مولانا فضل الرحمان سے مذاکرات میں دن بدن بہتری آرہی ہے:پرویز الہٰی
07 نومبر 2019 (21:40) 2019-11-07

اسلام آباد: مسلم لیگ (ق) کے سینئر رہنما اورسپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی نے کہاہے کہ مولانا فضل الرحمان سے مذاکرات سے دن بدن بہتری آرہی ہے ، کچھ چیزیں ایسی ہیں جن پر ہمیں تحفظات ہیں ، ہماری کوشش ہے کہ یہ بھی دور ہو جائیں، وزیراعظم عمران خان الیکشن کمیشن کو خود مضبوط کرنا چاہتے ہیں ،ا گر اپوزیشن کوئی حلقے کھلوانا چاہتی ہے یا جوڈیشل بنانا چاہتی ہے تو اس کےلئے بھی وزیراعظم آمادہ ہیں،انہوں نے کہا  دھرنے کا سب سے زیادہ فائدہ مولانا فضل الرحمان کو ہوا ہے ، وہ آج پارلیمنٹ میں نہیں لیکن سب انہیں اپنا لیڈر مان رہے ہیں ۔

جمعرات کو نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے سپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان سے مذاکرات سے دن بدن بہتری آرہی ہے ، کچھ چیزیں ایسی ہیں جن پر ہمیں تحفظات ہیں ، ہماری کوشش ہے کہ یہ بھی دور ہو جائیں ۔ انہوں نے کہا کہ حکومتی مذاکراتی کمیٹی کے سربراہ پرویز خٹک اور دیگر اراکین کمیٹی کو مولانا فضل الرحمان سے ہونے والی ملاقات سے متعلق بریف کیا ہے ، مذاکرات میں جو چیزیں رکاوٹیں پیدا کر رہی ہیں ان سے بھی انہیں آگاہ کیا اب اس میں بھی بہتری آنا شروع ہوگئی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے دھرنے میں بھی فوج کا مثبت کردار تھا اور آج کے دھرنے میں بھی ۔انہوں نے کہا کہ الیکشن کے نتیجے کو چیلنج کرنے کےلئے اپنے فورم ہیں جو الیکشن کمیشن اور ہائیکورٹ ہیں ۔جہاں تک باقی مطالبات ہیں الیکشن کمیشن کو مضبوط کرنا تو وزیراعظم عمران خان خود یہ چاہتے ہیں ،ا گر اپوزیشن کوئی حلقے کھلوانا چاہتی ہے یا جوڈیشل بنانا چاہتی ہے تو اس کےلئے بھی وزیراعظم آمادہ ہیں،اگر اس کےلئے کوئی پارلیمنٹ کی کمیٹی بنانی ہے تواس کےلئے بھی وزیراعظم آمادہ ہیں بلکہ سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کو خصوصی ہدایت بھی دی ہیں کہ ٹی آر او اپوزیشن کے ساتھ مل کر بنائیں ۔

چوہدری پرویز الٰہی نے کہا کہ دس پوائنٹ جو مولانا نے منوائے یہ مولانا فضل الرحمان کی کامیابی ہے ،شاید مولانا دھرنا نہ دیتے تو یہ کامیابی انہیں حاصل نہ ہوتی ، بہت سی ایسی چیزیں ہیں جو ان کے لئے بھی بہتر ہیں اور ہمارے لئے بھی ، دھرنے کا سب سے زیادہ فائدہ مولانا کو ہوا ہے ، وہ آج پارلیمنٹ میں نہیں لیکن سب انہیں اپنا لیڈر مان رہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان کو کرتارپورراہدری کے حوالے سے جو خدشہ ہے کہ پاسپورٹ کے بغیر کسی کو پاکستان نہیں آنے دینا چاہیے یہ صحیح ہے ، سکھ زائرین کو تمام سہولیات دینی چاہیںلیکن پاسپورٹ اور ضروری دستاویز ہیں اس کے بغیر انٹری نہیں ہونی چاہےے۔


ای پیپر