Indian farmer protest, shame, British Prime Minister, Boris Johnson
10 دسمبر 2020 (14:38) 2020-12-10

لندن: برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن نے لاعلمی کی انتہا کر دی ، مودی سرکار کے خلاف کسانوں کے احتجاج کو پاکستان اور بھارت کے درمیان تنازع قرار دے کر اپنا مذاق بنوالیا۔

تفصیلات کے مطابق برطانوی پارلیمنٹ کے رکن سردار تنمن جیت سنگھ نے پارلیمنٹ کی توجہ بھارت میں کسانوں پر ہو رہے مظالم کی طرف دلائی ، تنمن جیت سنگھ نے کہا کہ بھارتی پنجاب اور مختلف شہروں میں کسانوں کے پُر امن مظاہرین پر آنسو گیس کا استعمال کیا جا رہا ہے۔

اس معاملے پر انہوں نے برطانوی وزیراعظم بورس جانسسن کو فوری طور پر بھارتی وزیراعظم نریندر مودی سے بات کرنے کی درخواست کی ، جواب میں برطانوی وزیراعظم نے کہا کہ انہیں پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی کا اندازہ ہے اور وہ چاہتے ہیں کہ دونوں ممالک اپنے مسائل کو مذاکرات کے ذریعے پرُامن طور پر حل کریں۔

واضح رہے کہ بھارت میں مودی سرکار کے خلاف کسانوں کا احتجاج جاری ہے، احتجاج میں ریلوے ورکرز، ٹرک ڈرائیورز ، اساتذہ اور دیگر یونینز کی جانب سے کسانوں کی حمایت کی گئی ہے۔

بھارت میں پہیہ جام ہڑتال کے باعث ٹرینوں کو بھی روک دیا گیا ، بڑی تعداد میں لوگ سڑکوں پر نکل آئے ، بھارت کی دو درجن سے زائد سیاسی جماعتیں بھی کسانوں کے احتجاج کا حصہ بن گئی ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق ہڑتال کے موقع پر لکھنو میں دفعہ 144 نافذ کر دی گئی ہے۔ جبکہ پولیس نے دلی کی طرف آنے والی تمام سڑکیں سیل کر دیں گئی ہیں۔


ای پیپر