کیا کراچی پیر سے کھلنے جا رہا ہے ؟بڑا اعلان
08 May 2020 (17:04) 2020-05-08

کراچی : وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ زمینی حقائق اور ڈیٹا دیکھ کر فیصلے کرنا ہیں، وفاق کے فیصلوں پر 99 فیصد عمل کیا، اختلافات کے باوجود مل کر کام کر رہے ہیں، سب کو پتا ہے لاک ڈاؤن کھولنے سے کیسز میں تیزی آئے گی۔

وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے نیوز کانفرنس کرتے ہوئے کہا کورونا سے بچنے کیلئے گھروں میں رہیں، شوگر، امراض قلب کے لوگ کوشش کریں گھروں سے نہ نکلیں، گھر سے باہر نکلتے وقت احتیاطی تدابیر اختیار کریں، صرف وہ گھر سے باہر جائیں جن کو اجازت ہے، ہم سب کی زندگیاں تبدیل ہوچکی ہیں، ہم سمجھتے ہیں بات ختم ہوگئی لیکن ایسا نہیں ہے۔

مراد علی شاہ کا کہنا تھا 14 مارچ کو عوامی اجتماع والی جگہوں کو بند کیا، 17 مارچ سے شاپنگ مال، دکانیں اور ٹرانسپورٹ بند کی، 22 مارچ سے لاک ڈاؤن کو بتدریج سخت کیا، بڑا سوچ سمجھ کر، مشاورت کے بعد یہ اقدام اٹھائے، لوگ کہتے ہیں سوچے سمجھے بغیر لاک ڈاؤن کر دیا، ایسا نہیں ہے،وزیراعلی سندھ نے کہا کہ یکم اپریل کو لاک ڈاؤن کا اعلان وفاق نے کیا.

اسد عمر نے خود اعلان کیا لاک ڈاؤن 14 اپریل تک رہے گا، 14 اپریل کو بھی وفاق نے ہی لاک ڈاؤن 2 ہفتے کیلئے بڑھایا، ہر صوبے نے کہا لاک ڈاؤن کا فائدہ ہوا، ہم نے جذبات میں نہیں زمینی حقائق دیکھ کر فیصلے کرنے ہیں۔مراد علی شاہ نے مزید کہا میں مغرب کی مثال دیتا ہوں تو تنقید ہوتی ہے، جن ممالک کو مشکل پیش آئی انہوں نے وقت پر لاک ڈاؤن نہیں کیا، امریکا میں بھی لاک ڈاؤن کرنے میں تاخیر سے کام لیا گیا۔


ای پیپر