رضا ربانی کو چیئرمین سینٹ منتخب نہ کرنے پرزرداری کی مشکلات میں اضافہ,اہم رہنما ناراض
08 مارچ 2018 (19:02) 2018-03-08

اسلام آباد : سینٹ الیکشن کے بعد تمام بڑی سیاسی جماعتوں نے جوڑ توڑ شروع کر دئیے ۔اسی سلسلے میں گزشتہ روز فضل الرحمن نے آصف علی زرداری سے خصوصی ملاقات کی ۔اس سے قبل نواز شریف نے سینیٹ کی چیئرمین شپ کیلئے رضا ربانی کے نام پر نامزدگی ظاہر کر دی تھی لیکن جب زرداری صاحب سے رضا ربانی کے نام کا پوچھا گیا تو انہوں نے منع کر دیا ۔اس کے بعد دیکھا گیا کہ پارٹی کے اہم رہنما چیئرمین سینیٹ کے امیدوار کے لیے رضا ربانی کو نامزد نہ کرنے پر ناراض ہوگئے۔مسلم لیگ (ن) کے قائد نوازشریف نے چیئرمین سینیٹ کے لیے رضا ربانی کا نام سامنے آنے کی صورت میں حمایت کا اعلان کیا تھا لیکن آصف زرداری نے ان کی تجویز مسترد کردی اور مولانا فضل الرحمان کو چیئرمین سینیٹ کے لیے سلیم مانڈوی والا کے نام سے آگاہ کیا۔ذرائع کے مطابق پیپلزپارٹی کو سلیم مانڈوی والا کو چیئرمین سینیٹ نامزد کرنے میں بھی مشکلات کا سامنا ہے، پارٹی کے اہم رہنما رضا ربانی کو دوبارہ چئیرمین نہ بنانے پر سخت نالاں ہیں اور رضا ربانی کو ہی اس عہدے کے لیے موزوں سمجھتے ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ تحریک انصاف،جے یو آئی، اے این پی اور فنکشل لیگ نے بھی رضا ربانی کے نام پر اتفاق کیا ہے۔ذرائع نے بتایا ہے کہ پیپلزپارٹی کی اعلیٰ قیادت نے تاحال سلیم مانڈوی والا کے نام کی منظوری تک نہیں دی لیکن اس کے باوجود سلیم مانڈوی والا دیگر جماعتوں سے ووٹ مانگ رہے ہیں۔ذرائع کے مطابق پیپلزپارٹی ایک دو دن میں چیرمین سینیٹ کیلیے حتمی امیدوار کا اعلان کرے گی اور مانڈوی والا کو مطلوبہ حمایت نہ ملنے پر رضا ربانی کو ہی چئیرمین نامزد کیا جاسکتا ہے۔واضح رہے کہ مسلم لیگ (ن) نے بھی سینیٹ میں اپنا چیئرمین لانے کے لیے مطلوبہ اکثریت حاصل ہونے کا دعویٰ کیا ہے۔


ای پیپر