Hameed Ullah Bhatti, Urdu, Nai Baat Newspaper, e-paper, Pakistan
09 جون 2021 (11:34) 2021-06-09

قیامِ پاکستان سے ہی مختلف قسم کے حادثے ہماری تاریخ کا حصہ ہیں لیکن افسوسناک امر یہ ہے کہ آج تک کسی حادثے کی وجوہات کا تعین کرنے کی کوشش ہی نہیں ہوئی اسی وجہ سے کسی ذمہ دار کو سزا نہیں مل سکی یہ غیر ذمہ داری اور لاپروائی کی انتہا ہے اور تلخ سچ یہ ہے کہ اسی غیر ذمہ داری کی بنا پر حادثے ہماری تاریخ کا حصہ بن گئے ہیں اور قیمتی جانیں ضائع ہو رہی ہیں اگر کسی ایک حادثے کی غیر جانبدارانہ انکوائری کرائی جاتی اور ذمہ داروں کو کیفرِ کردار تک پہنچایا جاتا توآج موجودہ صورتحال نہ ہوتی اور فرائض سے غفلت کا سلسلہ موقوف ہو چکا ہوتا لیکن افسوس سے کہنا پڑتا ہے کہ ہر اِدارے میں غیر سنجیدگی اور غیر ذمہ داری رائج ہے اسی بنا پر ریلوے ،پی آئی اے ، پوسٹ آفس ،پی ٹی وی ، ریڈیو،پاکستان اسٹیل ملزسمیت اکثر وفاقی اِدارے تباہی کا شکار اور خسارے میں جا رہے ہیں پھربھی ذمہ داران اپنے طرزِ عمل میں تبدیلی لانے کو تیار نہیں۔

گھوٹکی میں ڈہرکی کے قریب کراچی جانے والی ملت ایکسپریس کی کچھ بو گیاں خستہ لائن ہونے کی وجہ سے دوسرے ٹریک پر جاگریں اور دوسرے ٹریک پر آنے والی سرسید ایکسپریس اِ ن بو گیوں سے جا ٹکرائی دونوں ٹرینوں کی آٹھ بو گیاں ایک دوسرے میں دھنس جانے سے اموات میں اضافہ ہوا۔ اِس حادثے میں پچاس سے زائد مسافر جاں بحق  اور سو سے زائد زخمی ہو ئے ہیں  یہ بات صدفیصد درست ہے کہ حادثے کا زیادہ موجب خستہ حال ٹریک ہے جسے جلد بہتر بنانا اشد ضروری ہے علاوہ ازیں ملت ایکسپریس کے ڈرائیو رنے گاڑی چلانے سے قبل بوگی نمبر د س کے ہُک کی خرابی کی نشاندہی کرتے ہوئے درست کرنے کا مطالبہ بھی کیا مگر محکمہ ریلوے ایسے مطالبات کو درخوراعتنا نہیں سمجھتا بلکہ سب کی کوشش ہوتی ہے کہ ٹرین کو روانہ کریں اب محکمے کی کوشش ہے کہ حادثے کی ذمہ داری ڈرائیور پر ڈال کر معاملے کو رفع دفع کر دیا جائے لیکن ڈرائیور ز کا موقف ہے کہ تحقیقات میں ثابت ہوجائے گا کہ ہم سوئے ہوئے نہیں تھے بلکہ حادثے کی وجوہات اور ہیں مگر مٹی پائو پالیسی سے ذمہ داران کا تعین نہیں ہو رہا جب ذمہ دارکا تعین ہی نہیں ہو رہا تو کسی کو سزاخاک ملنی ہے ۔

پاکستان ہی نہیں دنیا بھر میںحادثات کے دوران جانی و مالی نقصان ہوتا ہے مگر دنیا میں حادثات کی صاف شفاف انکوائری ہوتی ہے اور پھر جو ذمہ دار ہوتا ہے اُسے اپنے کیے کی سزا بھی ملتی ہے دنیا میںاکثر حادثات کے بعد وزرا مستعفی ہوجاتے ہیں حالانکہ اُن کاعملی طورپر حادثے میں کوئی کردار نہیں ہوتا مگر پاکستان کا دنیا سے الگ ہی طریقہ کار ہے وزراء کے مستعفی ہونے کی کوئی مثال ہی نہیں اور جہاں فردوس عاشق اعوان جیسے اطلاعات کے 

صوبائی معاون خصوصی ہوں وہاں سچ تلاش کرنا ناممکن ہوتا ہے جب فردوس عاشق اعوان فرمائیں کہ اللہ کا شکر ہے رواں برس کا پہلا حادثہ ہے تو کسی اور کو کیا الزام دیا جاسکتا ہے جن کی ذہنی سطح اتنی پست ہووہاںانسانی جان کی قدروقیمت کا اندازہ لگانا مشکل نہیں ڈہرکی کے قریب قیامت خیز مناظر کے باوجود وزیرِ ریلوے ہیلی کاپٹر میں تشریف لاتے ہیں اور چشمہ لگاکر معائنہ کرتے ہیں جیسے کوئی حادثہ نہ ہواہوبلکہ تماشا ہو رہا ہو حالانکہ اگر کچھ کرنا نہیں توکسی کا مذاق اُڑانے کی بجائے حفاظتی نظام میں نقائص کی نشاندہی اور حادثے کی تحقیقات کا حکم ہی صادر کر دیتے تو بہتر تھا۔

ملک میںریل کاطویل سفر اِس وجہ سے عوام کا پسندیدہ ہے کہ یہ آرام دہ ہونے کے ساتھ کم خرچ ہے۔ ہونا تو یہ چاہیے کہ ٹرین کو روانہ کرنے سے قبل انجن ،بوگیوں کی بریکیں چیک کی جائیں پانی وبجلی کے نظام کے ساتھ ایک دوسرے سے جوڑنے کے لیے ہُک وغیرہ کی جانچ کی جائے آگ بجھانے کے آلات کی موجودگی اور درستی کو یقینی بنایا جائے افسوس کہ نقائص کی نشاندہی اور انہیں دور کرنے پر توجہ دینے سے پہلو تہی کی جاتی ہے جس کی وجہ سے راستے میں ٹرینوں کا خراب ہونا معمول بن کررہ گیا ہے اور آج حالت یہاں تک پہنچ چکی ہے کہ ٹرین پر سفر کرنا لوگ عذاب کو دعوت دینے کے مترادف سمجھتے ہیں یہی عوامی سوچ خسارے کی بڑی وجہ ہے اِس میں کوئی شائبہ نہیں کہ پاکستان میں ٹرین حادثات کی تین بڑی وجوہات ہیں اول۔یہ کہ ریلوے لائن ازکار رفتہ ہے جو ٹرینوں کی تیز رفتاری کی متحمل نہیں دوم۔انجنوں اور بوگیوں کی حالت بھی تسلی بخش نہیں جو ذرا سی رفتار بڑھنے سے ہی غیر متوازن ہو جاتی ہیں سوم۔عملہ تربیت یافتہ نہیں بلکہ سست ہے، یہ غیر تربیت یافتہ عملہ ہنگامی حالات میں فیصلہ کرنے کی قوت سے عاری ہے  اوربروقت سگنل دینے میں سُستی کا مظاہرہ کرتا ہے حکومت نے اگر فوری توجہ نہ دی تو خرابی مزید بڑھ جائے گی جو عوامی بداعتمادی میں اضافے کا باعث بن سکتی ہے۔

 افسوس کہ ریلوے کا وسیع نظام آج بھی سو سالہ پُرانے طریقہ کار کے مطابق چلایا جا رہا ہے حالانکہ دنیا میں ایسا نہیں ریل کا نظام بہتر بنانے کے لیے سی پیک کے تحت کچھ نئے منصوبے شروع ہوئے ہیں لیکن یہ محدود نوعیت کے ہیں جن سے مکمل بہتری نہیں آسکتی ضرورت اِس امر کی ہے کہ لوگوں کو باتوں سے بہلانے کے بجائے نقائص دور کرنے کی طرف توجہ دی جائے تبھی خسارے میں جانے والے ریل کے نظام پر عوامی اعتماد بحال ہو سکتا ہے موجودہ حکومت کے تین سالہ دور میں آٹھ بڑے حادثات ہوئے ہیں لیکن حکومت نے وجوہات تلاش کرنے کی بجائے بس اِتنا نوٹس لیا ہے کہ شیخ رشید کو ہٹا کر اعظم سواتی کو وزارت سونپ دی یہ مجرمانہ غفلت ہے صاف پتہ چلتا ہے کہ یہ تبدیلی بھی سیاسی مجبوری کی مرہونِ منت ہے وگرنہ آٹھ کی بجائے زیادہ حادثات بھی ہو جاتے تو حکومت کو پروا نہ ہوتی ۔

ریلوے کی تاریخ پر طائرانہ نگاہ ڈالیں تو یہ حادثات سے بھری دکھائی دیتی ہے جن میں ہزاروں بچے ،بوڑھے ،جوان اور خواتین بے موت مارے گئے مگر ذمہ داران ٹس سے مس نہیں ہوئے بلکہ حادثے کے بعد مرنے اور زخمی ہونے والوں کی مالی مدد کرنا ہی ذمہ داری سمجھ لی گئی ہے 1953میں ہونے والے ٹرین حادثے میں دوسو افراد جاں بحق ہوئے 1969میں لیاقت پور حادثے میں اسی افراد مارے گئے 13جولائی 2005میں گھوٹکی کے قریب تین ٹرینیں آپس میں ٹکرا گئیں جس کے دوران سواسو سے زائد افراد لقمہ اجل بنے جبکہ زخمی و اپاہج ہونے والوں کی تعداد تین سو سے تجاوز کر گئی گزشتہ تین برس کے دوران مسلسل ٹرین حادثے ہورہے ہیں مگر کوئی بھی ذمہ داری لینے کو تیار نہیں ستم ظریفی تو یہ ہے کہ حادثوں کا ذمہ دار بھی سابق حکمرانوں کو ٹھہرایا جا رہا ہے یہ غیر ذمہ داری اور لاپروائی کی انتہا اور مجرمانہ غفلت ہے ذمہ دار کا تعین نہ کرنااور سزادینے کی بجائے مرنے والوں کے لواحقین کو چند لاکھ تھما ناانصاف نہیں۔


ای پیپر