عمران خان نے امریکہ کو واضح پیغام دیدیا
کیپشن:   Source : Yahoo
08 اگست 2018 (20:35) 2018-08-08

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان سے ملاقات کے لئے پاکستان میں تعینات امریکی قائم مقام سفیر جون ہورو نے بنی گالہ میں ملاقات کی اور پاک امریکہ تعلقات میں بہتری کی خواہش کا اظہار کیا۔

اس مو قع پر عمران خان کا کہنا تھا کہ امریکہ سمیت تمام ممالک کیساتھ بہترتعلقات کے خواہاں ہیں‘پاکستان، افغانستان میں مکمل استحکام کا خواہش مند ہے‘میں نے ہمیشہ افغانستان میں سیاسی حل کی ضرورت پرزور دیا ہے‘جنگ اور قوت کا استعمال افغانستان کے مسئلے کا حل نہیں‘افغانستان کا استحکام پاکستان‘امریکہ اورخطے کے مفاد میں ہے‘پاک امریکہ تعلقات میں اتارچڑھاو کی وجہ باہمی اعتماد کا فقدان ہے،تحریک انصاف امریکہ کے ساتھ اعتماد پر مبنی تعلقات کیلئے پرعزم ہے‘ امریکہ سے مستحکم تجارتی اورمعاشی تعلقات کونہایت اہم سمجھتے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان تحریک انصاف کے عام انتخابات میں کامیابی کے بعد بین الاقوامی رہنماوں کا عمران خان سے ملاقاتوں کا سلسلہ جاری ہے ،پاکستان میں تعینات امریکی قائم مقام سفیر جون ہورو نے بنی گالہ میں چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان سے ملاقات کی اور انتخابات میں کامیابی پر عمران خان کو مبارکباد دی ،ملاقات کے دوران اسد عمر، نعیم الحق، شہزاد وسیم اور فواد چودھری بھی موجود تھے۔

اس موقع پر امریکی سفیر جو ن ہورونے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ آپ کی دور حکومت میں پاکستان اور امریکہ کے تعلقات میں مزید بہتری آئے اس پر عمران خان نے کہا کہ پاک امریکاتعلقات کومزیدبہتربنائیں گے، امریکاسمیت تمام ممالک کیساتھ بہترتعلقات کے خواہاں ہیں،پاکستان، افغانستان میں مکمل استحکام کا خواہش مند ہے،میں نے ہمیشہ افغانستان میں سیاسی حل کی ضرورت پرزور دیا ہے.

خوشی ہے آج امریکا سے بھی سیاسی حل کے حق میں آوازیں بلند ہورہی ہیں،جنگ اور قوت کا استعمال افغانستان کے مسئلے کا حل نہیں،افغانستان کا استحکام پاکستان،امریکا اورخطے کے مفاد میں ہے،پاک امریکا تعلقات نے تاریخ میں کئی اتارچڑھاودیکھے,پاک امریکا تعلقات میں اتارچڑھاو کی وجہ باہمی اعتماد کا فقدان ہے،تحریک انصاف امریکا کے ساتھ اعتماد پر مبنی تعلقات کیلئے پرعزم ہے،امریکا کے ساتھ مستحکم تجارتی اورمعاشی تعلقات کونہایت اہم سمجھتے ہیں۔واضح رہے اس سے قبل پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان سے سعودی عرب،ایران،جاپان ،چین اور برطانیہ کے سفیر بھی ملاقاتیں کر چکے ہیں۔


ای پیپر