیں سمجھ رہے ہماری قربانیوں سے صرف نظر کر رہے ہیں غلطی ہماری ہے کہ ہم ان تک یہ بات نہیں پہنچا سکے کہ ہم نے ان کے لیے کیا کیا ہے؟ ہم یہ باور کرانے میں کوتاہی برت رہے ہیں کہ افغانستان آپ کا گھر ہے اسے آپ نے چلانا ہے، ہم آپ کے گھر میں مداخلت نہیں کریں گے ،ہاں یہ ضرور ہے کہ اگر آپ سمجھتے ہیں کہ ہم اس عمل میںآپ کی مدد کریں تو ہم حاضر ہیں۔

کابل کی انتظامیہ کا جھکائو بھارت کی طرف ہے وہ اس کی زبان بولتی ہے مگر ہمارے لوگ کہاں ہیں وہ کیو ںنہیں سامنے آتے۔ کہیں ایسا تو نہیں کہ ہم نے کابل انتظامیہ سے تعلق کو استوار کرنے کی کوشش نہیں کی۔ اشرف غنی کی حکومت کابل اور افغانستان کے چند اضلاع تک محدود ہے اب بھی افغانستان کا بڑا حصہ طالبان کے زیر اثر ہے۔امریکی نکلیں گے تو منظر کیا ہو گا۔ وہ عراق کی طرح وہاں سے فوج نکال کر اپنی کٹھ پتلی انتظامیہ کے ذریعے عراق کو کنٹرول کرنے کا تجربہ کر چکے ہیں وہی تجربہ وہ یہاں کرنے کی کوشش کریں گے۔ ایران میں وہ جا نہیں سکتے، چین انہیں اڈے کیوں دے گا اور روس وسطی ایشیا میں اس کے قدم جمانے کو گناہ عظیم سمجھے گا، کھلے سمندر میں رہ کر امریکی افغانستان کو کنٹرول کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہے ۔ان حالات میں صرف پاکستان اور بھارت ہے جو ان کی مد د کر سکتا ہے۔ تاریخ کے اس نازک موڑ پر ہمیں اپنے پتے اس ہوشیاری سے کھیلنا ہوں گے کہ ہم کسی کے آلہ کار بننے کی بجائے اپنی مفادات کو سمجھیں۔ ڈالرو ں سے زیادہ ہمیں لوگوں کے دلوں اور دماغوں کو جیتنے کی ضرورت ہے اور ففتھ جنریشن وار فیئر میں یہ عنصر سب سے اہم ہے۔


ای پیپر