دیہی علاقوں میں رابطہ سڑکوں کی اہمیت
09 جون 2019 2019-06-09

پنجاب میں وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کی حکومت نے جہاں شہروں میںعوام الناس کی فلاح و بہبود کیلئے بہت سے منصوبے شروع کئے ہیں وہیں دیہی ترقی ، کسانوں کی حالت زار بہتر بنانے کیلئے بھی بہت سے اقدامات کیے ہیں۔ پاکستان ایک زرعی ملک ہے اور زراعت و خوراک کے حوالے سے پنجاب کا ایک خاص مقام ہے۔ یہاں پانی کی فراوانی سے زرخیز زمین پاکستان بھر کیلئے اناج پیدا ہوتا ہے۔

وزیراعلیٰ پنجاب کا کہنا ہے کہ حکومت کاشتکاروں کیساتھ مکمل ہمدردی رکھتی ہے اور مشکل وقت میں کاشتکاروں کیساتھ کھڑے ہیں۔نئے پاکستان میں کاشتکار سر اٹھا کر جئے گا۔ پنجاب حکومت نے گندم خریداری مہم کیلئے بھی بہترین انتظامات کیے ہیں اورپنجاب حکومت کے ان اقدامات سے کاشتکارکے مفادات کوتحفظ ملے گا۔گندم خریداری کا ٹارگٹ پورا کیا۔ گندم خریداری کیلئے رواں سال سے 130 ارب روپے مختص کئے گئے۔ پنجاب حکومت کسان کے مفاد کونقصان نہیں پہنچنے دے گی۔ رقو م کی ادائیگی کی پالیسی کے مطابق چھوٹے کاشتکاروں کی سہولت کیلئے 50بوری گندم کی قیمت بینک کی مقررہ شاخ سے سپیشل کائونٹرز پر ادا کی گئی جس کیلئے بینکوں کو سکرول اسی روز ہر حال میں شام تک پہنچادیاجبکہ کاشتکاروں کو نقد رقوم کی ادائیگی اگلے روز یقینی بنائی گئی۔ 50بوری سے زیادہ گندم کی بوریوں کی قیمت کا بل کاشتکاروں کے اکائونٹس میں جمع ہوا جس کی زیادہ سے زیادہ 72گھنٹوں کے اندر کلیئرنس کر دی گئی۔

وزیراعلی پنجاب سردار عثمان بزدار نے گندم خریداری مہم کی کامیابی پر کاشتکاروں سے اظہار تشکر کرتے ہوئے کہا کہ ساڑھے 32لاکھ ٹن گندم کے عوض 106ارب روپے کی فوری ادائیگی کردی گئی ہے۔ سیاسی وابستگیوں سے بالاتر ہوکر تمام کاشتکاروں کو بلا تخصیص باردانہ کی فراہمی یقینی بنائی گئی۔گندم کے کاشتکاروں کے مفادات کا تحفظ کرکے انہیں ان کا حق دیا گیا اور چھوٹے کاشتکار کے حقوق کے تحفظ کو ہر قیمت پر یقینی بنایا گیا۔ کاشتکاروں کو گندم کی فصل کامقررکردہ معاوضہ ملا۔ کسانوں سے کئے گئے وعدے پورے کئے اور آئندہ بھی کاشتکاروں کی فلاح اوران کے حقوق کے تحفظ کیلئے کوئی کسر اٹھا نہ رکھیں گے۔

امسال اپریل، مئی کے مہینے میںپاکستان مغربی ہواؤں کے سلسلے سے پیدا ہونے والی موسمی صورت حال سے دوچار رہا جس کی وجہ سے ملک کے کئی حصے تواتر سے طوفانی بارش کی لپیٹ میں رہے۔بارش سے پاکستان کے صوبہ پنجاب میں کھڑی فصلوں کو بہت زیادہ نقصان ہوا ۔ شدید بارشوں سے فصلیں اور پھلوں کو نقصان پہنچا۔ پاکستان میں ہونے والی حالیہ بارش سے صوبہ پنجاب میں گندم، چنا اور اسٹرابیری کی فصلیں بہت زیادہ متاثرہوئی۔پنجاب حکومت نے کاشتکاروں کے نقصانات کے ازالے کیلئے ہر ممکن اقدام اٹھانے کا فیصلہ کیا۔

دیہی علاقوں کو بڑے شہروں و قصبوں سے ملانے کیلئے پختہ سڑکوں کی بہت اہمیت ہے۔ فصلیں، پھل اور دیگر زرعی اجناس شہروں کی منڈیوں تک پہنچانے کیلئے رابطہ سڑکیں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔وزیر اعلیٰ کی طرف سے صوبہ بھر میںدیہی علاقوں کو مین روڈز اور شہروںسے ملانے کیلئے نئی رابطہ سڑکوں کی تعمیرمیں اعلیٰ معیار کا میٹریل استعمال کرنے کا بھی حکم دیاگیاہے تاکہ کاشتکاروں کو زرعی اجناس ، سبزیاں ، پھل وغیرہ فارم و کھیتوں سے مارکیٹوں ، سبزی و غلہ منڈیوں تک لانے میں کسی قسم کی دشواری کا سامنا نہ کرناپڑے۔ گاؤں، دیہات اور شہروں کے مابین اچھی رابطہ سڑکیں کاروباری سرگرمیوں کو فروغ دیں گی اور معاشی خوشحالی کی راہ ہموار ہو گی۔ماضی میں دیہی علاقوں میں بنائی جانے والی سڑکیں سال دو سال میں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو جایا کرتی تھیں تاہم اس منصوبے کے تحت سڑکوں کے معیار پر کسی قسم کا سمجھوتہ نہیں کیا جائیگا۔پنجاب میں پہلے مرحلے میں پرانی سڑکوں کو تیار کیا جارہاہے اور بعد ازاں نئی رابطہ سڑکوں کی تعمیر عمل میں آئیگی۔ یہ ایک میگا پراجیکٹ ہے جس میں شفافیت کو یقینی بنانے کیلئے بین الاقوامی معیار کو مدنظر رکھا جارہاہے۔

پنجاب حکومت کی طرف سے زراعت ، کسانوں اور دیہی ترقی کیلئے کئے گئے اقدامات ، وزیر اعلیٰ عثمان بزدار کی دیہی عوام سے محبت کی نشانی ہے۔ حکومت پنجاب پسماندہ گاؤں اور دیہی آبادی کو ترقی دینے کیلئے دن رات محنت کر رہی ہے اور جلد ہی اس کے ثمرات عوام تک پہنچیں گے ۔ دیہی ترقی سے نہ صرف ہماری غذائی ضروریات پوری ہوں گی بلکہ ہمارے دیہاتی عوام بھی ترقی کی منازل طے کریں گے۔ تعلیم کے فروغ سے کسان کھیتی باڑی میں جدید طریقے اور آلات استعمال کرسکیں گے اور ملک کی خوشحالی میں اپنا حصہ ڈال سکیں گے۔


ای پیپر