مودی نے مقبوضہ کشمیر میں اپنا آخری پتہ کھیل لیا :وزیر اعظم
08 اگست 2019 (19:50) 2019-08-08

اسلام آباد:وزیراعظم عمران خان نے کہاہے کہ بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے مقبوضہ کشمیر کے حوالے سے بھارتی آئین میں370ختم کرکے اپنا آخری پتہ کھیل لیا ہے ۔ ہم جنگ نہیں چاہتے،بھارت نے جنگ مسلط کی تومنہ توڑجواب دیں گے، بھارت مسئلہ کشمیر سے توجہ ہٹانے کیلئے کچھ بھی کرسکتا ہے،کشمیریوں کی ہر سطح پر حمایت جاری رکھیں گے۔

عمران خان نے کہا بھارت نہتے کشمیریوں پر ظلم کے پہاڑ توڑ رہا ہے، مودی سرکار کو پوری دنیا کے سامنے بے نقاب کریں گے،پوری دنیا کو بتائیں گے کہ مودی سرکار کشمیریوں کی نسل کشی کر رہی ہے، مودی سرکار نسل پرست لوگوں کا ٹولہ ہے، یہ ٹولہ بھارت میں صرف ہندوں کو دیکھنا چاہتا ہے۔سینئر صحافیوں سے ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ نریندر مودی ہٹلر کے راستے پر چل نکلا ہے، ایسا لگتا ہے بھارتی حکومت مقبوضہ کشمیر میں نسل کشی کرنا چاہتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ٹر مپ کی ثالثی کی پیشکش نے بھارت کو اس اقدام پر ابھارا، اب بھارت نے اپنا آخری کارڈ کھیل لیا ہے ہمیں خطرہ ہے بھات توجہ ہٹانے کے لیے کچھ بھی کرسکتا ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کو عالمی سطح پر اٹھائیں گے۔ بھارت نہتے کشمیریوں پر ظلم کے پہاڑ توڑ رہا ہے۔ مودی سرکار کو پوری دنیا کے سامنے بے نقاب کریں گے۔ان کا کہنا تھا کہ مودی سرکار بھی ہٹلر جیسی سوچ کی حامل ہے۔ بھارت مقبوضہ کشمیر کا جغرافیہ بدلنا چاہتا ہے۔ نہتے کشمیریوں پر ہر گزرتے دن کے ساتھ بڑھتے بھارتی مظالم سے اقوام عالم کو آگاہ کریں گے۔

عمران خان نے کہا کہ یہ رائے عامہ کی جنگ ہے اور ہم نے یہ جنگ جیتنا ہے لیکن خطرہ ہے کہ بھارت توجہ ہٹانے کے لیے کچھ بھی کر سکتا ہے، ہم جنگ کا راستہ نہیں چاہتے۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ بھارت نے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت بدل کر آخری کارڈ کھیل لیا ہے۔ پاکستان کشمیریوں کے حق خود ارادیت کی سفارتی، سیاسی، قومی اور عالمی ہر سطح پر حمایت جاری رکھے گا۔ ہم جنگ نہیں چاہتے ۔سینئر صحافیوں سے گفتگو میں وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ مودی اپنے نظریات پر عمل کرتے ہوئے پاکستان کو کمزور کرنا چاہتا ہے۔ امکان ہے بھارت مقبوضہ کشمیر میں کارروائی کرکے پاکستان پر الزام لگائے گا۔

انہوں نے بتایا کہ امریکا سمیت پوری دنیا کو بھارتی عزائم سے باخبر رکھ رہے ہیں۔ دنیا کو بتائیں گے کہ مودی سرکار نسل پرست لوگوں کا ٹولہ ہے۔ یہ ٹولہ بھارت میں صرف ہندوں کو دیکھنا چاہتا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہمیں بھارتی عزائم کاپہلے سے علم تھا،بھارت مقبوضہ کشمیرمیں عرصہ درازسے قتل وغارت کررہاہے،امکان ہے بھارت پلوامہ طرزکاکوئی ڈرامہ رچاسکتاہے۔ بھارت کے ساتھ حالات کشیدگی کی طرف جارہے ہیں۔عمران خان نے کہا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں میں کشمیرکے معاملے کواٹھائیں گے،کشمیرمیں خوف کی فضاہے،لوگوں کے گھر جلائے جا رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بھارتی سپریم کورٹ میں رٹ دائرہوچکی ہے لیکن اسے بھی دباومیں لایاجاسکتاہے۔ ہوسکتاہے کشمیرسے متعلق بھارتی سپریم کورٹ کوئی فیصلہ سنادے۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ بھارتی اقدام پر مقبوضہ کشمیر سے ردعمل آئے گا، جب کرفیو اٹھایا جائے گا تو وادی کے اندر سے شدید ردعمل آئے گا، کشمیر کے حوالے سے ہمیں مغربی دنیا میں رائے عامہ ہموار کرنی ہے یہ رائے عامہ کی جنگ ہے جو ہمیں جیتنی ہے اس لیے موجودہ صورتحال میں میڈیا کا کردار بہت اہم ہے۔

عمران خان نے کہا کہ بھارت نے پلواما کے بعد کی صورتحال سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کی تاہم پلواما واقعے کے بعد پہلی مرتبہ عالمی برادری میں ہمارے موقف کو سنا گیا، بھارت ایف اے ٹی ایف میں پاکستان کو بلیک لسٹ کرانے کی کوشش کررہا ہے، ہم جنگ کا راستہ نہیں چاہتے لیکن لگتا ہے پاکستان اور بھارت کے درمیان سرحدوں پر صورتحال مزید خراب ہونے کا امکان ہے۔افغانستان سے متعلق بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہمارے لیے افغانستان میں کرداراداکرنامشکل بنایاجارہاہے مگر ہم افغانستان میں پائیدارامن کے لئے مثبت کرداراداکرتے رہیں گے۔


ای پیپر