Image Source : Facebook RR

صحافی رضوان رضی دادا کو کیوں گرفتار کیا گیا ؟حقائق سامنے آگئے
09 فروری 2019 (22:38) 2019-02-09

اسلام آباد:فیڈرل انوسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے)نے نجی چینل دن نیوز کے صحافی رضوان الرحمن رضی دادا کو ٹویٹر میں عدلیہ، حکومتی اداروں اور انٹیلی جنس ایجنسیز کے خلاف ہتک آمیز اور نفرت انگیز پوسٹس کرنے کے الزام میں گرفتار کرلیا ہے۔

گزشتہ روزایف آئی اے کی جانب سے 8 فروری کو درج کی گئی ایک ایف آئی آر جاری کی گئی ہے جس کے مطابق رضوان رضی داد کو انکوائری کے لیے طلب کیا گیا تھا اور بیان ریکارڈ کیا گیا۔ایف آئی اے کی جانب سے جاری کی گئی ایف آئی آر کی رپورٹ اور رضوان رضی کے فیس بک اکاونٹ سے جاری بیان میں تضاد پایا جاتا ہے جہاں ان کے بیٹے کے نام سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ابھی صبح سویرے میرے باپ کو کچھ لوگ گاڑی میں دھکا مار کر اٹھا لے گئے ہیں۔

دوسری جانب ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ انہوں نے اعتراف کیا ہے کہ عدلیہ اور دیگر اداروں کے خلاف پوسٹس کی ہیں اور بہت شرمندہ ہیں اور معذرت بھی کر لی ہے۔ایف آئی آر کے مطابق رضوان دادا نے وعدہ کیا ہے کہ وہ عدلیہ، پاکستان آرمی اور انٹیلی جنس ایجنسیز اور دیگر اداروں کے خلاف اس طرح کے نفرت انگیز اور ہتک آمیز پوسٹس نہیں کریں گے۔

فیڈرل ایجنسی کا کہنا ہے کہ تفتیش کے دوران رضوان رضی دادا کا موبائل ضبط کرکے ڈیٹا کی فرانزک رپورٹ بھی حاصل کرلی گئی ہے۔مزید کہا گیا ہے کہ حکام کی اجازت سے رضوان دادا کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ صحافی رضوان رضی کے خلاف درج ایف آئی آر میں انہیں پریوینشن آف الیکٹرانک کرائمز ایکٹ (پیکا) 2016 کے سیکشن 11 اور20 کی دفعات کا مرتکب قرار دیا گیا ہے۔


ای پیپر