Reports on demographic changes in Occupied Kashmir, Pakistan expresses grave concern
کیپشن:   فائل فوٹو
08 جون 2021 (10:33) 2021-06-08

اسلام آباد: پاکستان نے مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی غیر قانونی اوریکطرفہ اقدامات کی سخت مخالفت کا اعادہ کرتے ہوئے اپنے غیر قانونی قبضے کو برقرار رکھنے کیلئے مقبوضہ جموں وکشمیر میں مزید تقسیم اور آبادیاتی تبدیلیوں کی سازش سے متعلق رپورٹس پر سخت تشویش کا اظہار کیا ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ نئے قبضوں کا کوئی قانونی اثر نہیں ہوگا، بھارت سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق مقبوضہ جموں وکشمیر کی متنازعہ حیثیت تبدیل اور نہ ہی کشمیروں اور پاکستان کو غیر قانونی نتائج تسلیم کرنے پر مجبور کر سکتا ہے۔

پیر کو ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ بھارت کے یکطرفہ اور غیر قانونی اقدامات بین الاقوامی قوانین اور یو این سلامتی کونسل کے متعلقہ قراردادوں کے منافی ہیں۔مقبوضہ جموں و کشمیر بین الاقوامی تسلیم شدہ متنازعہ علاقہ ہے،پاکستان مقبوضہ علاقے کی آبادیاتی ساخت اور حتمی حیثیت تبدیل کرنیکی بھارتی کوششوں کی بھر پور مخالفت جاری رکھے گا۔

دفتر خارجہ نے بھارت پر زور دیا کہ اپنے غیر قانونی اقدامات اور کارروائیاں روکے،یو این سلامتی کونسل کے قراردادوں کی مکمل پاسداری کرے اور مزید کسی بھی ایسے اقدامات سے اجتناب کرے جس سے جنوبی ایشیا میں علاقائی امن و استحکام متاثر ہونے کا خدشہ ہو۔دفتر خارجہ نے عالمی برادری،اقوام متحدہ،عالمی پارلیمان،بین الاقوامی انسانی حقوق اور ہیومنٹیرین تنظیموں اور گلوبل میڈیا سے مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور پر صورتحال کا ادراک کریں۔بھارت کو مقبوضہ علاقے میں مزید کسی بھی غیر قانونی اقدامات سے روکنا ہوگا۔

ترجمان نے کہا کہ پاکستان حق خود ارادیت کے حصول کیلئے مقبوضہ کشمیر کے عوام کی ہر ممکن حمایت جاری رکھنے کے اپنے عزم پر سختی سے قائم ہے۔


ای پیپر