تیل کی قیمتوں میں 20 روپے تک کمی کا حیران کن ردوبدل؟
09 مارچ 2020 (20:44) 2020-03-09

اسلام آباد :کرونا وائر س کی وجہ سے پوری دنیا میں تیل کی مانگ میں واضح کمی ہو گئی ہے ،تمام ممالک نے سفر محدود کر دئیے ہیں ،جس کی وجہ سے سیاحت اور ائیر لائنز کا شعبہ شدید متاثر ہوا اور تیل کی مانگ میں کمی واقع ہو گئی ،جس کی وجہ سے عالمی منڈی میں خام تیل کی قیمتیں گذشتہ چند برسوں میں کم ترین سطح پر آگئی ہیں۔

عالمی منڈی میں خام تیل کی قیمتوں میں تیزی سے کمی کا سلسلہ اس وقت شروع ہوا جب تیل پیدا کرنے والے اہم ملک روس نے سعودی عرب کی قیادت میں تیل پیدا کرنے والے 14 ممالک کی تنظیم اوپیک کا مطالبہ منظور کرنے سے انکار کردیا،اوپیک کا مطالبہ تھا کہ کورونا وائرس کے باعث دنیا بھر کی صنعتیں متاثر ہوئی ہیں، خاص طور پر سیاحت اور ائیر لائنز کا شعبہ شدید متاثر ہوا ہے جس کے باعث تیل کی مانگ میں بھی کمی آئی ہے۔

سعودی عرب نے روس سے مطالبہ کیا کہ وہ تیل کی پیداوار میں کمی لے آئے تاکہ قیمتوں کو مستحکم رکھا جاسکے لیکن روس کے انکار کے بعد سعودی عرب اور روس میں تیل کی قیمتوں پر نیا تنازعہ کھڑا ہو گیا ہے ،جنگ چھڑنے کے بعد دوران ٹریڈنگ برینٹ کروڈ کی قیمت 20 فیصد سے زائد کی کمی کے ساتھ 35.36 ڈالر فی بیرل کی سطح پر آگئی جب کہ امریکی خام تیل کی قیمت 22 فیصد تک کمی کے بعد 31.79 ڈالر فی بیرل پر آگئی ۔

امریکی سرمایہ کار کمپنی گولڈمین ساکس نے پیش گوئی کی ہے کہ تیل کی قیمتیں 20 ڈالر فی بیرل تک گرسکتی ہیں،دوسری جانب ماہرین کے مطابق موجودہ صورتحال برقرار رہی تو پاکستان میں ڈیزل اور پیٹرول کی قیمت20 روپےفی لیٹر تک کم ہو سکتی ہیں،ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر تیل کی قیمتیں موجودہ کم سطح پربرقرار رہیں تو معقول ٹیکس وصولیوں کے ساتھ یکم اپریل سے پاکستان میں پیٹرول اور ڈیزل کی قیمت باآسانی20 روپے لیٹر تک کم کی جا سکتی ہے۔


ای پیپر