پاکستان میں پانی کی شدید قلت ،ڈیمز بنانے میں مدد کریں،عمران خان

07 ستمبر 2018 (18:55)

اسلام آباد :وزیراعظم عمران خان نے ملک میں ڈیموں کی تعمیر کےلئے قوم اوردنیا بھر میں موجود پاکستانیوں سے مدد سے مانگ لی اور کہا ہے کہ اووسیز پاکستانی 1ہزارڈالرزفی کس ڈیم فنڈز میں جمع کرائیں،ڈ یموں کی تعمیر ناگزیر ہوچکی ہے ، اگر ڈیمز نہ بنائے تو 2025 خشک سالی شروع ہوجائے گی ،ایک وقت ایسا آئے گا کہ اناج اگانے کےلئے بھی پانی نہیں ہوگا.

قحط کا خطرہ ہے ،حکومت آج سے کام کا آغاز کررہی ہے،اس حوالے سے چیف جسٹس اور پرائم منسٹرز فنڈز اکٹھا کردیا گیا ہے، دو ہفتے سے قومی مسائل پر بریفنگ لے رہا ہوں ،وعدہ کیا تھا تمام معاملات قوم کے سامنے لاﺅں گا ،ملک کا سب سے بڑا مسئلہ پانی ہے ،جو آج کم ہوکر فی کس 1000 کیوسک رہ گیا ہے ، ملک میں صرف 30دن کا پانی ذخیرہ کرنے کی گنجائش ہے ،چیف جسٹس آف پاکستان کو سلیوٹ پیش کرتا ہوں کہ انہوں نے اس حوالے سے قدم اٹھایا یہ ان کا نہیں ہم جیسے سیاستدانوں کا کام تھا، یقین دلاتا ہوں کہ آپ کے ایک ایک پیسے کی حفاظت کروں گا،جتنی بھی پارٹیز ہیں ان سے کہوں گا کہ آپ کو پاکستان کے ڈیم بنانے کےلئے جہاد کرنا ہے ،ہمیں اپنے وسائل سے یہ ڈیمز بنانے ہیں،ہمیں اس مقصد کےلئے باہر سے کوئی قرضہ نہیں دے گا ، گزشتہ دس برس میں ملکی قرضہ 6ہزار ارب سے 30ہزار تک پہنچا ہے ،اگر اورسیز پاکستانی ایک ہزار ڈالر فی کس بھیجتے ہیں تو ہمیں ڈیمز بنانے کےلئے درکار رقم کے ساتھ ملک کو چلانے کےلئے بھی خطیر اماﺅنٹ مل جائے گا ، ، ہمیں پہلے والے قرضے اتارنے ہی مشکل ہیں ، یہ ڈیم ہم نے بنانے ہیں اور ہم بنا سکتے ہیں صرف ارادہ کرنے کی دیر ہے ،چیف جسٹس اور وزیراعظم ڈیم فنڈز میں سارے ملک سے بھی لوگ حسب توفیق پیسے بھیجیں ۔

جمعہ کو قوم سے خطاب کر تے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ پچھلے دو ہفتے سے بریفنگ لے رہا ہوں تا کہ جان سکوں کہ ہمارے معاشی طور پر حالات کیا ہیں ، پاکستان پر قرضے کتنے ہیں ، بجلی ، گیس کی کیا صورتحال ہے ، اس میں کوئی شک نہیں کہ ہمیں بہت سے مسائل درپیش ہیں ، گزشتہ 6سال میں پاکستان کا قرضہ 6ہزار ارب سے30ہزار ارب پر پہنچ گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ میری نظر میں سب سے بڑا مسئلہ پانی کا ہے ، جب پاکستان آزاد ہوا تو ہر پاکستانی کے حصے میں 5ہزار 6سو کیوبک میٹر پانی آتا تھا اور آج ہر پاکستانی کے حصے میں صرف ایک ہزار کیوبک پانی رہ گیا ہے ، پاکستان میں پانی کی سٹوریج کیپیسٹی صرف30دن کی ہے جبکہ ہندوستان کی 190دن اور مصر کی 1000دن کی کیپسٹی ہے ۔

عمران خان نے کہا کہ دنیا میں کسی بھی ملک کی 120دن کی سٹوریج کیپیسٹی محفوظ ہوتی ہے ، اب پاکستان کےلئے ڈیم بنانا ناگزیر ہے ، اگر ہم نے اب ڈیم نہ بنائے تو آنے والی نسلوں کےلئے ایسے مسائل ہوں گے جو سوچ بھی نہیں سکتے ۔ وزیراعظم نے کہا کہ ماہرین کے مطابق 2025میں پاکستان میں خشک سالی شروع ہو جائے گی اور ہمارے لئے اناج اگانے کےلئے بھی پانی نہیں ہوگا ، اناج نہیں ہوگا تو پاکستان میں قحط آسکتا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ میں چیف جسٹس کو داد دیتا ہوں کہ انہوں نے پانی کے مسئلے پر اہم قدم اٹھایا ، یہ کام سیاستدانوں کے کرنے کا تھا جسے چیف جسٹس نے کیا ، میں نے چیف جسٹس سے بات کر لی ہے ہم وزیراعظم اور چیف جسٹس کے ڈیم فنڈز کو اکٹھا کر رہے ہیں ۔انہوں نے چیف جسٹس فنڈ میں 180کروڑ اکٹھا کر لیا ہے ، میں سارے پاکستانیوں سے اپیل کرتا ہوں ، پوری دنیا میں جدھر بھی پاکستانی ہیں سارے اپنے مستقبل کےلئے اس فنڈ میں پیسے جمع کروانے شروع کردیں ۔ وزیراعظم نے کہا کہ میں خاص طور پر بیرون ملک مقیم پاکستانیوں سے اپیل کرتا ہوں کہ وہ ڈیم فنڈ میں پیسے دیں ۔

مزیدخبریں