اب کشمیر ی لڑکیوں سے شادی کوئی مسئلہ نہیں:بھارتی وزیر اعلیٰ
10 اگست 2019 (17:57) 2019-08-10

سری نگر :کشمیر کی کشیدہ صورتحال نے مسلمانوں میں خوف و ہراس پیدا کر دیا ہے وہیں بھارتی ریاست ہریانہ کے وزیر اعلیٰ منو ہر لال نے کشمیر کی گوری لڑکیوں سے شادی کا کھلم کھلا اعلان بھی کر دیا ۔

تفصیلا ت کے مطابق بھارت اپنے ناپاک عزائم پورے کرنے پر تلا ہوا ہے ،بھارت کو خود کو اسرائیل سمجھ کر کشمیر میں فلسطینی جیسی تاریخ رقم کرنا چاہتا ہے ،فتح باد میں ’بیٹی بچاو¿ مہم‘ سے خطاب کرتے ہوئے بھارتی ریاست ہریانہ کے وزیر اعلیٰ کا کہنا تھا کہ ہمارے وزیر اکثر کہتے ہیں کہ وہ بہار سے بہو لائیں گے، ان دنوں لوگ کہہ رہے ہیں کہ اب کشمیر کا راستہ صاف ہوگیا ہے، اب ہم لوگ وہاں سے بہو لائیں گے۔

بی جے پی کی جانب سے مقبوضہ وادی کشمیر کو حاصل نیم خودمختاری کو ا?ئین میں تحفظ دینے والی شق 370 کے خاتمے کو چند گھنٹے بھی نہیں گزرے ہیں کہ جنونی ہندوو¿ں کے مکروہ عزائم سامنے آنا شروع ہو گئے ہیں جس کی وجہ سے مقبوضہ وادی چنار سمیت مسلمانوں میں سخت خوف و ہراس پیدا ہوگیا ہے۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹس پر کچھ روز سے ایک ویڈیو وائرل ہے جس میں بی جے پی سے تعلق رکھنے والے اترپردیش کے رکن اسمبلی پارٹی کارکنان کو آئین کی شق 370 کے خاتمے کی نوید دیتے ہوئے بتاتے ہیں کہ اب ان کے لیے گوری کشمیری لڑکیوں سے شادی کوئی مسئلہ نہیں ہے۔

رکن پارلیمنٹ نے حکمراں جماعت کے کارکنان سے کہا کہ وہ اب مقبوضہ کشمیر جا کر پلاٹس خریدنے اور شادیاں رچانے کے لیے آزاد ہیں کیونکہ ان کے راستے میں کوئی رکاوٹ نہیں ہے،لیکن بھارت کو یہ پتہ نہیں کہ کشمیر کی ماﺅں بہنوں اور بیٹیوں کی حفاظت کرنے والا پاکستان موجود ہے اور وہ اپنے ان ناپاک عزائم میں کبھی کامیاب نہیں ہو سکے گا ۔


ای پیپر