Source : Social Media

وزیراعظم نہ مک مکا کرنے دینگے نہ کسی کو بھاگنے دینگے ،فواد چوہدری
08 نومبر 2018 (20:35) 2018-11-08

اسلام آباد:وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے دورہ چین سے متعلق کابینہ کو اعتماد میں لیا، ان کا دورہ نہایت کامیاب رہا ہے جس کی ماضی میں کوئی مثال نہیں ملتی،اس کی تفصیلات کچھ دنوں میں سامنے آئیں گی،اس سے پاکستان کے ادائیگیوں کے توازن سے متعلق مسائل حل ہوں گے.

2ماہ میں کابینہ کے11اجلاسوں میں 120فیصلے ہیں جن میں سے صرف4فیصلوں پر ابھی تک عملدرآمد نہیں ہوسکا، جن پر جلد عملدر آمد کی ہدایت کی گئی ہے ، کابینہ کے فیصلوں پر عملدرآمد یقینی بنانے کے لئے میکنزم تیار کرلیاہے، عدم عملدر آمد کی روایت کو ختم کرینگے ، اپوزیشن والے کہتے ہیں ماحول خراب ہے انکو اگر این آر او دیں تو سب ٹھیک ہو جائےگا، عمران خان مک مکا نہیں کرنے دیں گے ، کسی کو بھاگنے نہیں دیں گے، پی اے سی سربراہی پر حکومت اور اپوزیشن کے مابین ڈیڈلاک برقرار ہے ، حکومت اس پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرے گی کہ چھوٹے بھائی کو بڑے بھائی کا آڈٹ کرنے پر لگا دیں ، شہباز شریف کو چیئرمین پی اے سی بنانے کا مطالبہ اتنا ہی غیر اخلاقی ہے جتنی انکی 5سالہ کارکردگی ‘ اعظم سواتی وفاقی وزیر ہیں انکو کیوں ہٹائیں ، آسیہ بی بی پر رپورٹنگ غیر ذمہ دارانہ صحافت کی مثال ہے، اس کا جائزہ لے رہے ہیں ، ذمہ داروں کے خلاف کاروائی کریں گے.

کابینہ اجلاس میں اویکیو ٹرسٹ بورڈ کی تنظیم نوکرنے ، لبرٹی ایئر لمیٹڈکو لائسنس جاری کرنے اورایف بی آر سے پالیسی بنانے کا اختیار واپس لینے کا فیصلہ کیا گیا ہے،احمد نواز سکھیرا کو بورڈ آف انوسمنٹ کا نیا سیکرٹری تعینات کیا گیا ہے ۔ وہ جمعرات کو یہاںپارلیمنٹ ہاﺅ س کے باہر میڈیا سے گفتگو کر رہے تھے ۔ فواد چوہدری نے کہا کہ کابینہ کے اب تک11اجلاس ہوچکے ہیں۔ گزشتہ حکومت میں کابینہ اور پارلیمانی پارٹی کے اجلاس کبھی ہوتے ہی نہیں تھے۔ نواز شریف کو جس دن ایم این این ایز مل لیتے تھے تو ایم این ایزہفتہ ہفتہ ہاتھ نہیں دھوتے تھے۔ وزیر اعظم عمران خان پابندی کے ساتھ کابینہ اجلاس کرا رہے ہیں اور اپنے ساتھیوں سے مل رہے ہیں۔

کابینہ کے اجلاسوں میں 120فیصلے لیے جاچکے ہیں جن میں سے72فیصلوں پرمکمل طور پر عملدرآمد ہوا ہے جبکہ 31 فیصلوں پرکام ابھی ملتوی ہے اور15فیصلوں پر کام ہورہا ہے جبکہ صرف4فیصلوں پر ابھی تک عملدرآمد نہیں ہوسکا۔جن فیصلوں پر ابھی تک عملدرآمد نہیں ہوا ان پر کابینہ نے جلد سے جلد عملدرآمد کرنے کا کہا ہے۔اس حوالے سے متعلقہ ڈویژنز اور وزارتوں کو احکامات جاری کیے جاچکے ہیں۔گزشتہ 5سالوں کی کابینہ کے فیصلوں پر پورے پانچ پانچ سال عمل درآمد نہیں ہو سکا لیکن ہم نے اس حوالے سے میکانزم بنایا ہے اور کابینہ کے فیصلوں پر عملدرآمد یقینی بنائیں گے۔انہوں نے کہا کہ اویکیو ٹرسٹ بورڈ کی تنظیم نو کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ اربوں کی جائیدادیں ایویکیوٹرسٹ بورڈکی نا اہلی کے باعث تباہ ہو رہی ہیں۔

گزشتہ دوروں میں اس ادارے میں بھی سیاسی چیئرمین لگایا گیا جس نے ادارے کو تباہ کیا۔ڈاکٹر عشرت عباد کو ایویکیو ٹرسٹ بورڈ کی از سرنو تنظیم سازی کی ذمہ داری سونپی گئی ہے جو اس کے اوپر ٹاسک فورس بنائیں گے جو ان کے فیصلوں پر عملدرآمد کرائے گی۔ریاض احمد میمن کو ٹریڈ کارپوریشن کا نیاایم ڈی تعینات کیا گیا ہے۔کابینہ اجلاس میں لبرٹی ایئر لمیٹڈ ایک نئی ایئرلائن ہے جس کو لائسنس جاری کیا گیا ہے۔احمد نواز سکھیرا کو بورڈ آف انوسمنٹ کا نیا سیکرٹری تعینات کیا گیا ہے۔ایس ای سی پی کا بھی نیا بورڈبنایا گیا ہے جس کے ارکان کو نامزد کر دیا گیا ہے۔اس کے علاوہ ایک بڑی پالیسی فیصلہ لیا گیا ہے کہ ایف بی آر کی پالیسی بنانے کا اختیار بورڈ بنا کر ان کے دے دیا گیا ہے، بورڈ ان ٹیکس کے حوالے سے با اختیار ہوگااس بورڈ کے اندر ماہرین کی کمیٹی ہوگی جو ٹیکس کے بارے میں پالیسی وضع کرے گی۔ایف بی آر سے پالیسی بنانے کا اختیار واپس لے لیا گیا ہے جو ایک بڑا مطالبہ تھا۔ وزیر اطلاعات نے کہا کہ عمران خان نے دورہ چین سے متعلق کابینہ کو اعتماد میں لیا۔ ان کا دورہ نہایت کامیاب رہا ہے جس کی ماضی میں کوئی مثال نہیں ملتی۔اس کی تفصیلات کچھ دنوں میں سامنے آئیں گی۔اس سے پاکستان کے ادائیگیوں کے توازن سے متعلق مسائل حل ہوں گے۔آئی ایم ایف کا وفد پاکستان آیا ہے اور وزیر خزانہ اسد عمر ان کے ساتھ مذاکرات کر رہے ہیں۔برطانیہ اور پاکستان کے مابین قیدیوں کے تبادلے کا معاہدہ بھی سائن کیا گیا ہے ۔

جو لوگ قید میں ان کو دونوں ممالک کے مابین منتقل کیا جا سکے گا۔گزشتہ روز اخبارات میں آسیہ بی بی کے حوالے سے نہایت غیر ذمہ داری کا مظاہرہ کیا گیا اور اپنی طرف سے بے بنیاد خبریں گھڑی گئیں کہ غیر ملکی سفیر آسیہ کو بیرون ملک لیکر جا رہا ہے۔پاکستان ایک خود مختار ملک ہے کوئی بھی سفیر ہم سے مطالبات نہیں کرسکتا۔غیر ذمہ دارنہ صحافت کا جائزہ لیکر کاروائی کریں گی۔اس پر جان اور مال کا نقصان ہو سکتا تھا جس طرح غیر ذمہ داری کا مظاہرہ کیا گیا۔ یہ معاملہ سپریم کورٹ کے اندر ہے اور وہ ہی اس کا فیصلہ کرے گی ۔ یہ کہتے ہیں کہ ماحول خراب ہے اگر آج اپوزیشن کے مقدمات بند کر دیے جائیں تو ماحول ٹھیک ہوجائے گا۔ ان کو این آر او لینے کی عادت ہے۔ عمران خان مک مکا نہیں کرنے دیں گے۔ کسی کو بھاگنے نہیں دیں گے۔پی اے سی سربراہی پر حکومت اور اپوزیشن کے مابین ڈیڈلاک برقرار ہے۔ حکومت اس پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرے گی کہ چھوٹے بھائی کو بڑے بھائی کا آڈٹ کرنے پر لگا دیں ۔نیب قوانین میں ترمیم کی بات کی جارہی ہے۔ اس حوالے سے ایک ٹاسک فورس قائم کی گئی ہے جو اس پر اپنی سفارشات پیش کرے گی۔


ای پیپر